میرے گاڈز پر مقدمہ بنانا اور گرفتاری کے وارنٹ جاری کرنا، میں امریکا کو تہذیب یافتہ نہیں سمجھ سکتا، ایردوان

0 185

ترک صدر رجب طیب ایردوان نے ہفتہ کے روز کہا ہے کہ وہ امریکا کو تہذیب یافتہ نہیں مانتے کیونکہ واشنگٹن نے ان کے گاڈز کے وارنٹ گرفتاری جاری کیے ہیں جو امسال مئی میں دعوت نامہ پر امریکی دورہ کے دوران میرے ساتھ تھے اور جنہوں نے مجھ پر حملہ کرنے والوں کو روکا تھا۔

صدر ایردوان نے ابن خلدون یونیورسٹی، استنبول کے تہذیبی فورم پر خطاب کرتے ہوئے کہا: "اگر ایک ملک میں میرے 13 گارڈز کے وارنٹ گرفتاری جاری ہوتے ہیں جہاں میں ایک دعوت نامہ پر گیا تھا، بہت معذرت کے ساتھ میں ایسے ملک کو تہذیب یافتہ نہیں کہہ سکتا”۔

جون میں ایک بڑی جیوری نے 19 افراد کی نشان دہی کی تھی جن میں 15 ترک سرکاری اہلکار تھے جو مظاہرین اور ترک صدر کے درمیان حائل ہوئے تھے۔

گزشتہ مئی میں ایردوان کے دورہ امریکا کے دوران کرد دہشتگرد تنظیم کے حامیوں نے واشنگٹن میں ترک سفارت خانے کے باہر اس وقت ہنگامہ آرائی کی جب ترک صدر وہاں سے نکل رہے تھے۔ ان کا کرد دہشتگرد تنظیم کے حامی ہونے کی تصدیق خود امریکا نے کی تھی- ترک وزارت خارجہ نے واقعہ کے فوری بعد بیان جاری کیا کہ واقعہ امریکا انتظامیہ کی ناکامی کا منہ بولتا ثبوت ہے جس نے کوئی احتیاطی انتظامات نہیں کیے تھے جس کی وجہ سے ترک گارڈز کو انتظام خود سنبھالنا پڑا۔

اپنی تقریر میں ترک صدر رجب طیب ایردوان نے ڈونلڈ ٹرمپ کی مسلمانوں بارے پالیسی کو بھی تنقید کا نشانہ بنایا اور کہا کہ ترکی کبھی ایسے لوگوں کے لیے اپنے دروازے بند نہیں کرتا جو مختلف سوچتے ہوں۔ انہوں نے کہا: "امریکا میں مسلمانوں کو بے دخلی کا سامنا ہے جس کا مطلب ہے کہ اس ملک کے اندر کوئی مسئلہ ہے”۔

مشرق وسطی میں امریکی پالیسیوں کی ناکامی کے بعد امریکی ادارے بکھلاہٹ کا شکار ہیں اور اپنی ناکامی کا بوجھ ان ممالک پر ڈال رہے ہیں جو ان کے اتحادی رہے ہیں۔ ایسی ہی صورت حال کا پاکستان کو بھی سامنا ہے۔ حالانکہ امریکا کی ناکامی اس کی اپنی منافقانہ پالیسیوں کی وجہ سے ہے جس کے نتیجے میں وہ اپنا ساتھ دینے والے ممالک کے مسائل میں اضافہ کرتا ہے اور ان کے مقابل دہشتگرد تنظیموں کی معاونت کرتا ہے-

امریکا کی اس پالیسی کو دیکھتے ہوئے ترکی نے خطے میں طاقت کا توازن برقرار رکھنے کے لیے روس کی طرف ہاتھ بڑھایا تھا اور اس کے ساتھ کئی دفاعی معاہدے بھی کیے۔ جس سے امریکی بے چینی میں اضافہ ہوا اور بوکھلاہٹ سے ترکی کے خلاف کئی اقدامات اٹھا رہا ہے جن میں گارڈز کے وارنٹ گرفتاری، سابق وزیر کے خلاف مقدمہ اور ویزوں کی معطلی شامل ہے اس کے علاوہ وہ فتح اللہ گولن دہشتگرد تنظیم اور کرد دہشتگردوں کی بھی ترکی کے مخالف مدد کر رہا ہے- پاکستان میں فیتو اسکولز کے گولن پیروکاروں کو اقوام متحدہ کے تحت تحفظ دلوانے میں بھی امریکی کردار کے شواہد ملے ہیں-

تبصرے
Loading...