تقسیم اسکوائر پر قائم اتاترک ثقافتی مرکز کے انہدام پر سیکولر ایک بار پھر سیخ پا

0 436

سوموار کے روز ترک صدر رجب طیب ایردوان نے ترکی کے سیکولر بانی کے نام سے منسوب ثقافتی مرکز کے انہدام کا جیسے ہی اعلان کیا، اسے ترکی اور دنیا بھر کے سیکولر حلقوں میں حکمران اسلامسٹ جماعت کی طرف سے سیکولر ازم سے پیچھے ہٹنے کا ایک اور بڑا قدم سمجھا گیا۔

مصطفےٰ کمال اتاترک کے نام سے منسوب اتاترک ثقافتی مرکز کے انہدام کا یہ دوسری بار اعلان کیا گیا ہے، اس سے قبل تقسیم اسکوائر کی پرانی عمارات کو گرانے کے فیصلے پر حکمران آق پارٹی کو پُرتشدد مظاہروں کا سامنا کرنا پڑا تھا۔

نئے منصوبے میں ثقافتی مرکز کے انہدام کے بعد وہاں ایک بڑا اوپیرا ہاؤس، تھیٹر، کانفرنس ہال کے علاوہ غازی پارک کے قریب سینما ہال بھی بنایا جائے گا۔ 2013ء کی مظاہروں کی روشنی میں منصوبے کو تبدیل کیا گیا ہے۔ اس سے قبل رجب طیب ایردوان عثمانی طرز کی جدید بیرکوں کی  تعمیر کے خواہش مند تھے۔

رجب طیب ایردوان، جنہوں نے 1990ء میں استنبول کے میئر کی حیثیت سے خدمات سرانجام دیں اور بوسیدہ حالت بدل کر اسے عالمی معیار کا ایک خوبصورت شہر بنایا۔ ان کی یہ خواہش بہت پرانی ہے کہ اتاترک ثقافتی مرکز کو گرایا جائے کیوں کہ وہ ایک رسک بلڈنگ ہے جو زلزلے کی صورت میں بڑا انسانی بحران پیدا کر سکتی ہے۔ اسی وجہ سے عوام کے لیے یہ مرکز 10 سال سے بند ہے۔

اس کے برعکس ایردوان کے مخالفین اتاترک ثقافتی مرکز کے انہدام کو نظریاتی نظروں سے دیکھتے ہیں اور سمجھتے ہیں کہ ایردوان اور اس کی پارٹی ترکی کو اتاترک کے 1920ء کے ویژن سے دور لے جا رہی ہے اور عوامی سطح پر اتاترک کے نشانات کو مٹانا چاہتی ہے۔

وہ کہتے ہیں کہ اتاترک ثقافتی مرکز کا انہدام ایک "جرم” اور آئینی خلاف ورزی ہے۔

ترک صدر رجب طیب ایردوان نے کہا ہے کہ اتاترک ثقافتی مرکز کی تعمیر نو کی جائے گی اور نئی بننے والی عمارات استنبول کی تاریخی پہچان بنیں گی۔

ترک صدر نے تمام اعتراضات کو رد کرتے ہوئے کہا کہ اتاترک ثقافتی مرکز کے انہدام کے مخالف جدت سے نا آشنا ہیں اور صورت حال کو لگے بندھے نظریات کی آنکھ سے دیکھتے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ تعمیر نو کے مخالف آرٹ اور ثقافت کی اہمیت سے ناواقف ہیں۔

ایردوان کا کہنا تھا کہ مظاہروں، عدالتی کیسز اور مختلف مہمات کے بعد ہم ایک زیادہ بہتر راستے پر آئے ہیں۔ اور آج ہم اتاترک ثقافتی مرکز کے منصوبے کو نئی شکل میں پیش کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ یہ منصوبہ 10 سال پہلے شروع ہونا تھا لیکن ہم آج شروع کر رہے ہیں۔ ہم نے اس عرصے میں خود کو عوام کی خدمت اور فلاح کے لیے وقف رکھا ہے اور اس منصوبے پر ہونے والی ساری تنقید کا جائزہ لیا ہے۔

انہوں نے یہ واضع کیا کہ اتاترک ثقافتی مرکز کی تعمیر نو کی مخالفت کرنا ایسے ہی ہے جیسے ترکی کی دہشتگرد تنظیموں کے خلاف جنگ کو روکنے کی کوشش کی جاتی ہے۔

صدر ایردوان نے کہا کہ ان کا مقصد ہے کہ تقسیم اسکوائر پر کوئی کار داخل نہ ہو۔ کیونکہ یہ ایک سیاحتی مقام ہے اور اس پورے حصے کو پیدل چلنے اور دیکھنے والوں کے لیے محفوظ اور آسان بنانا چاہیے۔

انہوں نے کہا کہ ہم تمام اعتراضات رد کرتے ہیں اور ترکی کو عالمی سطح کے ہر شعبے میں بہتر مقام تک لے جانے لیے کام کرتے رہیں گے

تبصرے
Loading...