ماحول دوست ترکی کے قیام کے لیے 2020ء عملی سال ہوگا

0 234

مقامی طور پر تیار کردہ الیکٹرک کار، اسمارٹ شہروں کے لیے ایکشن پلان، قومی شجر کاری مہم اور نئے عوامی باغات میں کیا چیز مشترک ہے؟ یہ سب 2019ء میں اٹھائے گئے اقدامات تھے تاکہ نئی نسل کے لیے ایک ماحول دوست مستقبل کو یقینی بنایا جاسکے۔ پچھلے سال ماحولیات کے حوالے سے اہم قانون سازی پر توجہ مبذول کرنے کے بعد اب 2020ء ان قوانین پر عمل کا سال ہوگا، نائب وزیر برائے ماحولیات محمد امین برپینار نے کہا۔

ترکی نے 2019ء میں ایک ماحول دوست حکمتِ عملی اپنائی اور اسے ہر سطح پر نافذ کرکے ایک ترقی پسند ماحولیاتی پالیسی اختیار کی ہے۔ ترکی انسانیت کو درپیش چند اہم ترین مسائل کے حوالے سے اہم اقدامات اٹھانا شروع ہو چکا ہے جن میں ماحولیاتی انحطاط، موسمیاتی تبدیلی اور توانائی اور پانی کی روزمرہ ضروریات کو پورا کرنے میں پیدا ہونے والی مشکلات کے حوالے سے اقدامات شامل ہیں۔ پچھلا سال بہت اچھا سال رہا کیونکہ اس میں ترک حکومت نے ماحولیاتی مسائل کے حوالے سے مختلف منصوبوں پر پیشرفت کی اور ساتھ ہی عوام میں شعور و آگہی کے لیے مہم بھی چلائی۔ ڈاکٹر برپینار کے مطابق ماحولیاتی تبدیلی کے حوالے سے عملی سال کی حیثیت سے 2020ء بہت اہم ہوگا۔

اسمارٹ شہروں کے لیے ایکشن پلان، عوامی باغات کی تیاری، قابلِ تجدید توانائی کے ذرائع کو بہتر بنانا، ریکارڈ ساز قومی شجر کاری مہم، ایک مکمل الیکٹرک کار کی آمد کہ جس کا ویسے ہی شدت سے انتظار کیا جا رہا تھا، ماحولیاتی جرمانوں میں بڑا اضافہ اور اسمارٹ شہر متعارف کروانا 2019ء کی اہم جھلکیاں تھیں۔ نائب ماحولیاتی وزیر کے مطابق یہ سب کچھ بھی کافی نہیں، کیونکہ ماحولیاتی تبدیلی کے ساتھ مسلسل ارتقائی تبدیلیاں اختیار کرنا بہت اہم ہے اور اس کے تحفظ کے لیے متحرک پالیسیوں کی ضرورت پڑتی ہے۔

"ہم نے 2019ء میں ضروری قانون سازی کی اور 2020ء ان کے نفاذ کا سال ہوگا،” برپینار نے کہا۔ اگلے سال ملک بھر میں تبدیلی محسوس ہوگی، گھروں، دفاتر، اسکولوں اور سرکاری اداروں میں بھی۔ حکومت نہ صرف قانون سازی کرنا چاہتی ہے بلکہ آنے والی نسلوں کے لیے صاف ہوا، صاف پانی اور وسائل کو یقینی بنانے کے لیے اُن پالیسیوں کے نفاذ کی بھی خواہشمند ہے۔

ترکی نے پہلی بار 1983ء میں ماحولیاتی قانون کی منظوری دی تھی اور 2006ء تک اس میں بڑی تبدیلیاں نہیں کی گئی تھیں کہ جب استنبول کے ایشیائی علاقے میں واقع ضلع تزلا میں خطرناک کیمیائی فضلے سے بھرے سینکڑوں بیرل ملے تھے۔

ماحول کا خیال رکھنا محض وسائل کو ہی محفوظ نہیں رکھتا بلکہ یہ اچھی صحت کے لیے بھی ایک اہم قدم ہے، نائب وزیر نے کہا۔ ماحولیات میں سرمایہ کاری کے طویل المیعاد فائدے ہیں کیونکہ یہ ایک صحت مند معاشرے کو جنم دیتی ہے اور سانحات سے بچاتی ہے۔

حالیہ سالوں میں مقامی و قومی سطح پر اٹھائے جانے والے اقدامات کی وجہ سے فضائی آلودگی یورپی یونین کی طے کردہ حدود کے اندر ہے۔ شہروں کے لیے صاف ہوا ترک حکومت کے اٹھائے گئے اقدامات میں سے ایک ہے، جس کے لیے پچھلے سال 64 صوبوں کے لیے ایکشن پلان تیار کیے گئے۔ محض صوبائی سطح پر ہی نہیں بلکہ حکومت نے ضلعی، علاقائی اور محلہ جاتی سطح پر بھی آلودگی پر نظر رکھنے کے لیے مختلف ماڈلز تیار کیے ہیں۔ جس سے پتہ چلتا ہے کہ کس علاقے میں آلودگی زیادہ ہے اور اس کے پھیلاؤ کے حوالے سے رپورٹیں ہوتی ہیں۔

ترکی نے گاڑیوں سے نکلنے والے دھوئیں کا اندازہ لگانے کے لیے بھی ایک آن لائن نظام تیار کیا ہے اور اس کی پیمائش کرنے والی ڈیوائسز کی تعداد بھی 47 فیصد کا اضافہ کیا ہے جو 60 لاکھ سے بڑھا کر 90 لاکھ کر دی گئی ہیں۔ برپینار نے کہا کہ "ہم بہت زیادہ ٹریفک رکھنے والے شہروں میں کم دھوئیں والے علاقے بنائیں گے اور سائیکلوں کے لیے مخصوص راستے بھی بڑھائیں گے۔ وہ 2023ء تک سائیکل پاتھ کو 1,000 کلومیٹرز سے بڑھاکر 4,000 کلومیٹرز تک لے جانے کا ہدف رکھتے ہیں تاکہ سائیکل چلانے والے مقبول سیاحتی مقامات کے گرد بھی چلا سکیں۔

نائب وزیر کے مطابق 2020ء کے لیے شور کی آلودگی بھی ایجنڈے کا حصہ ہے، جنہوں نے بتایا کہ حکومت نے 46 صوبوں میں "شور کی آلودگی کا نقشہ” اور 10 صوبوں کے لیے ایکشن پلان بنایا ہے، جن میں استنبول، کوجائیلی اور بورصہ شامل ہیں۔ ترکی 2023ء تک شور کی آلودگی سے تحفظ کے لیے 60,000 مربع میٹر ‘نوائس بیریئر’ بنانے کا ہدف رکھتا ہے اور اس ہدف کو حاصل کرنے کے لیے حکومت مقامی انتظامیہ کے ساتھ تعاون کرے گی۔

انٹرایکٹو حوالوں سے وزارت نے ایک ویب سائٹ اور موبائل ایپلی کیشن تیار کی ہے جو شہریوں کے لیے ملک کے 81 صوبوں میں 24 گھنٹے ہوا کے معیار کو ٹریک کرنا ممکن بناتی ہے۔

ترکی پہلی مقامی طور پر تیار کرنے والی کار بھی ماحولیاتی خدشات کو ذہن میں رکھ کر بنائی گئی ہے، کیونکہ یہ مکمل طور پر الیکٹرک ہے۔ اس کا مطلب ہے کہ اس سے کوئی دھواں نہیں نکلے گا اور یہ ماحول کو آلودہ نہیں کرے گی۔

انتظامیہ نے ماحولیاتی قوانین کی خلاف ورزی کرنے والے لوگوں اور اداروں کے لیے جرمانوں میں 23.73 فیصد اضافہ بھی کیا ہے۔ دھواں نکلنے کے ٹیسٹ نہ کروانے والی گاڑیوں کے مالکان پر 1,546 ترک لیرا جرمانہ ہوگا جبکہ حد سے زیادہ دھواں چھوڑنے والی گاڑیوں کو 3,093 لیرا جرمانہ ادا کرنا پڑے گا۔ حد سے زیادہ آلودگی پیدا کرنے والی تنصیبات پر بھی بھاری جرمانے کیے جائیں گے۔ اسی طرح وزارت ٹرانسپورٹ، بحری امور و مواصلات نے بھی آلودگی پر بحری جہازوں کو جرمانے 41 فیصد بڑھا دیے ہیں۔

2020ء میں ترکی ماحولیاتی مستقبل کی جانب ایک قدم آگے ہوگا کہ جہاں عوام کے پاس نہ صرف ماحول دوست آپشنز ہوں گے بلکہ زندگی کے تمام پہلوؤں میں ماحول دوست فیصلے کرنے پر ان کی حوصلہ افزائی بھی ہوگی۔

برپینار کے لیے 2023ء میں مضبوط ترکی کے ہدف کو یقینی بنانے کی جانب 2020ء اہم قدم ہوگا۔

تبصرے
Loading...