اقوام متحدہ کی ووٹنگ نے بتا دیا کہ وقار اور خودمختاری برائے فروخت نہیں ہوتیں، چاوش اولو

0 3,602

جمعرات کے روز اقوام متحدہ میں امریکی فیصلے کے خلاف ووٹنگ کے بعد ترک وزیر خارجہ نے کہا کہ ووٹنگ نے بتا دیا کہ وقار اور خودمختاری برائے فروخت نہیں ہیں۔

اپنے ٹویٹر پیغام نے انہوں نے ترکی، فلسطین اور باقی تمام کو اسپانسر اور تمام ممالک کا جنرل اسمبلی میں قرار داد پر شکریہ ادا کیا۔

اس سے قبل انہوں نے جنرل اسمبلی میں خطاب کرتے ہوئے امریکا پر کڑی تنقید کی۔ "فلسطینیوں کا یہ حق ہے کہ وہ 1967ء کی سرحدوں کے مطابق اپنی ریاست قائم کریں جس کا مرکزی مقام بیت المقدس ہو۔ یہ اہم وجہ اور انصاف کی اکلوتی امید ہے جس سے خطے میں پائیدار امن قائم کیا جا سکتا ہے”۔

جاوش اولو نے امریکی کی طرف سے قرار داد کی حمایت کرنے ممالک کو ترقیاتی امداد روکنے کی دھمکی کو غنڈہ گردی اور مکمل طور پر ناقابل قبول قرار دیا۔

انہوں نے کہا: "یہ غیر اخلاقی ہے کہ سوچا جائے وقار اور خود مختاری قابل فروخت ہوا کرتی ہیں۔ آپ طاقت ور ہو سکتے ہیں لیکن اس کا مطلب یہ نہیں کہ آپ حق پر ہیں”۔

ترک وزیر خارجہ نے اقوام متحدہ پر زور دیا کہ وہ اس پر عملدرآمد کے لیے سنجیدہ اقدامات اٹھائے۔ "سلامتی کونسل ایک مرتبہ پھر اپنی ذمہ داریاں ادا کرنے میں ناکام رہی ہے۔ اب یہ اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کی ذمہ داری ہے کہ وہ انصاف قائم کرے”۔

انہوں نے کہا: "بیت المقدس تمام تین وحدانی مذاہب کا مقدس مقام ہے۔ یہ انسانی ذمہ داری ہے کہ اس کی حفاظت کی جائے”۔

تبصرے
Loading...