سالِ نو پر امن و امان برقرار رکھنے کے لیے تمام اقدامات اٹھائے جائیں گے

0 509

سالِ نو کی آمد کے موقع پر عوامی تحفظ اور امن و امان کو یقینی بنانے کے لیے ترکی بھر میں 3,00,000 سے زیادہ سکیورٹی اہلکار تعینات کیے گئے ہیں۔

وزارت داخلہ کے مطابق ملک کے بڑے شہروں اور قصبوں میں 2,33,723 پولیس اور 83,398 فوجی پولیس دستے کے اہلکار اپنے فرائض انجام دیں گے کہ جنہیں 700 سے زیادہ فضائی و بحری جہازوں کی مدد حاصل ہوگی۔

ملک بھر میں گورنر دفاتر کو جاری کیے گئے اعلامیہ میں وزارت نے تمام صوبوں کو سرکاری عمارات کے گرد سکیورٹی کو بڑھانے کی ہدایت کی ہے اور ان شہروں کو خبردار کیا ہے کہ جہاں موسمِ سرما کے سیاحوں کی بڑی تعداد آتی ہے کہ وہ ہوائی اڈوں، ریلوے اسٹیشنوں اور بس اڈوں پر ضروری حفاظتی اقدامات اٹھائیں۔

محکمہ سیاحت کے ماہرین کے مطابق پچھلے دو سالوں سے ترکی میں اسکی ٹورازم بڑھ رہی ہے، جو ترکی کو ‘اسکی اِنگ’ کے لیے ایک ابھرتا ہوا مقام بنا رہی ہے۔ پچھلے سال تقریباً 60 لاکھ مقامی اور غیر ملکی سیاحوں نے ترکی کے اسکی اِنگ علاقوں کی سیاحت کی کہ جن کی تعداد اس سال 65 لاکھ تک جانا متوقع ہے۔

بلدیات کے ساتھ تعاون کرتے ہوئے وزارت سڑکوں پر بھی حفاظتی اقدامات اٹھائے گی خاص طور پر سرد علاقوں میں ٹریفک پولیس کے اہلکاروں کی بڑی تعداد تعینات کی جائے گی تاکہ سالِ نو کے جشن کے بعد نشے میں ڈرائيونگ کرنے والوں کو روکا جا سکے۔

وزارت کا کہنا ہے کہ تقریباً 6,00,000 سکیورٹی اہلکار استنبول میں تعینات کیے جائیں گے کہ جہاں سکیورٹی اقدامات احتیاطاً بلند ترین سطح پر اٹھائے جا رہے ہیں کیونکہ سالِ نو کا سب سے بڑا جشن اس شہر میں ہوتا ہے۔

استنبول کے مرکز میں واقع تقسیم چوک نئے سال کا خیر مقدم کرنے والوں میں مقبول ترین جگہ ہے۔ البتہ اس جگہ پر زبردست حفاظتی اقدامات بھی کیے جا رہے ہیں کیونکہ تین سال پہلے استنبول کے رینا نائٹ کلب میں سالِ نو پر ہونے والا دہشت گرد حملہ ابھی کئی ذہنوں میں تازہ ہے۔

یکم جنوری 2017ء کو داعش کے ایک جنگجو نے مشہور نائٹ کلب میں گھس کر گولیاں چلا دی تھیں کہ جس کے نتیجے میں 39 لوگ مارے گئے جبکہ 79 زخمی ہوئے۔ ازبک دہشت گرد عبد القادر مشاریپوف نے بعد ازاں پولیس کے سامنے اعتراف کیا کہ ان کا اصل ہدف تقسیم چوک تھا۔

پچھلے سالوں میں استنبول محکمہ پولیس نے چوک پر گھڑ سوار دستے بھی تعینات کیے کہ جو ایک نیا اضافہ تھا۔

وزارت داخلہ کا کہنا ہے کہ ملک بھر میں مختلف مقامات پر چوکیاں بھی بنائی گئی ہیں تاکہ حفاظتی اقدامات اٹھائے جا سکیں اور غیر قانونی تارکینِ وطن کو بھی پکڑا جا سکے کہ جو جشن کے ان لمحات میں ترکی سے یورپ میں داخل ہونے کی کوشش کرتے ہیں۔

اسی دوران وزارت نے سالِ نو سے پہلے ایک آپریشن بھی شروع کر رکھا ہے کہ جسے آپریشن حفاظت و امن کا نام دیا گیا ہے اور اس میں 70،000 سکیورٹی اہلکار حصہ لے رہے ہیں جو اب تک 1,320 مشتبہ افراد کو گرفتار کر چکے ہیں۔ وزارت کے مطابق آپریشن کے دوران 4,268 لٹر اور 4,620 غیر قانونی طور پر بنائی گئی شراب قبضے میں لی گئی ہے۔ نیا سال قریب آتے آتے یہ آپریشن مزید تیز ہو جائے گا۔

24 دسمبر کو متعدد ترک صوبوں میں بیک وقت ہونے والے آپریشنز میں ریکارڈ 256 ٹن غیر قانونی شراب، لاکھوں بوتلیں، ان کے ڈھکن، لیبل اور جعلی ٹیکس اسٹیکرز ضبط کیے گئے تھے۔

تبصرے
Loading...