اینگن آلتان دوزیاتان بطور ارطغرل؛ ہمارے عہد کا ہیرو

0 1,346

اینگن آلتان دوزیاتان دسمبر 2014ء سے ریاست عثمانیہ کے بانی مبانی ارطغرل کے کردار میں اسکرین پر جلوہ گر ہونا شروع ہوئے۔ اس کے بعد جو کچھ اب تک ہو چکا ہے وہ ایک تاریخ ہے۔ شروع میں اسے تین سیزن سیریز بنانے کی منصوبہ بندی ہوئی مگر اب اس کی پانچویں سیریز چل رہی ہے اور دنیا کے 15 سے زائد ممالک میں براڈ کاسٹ ہو رہی ہے۔ اس میں انٹرنیٹ کے اعداد و شمار شامل نہ ہیں۔ ترکی میں لاکھوں ناظرین جن میں اکثریت نوجوانوں کی ہوتی ہے، ہر بدھ کی شام ٹی اسکرین پر صرف ارطغرل کے لیے اپنے چند گھنٹے صرف کرتے ہیں۔

حال ہی میں دوزیاتان کو دوحہ میں چھٹے أجيال فلم فیسٹیول میں مدعو کیا گیا۔ یہ فیسٹیول نوجوانوں کو سینما کی دنیا کی طرف بلاتا ہے تاکہ وہ بطور ناقد اور فلم ساز اس انڈسٹری میں شامل ہو سکیں۔ جب دوزیاتان کو سرخ کارپٹ پر بلایا گیا تو نوجوانوں کا جوش و خروش بتا رہا تھا کہ عرب دنیا میں ایک ہیرو کی حیثیت اختیار کر چکے ہیں۔ نوجوان اس کے ساتھ سیلفیاں لینا چاہتے تھے، انہیں چھونا چاہتے تھے اور ان کی ایک جھلک دیکھنے کو بے تاب نظر آ رہے تھے۔ بعیناً یہی صورت حال پاکستان اور بھارت میں مسلمان نوجوانوں کی ایک بڑی تعداد میں نظر آتی ہے اگر پاک و ہند میں ارطغرل کو ٹی وی اسکرین پر آنے کا موقع نہیں مل سکا لیکن لاکھوں نوجوان انٹرنیٹ کے ذریعے ان کو دیکھ رہے ہیں اور کئی رضا کار اس سیریز کا اردو ترجمہ کر رہے ہیں۔

اینگن آلتان دوزیاتان نہ صرف ترکی بلکہ دنیا کے کئی ممالک میں نوجوان نسل پر اثر انداز ہوئے ہیں جس میں چھوٹے بچے اور بچیاں بھی شامل ہیں۔ ایک نسل ایسی تیار ہوئی ہے جو ان کے چہرے میں عظیم ریاست عثمانیہ کے بانی ارطغرل کو پہچانتی ہے۔ ارطغرل بدلتی دنیا میں ہمارے وقت کے ایک تاریخی رول ماڈل بن چکے ہیں۔

دیریلش ارطغرل کی فلم سازی ایک محنت و مشقت کا نتیجہ ہے، کرداروں کو ہفتے کے 6 روز کام کرنا پڑتا ہے، بیک وقت اس کے لیے دو ٹیمیں کام کر رہی ہوتیں ہیں، پانچ سے 6 کیمرے اور بیک وقت 300 سے 500 افراد اس فلم سازی میں شریک ہوتے ہیں۔ دوزیاتان کا کہنا ہے کہ ہمیں تاریخی کردار سازی کرتے ہوئے وقت اور حالات کا مقابلہ بھی کرنا ہوتا ہے جس پر آج کی فلم سازی چل رہی ہے۔

اگر آپ بھی اس سیریز کو دیکھ رہے ہیں اور اینگن آلتان دوزیاتان کے کردار سے لطف اندوز ہو رہے ہیں تو آر ٹی ای اردو کو ضرور اپنے تاثرات لکھ بھیجئے۔

تبصرے
Loading...