روزانہ 4 ہزار سے 5 ہزار افغانی، ایران باڈر سے اپنا ملک چھوڑ رہے ہیں، امدادی گروپ

0 1,166

ناروے کی امدادی تنظیم این آر سی نے خبر دی ہے کہ طالبان کے قبضے کے بعد سے اب تک ہر روز تقریباً 4000 سے 5000 افغان روزانہ ایران باڈر کے راستے ملک چھوڑ رہے ہیں، آنے والے موسم سرما میں یہ تعداد لاکھوں میں ہونا متوقع ہے۔

امدادی گروپ نے کہا کہ طالبان کی فتح کے بعد سے تقریباً 300,000 افغان سرحد پار کر چکے ہیں اور اس نے ایران کے لیے مزید بین الاقوامی مدد کا مطالبہ کیا، جو اپنے ہی ایک گہرے اقتصادی بحران سے دوچار ہے۔

این آر سی کے سکریٹری جنرل جان ایجلینڈ نے ایک بیان میں کہا ہے کہ "ایران سے توقع نہیں کی جا سکتی کہ وہ بین الاقوامی برادری کی اتنی کم حمایت کے ساتھ اتنے زیادہ افغانوں کی میزبانی کرے گا۔” "سردی کی جان لیوا سردی سے پہلے افغانستان کے اندر اور ایران جیسے پڑوسی ممالک میں فوری طور پر امداد کی فراہمی ہونی چاہیے۔”

بین الاقوامی امداد اچانک بند ہونے اور بیرون ملک رکھے گئے افغان مرکزی بینک کے اثاثوں کو منجمد کرنے سے بھی افغانستان کو معاشی تباہی کے قریب دھکیل دیا ہے، جس سے پناہ گزینوں کے بحران کا خدشہ بڑھ گیا ہے بالکل اسی طرح جیسا کہ شام سے 2015ء کے اخراج کی طرح جس نے یورپ کو ہلا کر رکھ دیا تھا۔

ایران اور پاکستان میں ملک چھوڑنے والے پچاس لاکھ افغانوں میں سے تقریباً 90 فیصد رہتے ہیں، حالانکہ وہاں ان سب کو پناہ گزینوں میں شمار نہیں کیا جاتا ہے۔

دوسری طرف اقوام متحدہ کے اداروں کا کہنا ہے کہ تقریباً 22.8 ملین افراد – افغانستان کی 39 ملین آبادی کا نصف سے زیادہ – گذشتہ دو ماہ سے شدید غذائی عدم تحفظ کا سامنا کر رہے ہیں۔

افغان صوبے قندھار میں گزشتہ روز ہزاروں افراد خشک سالی کے خاتمے کے لیے ایک اجتماعی دعائیہ تقریب کا بھی انعقاد کیا گیا تھا جس میں طالبان حکومت کے اعلیٰ سطح ذمہ داران نے بھی شرکت کی۔

افغانستان میں امن و استحکام کو یقینی بنانا بہت ضروری ہے، صدر ایردوان

تبصرے
Loading...
%d bloggers like this: