شمالی عراق میں دہشت گرد حملہ، 3 ترک فوجی شہید

0 382

شمالی عراق میں PKK دہشت گردوں کے خلاف آپریشن میں حصہ لینے والے 3 ترک فوجی شہید ہو گئے ہیں۔

وزارت دفاع نے بیان کے مطابق حملے کے بعد جوابی کار روائی میں دہشت گردوں کو نشانہ بنایا گیا اور چھ دہشت گرد مارے گئے۔

شمالی عراق میں PKK کے کئی خفیہ ٹھکانے اور اڈے ہیں جہاں سے وہ ترکی میں کار روائیاں کرتے ہیں۔

ترک فوج شمالی عراق میں سرحد پار آپریشنز کرتی رہتی ہے۔ ترکی عرصے سے کہتا آ رہا ہے کہ وہ اپنی قومی سلامتی کو درپیش خطرات کو برداشت نہیں کرے گا اور عراقی حکام سے مطالبہ کرتا آیا ہے کہ وہ دہشت گرد گروہ کے خاتمے کے لیے ضروری اقدامات اٹھائیں۔ انقرہ اس سے پہلے کہہ چکا ہے کہ اگر متوقع اقدامات نہیں اٹھائے گئے تو وہ دہشت گردی کے خطرات کو خود ہدف بنائے گا۔

ترکی 2019ء سے اب تک شمالی عراق میں خاص طور پر PKK کے خلاف کئی کار روائیاں کر چکا ہے۔ ان میں سے آخری آپریشن کلا-لائٹننگ اور کلا-تھنڈربولٹ ہیں جو اپریل میں شروع کیے گئے جبکہ آپریشن کلا-ٹائیگر اور کلا-ایگل کا آغاز گزشتہ سال جون میں ہوا تھا۔

دہشت گرد گروپ بسا اوقات شمالی عراق میں ٹھکانوں کا استعمال کر کے ترکی کے جنوبی سرحد پر واقع علاقوں میں کار روائیاں کرتے ہی۔

ترکی کے خلاف اپنی 40 سالہ دہشت گردانہ کار روائیے کے ذریعے PKK کم از کم 40 ہزار افراد کی موت کا ذمہ دار ہے، جن میں خواتین، بچے اور نو مولود بھی شامل ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ ترکی کے علاوہ امریکا اور یورپی یونین نے بھی اسے دہشت گرد گروپ قرار دے رکھا ہے۔

تبصرے
Loading...
%d bloggers like this: