ترکی کی مقامی برقی کار: ایک خواب جو پورا ہوا

0 2,935

ترکی کے لیے کل کا دن تاریخ ساز تھا جب اسے نے مقامی طور پر تیار کردہ برقی کار متعارف کروائی۔ یہ تقریب کوجیلی شہر کے ڈسٹرکٹ گیبذے (Gebze) میں ترتیب دی گئی اور کل کے دن ہر ترک شہری خوش و خرم نظر آ رہا تھا چاہے اس کا تعلق حکمران جماعت، آق پارٹی سے ہو یا ان کے مخالف کسی طبقے یا پارٹی سے منسلک ہو۔ حتی کہ سیکولر اپوزیشن پارٹی جے ہے پے(CHP) کے استنبول میں مئیر امام اکرم اولو نے بھی اس تاریخ ساز کامیابی پر مبارکباد دی اور اپنی بلدیہ کے لیے یہ کاریں خریدنے کی خواہش کا اظہار کیا۔

یوں تو ترکی میں مقامی طور پر کار تیار کرنے کی کوششیں کئی ادوار میں ہوئی ہیں۔ 1960ء میں بھی اس خواب کو حقیقت کا روپ دیتے ہوئے ترکی نے "دیورم” یعنی "انقلاب” کے نام سے ایک گاڑی متعارف کروائی تھی. اگرچہ اس کے کچھ پرزے مقامی طور پر تیار نہیں کئے گئے تھے لیکن ترک عوام کے لیے یہ امید کی کرن بن گئی کہ ترکی مقامی طور پر اپنی گاڑی بنا سکتا ہے۔

16 جون 1961ء کو اس وقت کے ترک صدر جمال گُورسیل (Cemal Gürsel) نے اپنا مشن آشکار کرتے ہوئے ترک ملٹری کی ضروریات کو پورا کرنے کے لیے آٹو موبائل بنانے کا عزم کیا۔ یہ مشن اس وقت، ترک قومی ریلوے کے ادارے (TCDD) کے سامنے رکھا گیا۔ ایک ٹیم اس مشن کو مکمل کرنے کے لیے بنائی گئی جس نے مختصر عرصے میں ایک کار ڈیزائن کرتے ہوئے بنا ڈالی۔

اگرچہ اس کے انجن ڈائزائن اور گیئر باکس میں بہت سی خامیاں پائی گئیں۔ ان تکنیکی خامیوں اور سیاسی مسائل کے باوجود ترکی نے یہ گاڑی 29 اکتوبر 1961ء کو اپنے 38ویں قومی دن پر لانچ کر دی۔ صدر گورسیل نے یہ گاڑی بانی ترکی مصطفے کمال اتاترک کے مقبرے انت کبیر کے سامنے خود چلا کر افتتاح کیا۔ ترکش لوکو موٹو اینڈ موٹر انڈسٹری کارپوریشن کی جانب سے اس کی چار گاڑی تیار بھی کی گئیں بعد میں ان کو سڑک سے ہٹا دیا گیا کیوں کہ گیسولین کو استمال نہ کر سکنے کی خامی کی وجہ سے سڑک پر بند ہو رہیں تھی۔ "دیورم” پر بہت زیادہ تنقید شروع ہو گئی جس پر اس منصوبے کو مکمل طور پر بند کر دیا گیا۔ ان چار گاڑیوں میں سے ایک گاڑی ابھی تک محفوظ حالت میں موجود تھی جو کل کی ہونے والی تقریب رونمائی میں بھی رکھی گئی تھی۔

ترکی کی مقامی طور طور پر کار کی تیاری کا خواب ایک بار پھر ترک صدر ایردوان کے سیاسی استاد پروفیسر نجم الدین اربکانؒ نے دیکھا۔ وہ پیشے کے لحاظ سے انجئیر اور ترکی کے وزیر اعظم منتخب ہوئے۔ انہوں نے دوبارہ اس خواب پر کام کرنا شروع کیا لیکن ایک سال کی مختصر مدت کے اندر اسلامی خیالات کی وجہ سے فوج نے ان کی حکومت کو چلتا گیا۔

ترک صدر ایردوان نے تقریب رونمائی سے خطاب کرتے ہوئے ان کو یاد کرتے ہوئے کہا کہ آج خواب مکمل ہو گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ دیورم کے مخالفین دیورم کو روکنے میں کامیاب ہو گئے تھے لیکن موجودہ سمارٹ کار "توگ” کو نہیں روک سکیں گے۔

ترکی کی تیار کردہ موجودہ اسمارٹ کار ایک شاہکار کی حیثیت رکھتی ہے اور پہلی اسمارٹ گاڑی ہے جو عام خریداری کے لیے پیش کی جائے گی۔ اسے ایک جوائنٹ وینچر "توگ” کے نام سے بنایا گیا ہے۔ انجن کے لحاظ سے اس کے300 ہارس پاور اور 400 ہارس پاور کے دو ماڈل ہیں۔ اول الذکر بٹن دباتے ہی انجن صرف 7 سیکنڈ میں 0 سے 100 کلومیٹر فی گھنٹہ کی اسپیڈ حاصل کر سکتا ہے جبکہ 400 ہارس پاور کا انجن 4.8 سکینڈ میں 0 سے 100 کلومیٹر فی گھنٹہ کی اسپیڈ حاصل کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے۔ بجلی پر چارج ہونے والی اس کار میں مکمل طور پر مقامی تیار کردہ 80 فیصد ری چارج ایبل لیتھیم بیٹری موجود ہے جو تیس منٹ میں چارج ہو کر 500 کلومیٹر کا سفر طے کروا سکتی ہے۔ کیونکہ یہ بجلی کے ذریعے چلنے والی کار ہے اس لیے یہ سو فیصد ماحول دوست ہے اور آنے والے دور ماحولیاتی چیلنجز کا مقابلہ کرنے کی صلاحیت رکھتی ہے۔

توگ کے افتتاح کے موقع پر پانچ ماڈل متعارف کروائے گئے جنہیں 2030ء تک مارکیٹ میں پیش کیا جائے گا۔ ترک شہر بورصہ میں اس اسمارٹ کار کی باقاعدہ پیداوار کے لیے 4 ملین مربع میٹر کی وسیع رقبہ پر 1 ملین مربع میٹر پر محیط ایک بڑی فیکٹری کا قیام عمل میں لایا گیا ہے۔ یہ زمین ترک فوج کی ملکیت میں تھی جسے اب باقاعدہ طور پر ایک منصوبے کو الاٹ کر دیا گیا ہے۔ 2021ء میں اس کے پیداواری یونٹ کو مکمل کرتے ہوئے 2022ء میں پہلی گاڑی تیار کی جائے گی۔ اس منصوبے کے لیے 22 ملین ترک لیرا بجٹ دیا گیا جس کی مدد سے یہ ہر سال 17500 اسمارٹ کاریں تیار کر کے مارکیٹ کرے گا۔ اس کے علاوہ 2023ء پورے ترکی میں اس کے چارجنگ اسٹیشنز بھی بنائے جائیں گے۔

اس منصوبہ کو ترک حکومت کی طرف کئی قسم کی سہولتیں فراہم کی گئیں جس میں مفت زمین الاٹ کرنا، ٹیکس اور انٹریسٹ سے آزاد کرنا اور 2035ء تک حکومت کی طرف 30000 گاڑیوں کی خریداری شامل ہے۔ اس منصوبہ میں سرمایہ کاروں کی جانب سے 2023ء تک ساڑھے 3 ملین ترک لیرا فراہم کرنے کے وعدے کئے گئے ہیں۔

ترک صدر رجب طیب ایردوان نے اس تاریخ ساز دن پر خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ایک مضبوط اور سرگرم عالمی کردار ادا کرنے کے لیے ٹیکنالوجی سے لیس ہونا ضروری ہے اور یہ ہم نے دفاعی انڈسٹری میں ثابت کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ آٹوموبائل انڈسٹری میں ہمارا یہ تیکنیکی تجربہ ہمارے راستے کو واضع کرتا ہے اور دیگر شعبوں کے لیے ایک مثال ہے۔ انہوں نے خبردار کیا کہ ہم یہاں کسی غلطی کو برداشت نہیں کر سکتے۔

انہوں نے کہا کہ یہ اسمارٹ کار اپنی اندرونی وسعت، اعلٰی کارگردگی اور کم قیمت کی وجہ سے اہم ہے۔ اور سب سے بڑھ کر یہ ماحول دوست ہے اور ماحولیاتی آلودگی کا سبب نہیں بنتی۔ انہوں نے اس عزم کا اظہار کیا کہ ترکی یورپ کی واحد غیر روایتی اور مکمل برقی ایس یو وی کار بنائے گا۔

تبصرے
Loading...