ترکی کی پہلی مقامی گاڑی کی فیکٹری تعمیر مئی میں شروع ہوگی

0 83

ترکی کی پہلی مقامی طور پر بنائی گئی گاڑی کی فیکٹری تعمیر کا آغاز مئی میں شروع ہوگا، جس میں ایک مرتبہ تعمیر مکمل ہونے پر سالانہ اوسطاً 1,75,000 گاڑیوں کی پیداواری گنجائش ہوگی۔

یہ گاڑی بنانے والے ترکی آٹوموبائل جوائنٹ وینچر گروپ (TOGG) کے چیئرمین گورجان قاراقاش نے کوجائیلی میں انفارمیشن ٹیکنالوجیز ویلی میں ایک نیوز کانفرنس میں بتایا کہ 2032ء تک 10 لاکھ گاڑیاں بنائی جائیں گی، جس کے لیے کارخانے کی ابتدائی تعمیر ایک سال میں مکمل ہوگی۔ اس پلانٹ پر آئندہ 15 سالوں میں 22 ارب ترک لیرا کی سرمایہ کاری متوقع ہے۔

ملک کی پانچ بڑی کمپنیوں کی شراکت TOGG نے حال ہی میں مقامی طور پر بنائی گئی پہلی گاڑی کے پروٹوٹائپس کی رونمائی کی تھی۔ قاراقاش نے کہا کہ بورصہ کے ضلع گیملک میں واقع اس گاڑی کی پیداواری تنصیب دراصل ایک اسمارٹ فیکٹری ہوگی۔ وہ پروڈکشن لائن کے حوالے سے دنیا بھر کے اداروں سے مشاورت کر رہے ہیں۔ کمپنی کو دنیا کے معروف اداروں کی پیشہ ورانہ مدد مل رہی ہے تاکہ وہ گاڑی کے ہر پرزے کی ممکنہ لاگت کا اندازہ لگا سکیں اور پیداواری عمل کو مختصر کرنے کی کوشش کریں۔

انہوں نے کہا کہ "ہم بطور ٹیکنالوجی شراکت دار جرمن انجینئرنگ فرم EDAG کے ساتھ رابطے میں ہیں۔” انہوں نے مزید کہا کہ وہ درکار ٹیکنالوجی فراہم کرنے کی صلاحیت رکھنے والے ترک اداروں کی بھی تلاش میں رہے۔ گروپ نے گاڑی کے ڈیزائن کے لیے 18 مقامی و بین الاقوامی اداروں کے ساتھ ملاقاتیں بھی کیں۔

گاڑی کی قیمت کے حوالے سے ایک سوال پر قاراقاش نے کہا کہ ایسا کوئی اعلان کرنا اس وقت مارکیٹنگ اور مسابقت کے لحاظ سے مناسب نہ ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ گروپ برانڈ کے نام پر بھی کام کر رہا ہے کہ جوعالمی مارکیٹ سے مطابقت رکھتا ہو،اور رواں سال کے اختتام پر نام ظاہر کر دیا جائے گا۔

اس وقت اِس گاڑی کے دو پروٹوٹائپس ہیں ایک اسپورٹس یوٹیلٹی وہیکل (SUV) اور دوسری سیڈان۔ یہ دونوں الیکٹرک اور سی-سیگمنٹ ماڈلز ہیں۔ SUV کی بڑے پیمانے پر پیداوار کا آغاز 2022ء میں ہوگا جبکہ سیڈان ماڈل کا آغاز اس کے بعد متوقع ہے۔

C-SUV ماڈل موبائل ورلڈ کانگریس (MWC) میں پیش کیا جائے گا جو 24سے 27 فروری تک بارسلونا اسپین میں ہوگی اور یہ پہلا موقع ہوگا کہ یہ گاڑی یورپ میں پیش کی جائے گی۔

قاراقاش نے کہا کہ آٹوموٹو سیکٹر پر اس گاڑی کے بڑے اثرات مرتب ہوں گے اور یہ ماحول دوست ٹیکنالوجی کا استعمال کرکے بنائی جائے گی۔

یہ SUV دو مختلف انجن configurations میں آئے گی: ایک 200 ہارس پاور اور دوسری 400 ہارس پاور۔ 400 ہارس پاور کی گاڑی 4.8 سیکنڈز میں صفر سے 100 کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار تک پہنچے گی۔ یہ 500 کلومیٹرز تک کی رینج رکھے گی اور مقامی طور پر بنائی جانے والی لیتھیم آیون بیٹری کی حامل ہوگی جو 30 منٹ میں 80 فیصد تک چارج ہو جائے گی۔

قاراقاش نے کہا کہ چارجنگ کے لیے انفرا اسٹرکچر کی تعمیر بھی عالمی سطح پر ہونے والی پیش رفت کے مطابق کی جائے گی۔ اس سلسلے میں ناروے، جرمنی، فرانس، برطانیہ، امریکا اور چین کی مثالوں کا جائزہ لیا جا رہا ہے۔ "چارجنگ کے لیے بنیادی ڈھانچہ 2022ء تک تیار ہو جائے گا، وہ بھی صرف اس مقامی گاڑی کے لیے ہی نہیں بلکہ دیگر برانڈز کی الیکٹرک کاروں کے لیے بھی۔ ”

انہوں نے کہا کہ روایتی ایندھن پر چلنے والی گاڑیوں کی مارکیٹ 2030ء تک 50 فیصد تک کم ہو جائے گی اور الیکٹرک گاڑیاں مارکیٹ پر غالب آ جائیں گی۔

قاراقاش نے کہا کہ ” مقامی طور پر بنائی جانے والی گاڑی یورپی صارفین کی توجہ بھی حاصل کرے گی اور ساتھ ہی وسط ایشیائی مارکیٹ بھی ایک مرتبہ بنیادی ڈھانچہ تیار ہونے کے بعد اس کے نقش قدم پر چلے گی۔”

تبصرے
Loading...