نئے بل نے اسرائیل کو سرکاری طور پر فاشسٹ اور نسل پرستانہ ریاست بنا دیا ہے، ایردوان

0 960

ترک صدر رجب طیب ایردوان نے آق پارٹی کے پارلیمانی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ "اسرائیلی کنسیٹ میں پاس ہونے والے ‘یہودی قومی ریاستی کے قانون’ نے اسرائیل کے حقیقی عزائم سے پردہ اٹھا دیا ہے۔ اس قانون کے ذریعے بے انصافی پر مبنی تمام اقدامات، جبر و ستم اور بیت المقدس جانے والے مسلمانوں اور مسیحیوں سمیت تمام فلسطینوں کو نشانہ بنانے کے اقدامات کو آئینی تحفظ دے دیا گیا ہے۔ اسرائیل، فلسطینی زمینوں پر اپنے قبضے کو ‘سیٹلمنٹ’ کے نام سے جواز فراہم کر رہا ہے۔ اور اب اس کو تحفظ دینے کے لیے پورا بل لے آیا ہے۔ یہ قانون سازی ایک ثبوت ہے کہ کسی شک کے بغیر اسرائیل دنیا کی ایک کٹر صیہونی، شدید فاشسٹ اور سب سے زیادہ نسل پرستانہ ریاست ہے۔ اس قانون سازی کے بعد اب اسرائیل کے پاس کوئی جواز باقی نہیں بچتا کہ وہ فاشزم اور نسل پرستی اور اپنے برگُشت پر بات کر سکے۔ ہٹلر کی سوچ اور اسرائیلی انتظامیہ کے اس قدیم زمین بارے خیالات میں کوئی فرق نہیں ہے۔ دنیا کو ایک بڑی تباہی میں دھکیلنے والے ہٹلر کی روح، اسرائیلی انتظامیہ میں دوبارہ بیدار ہو گئی ہے”۔

ترک صدر نے اس خاموشی کو منافقت قرار دیا جو اسرائیل کے یہودی شریعت پر بنائے جانے والے ‘یہودی قومی ریاستی بل’ پر خاموش ہیں۔ جب ان دوسرے ممالک پر تنقید کرتے ہیں جو مذہب سے کسی قسم کا حوالہ لیتے ہیں۔ رجب طیب ایردوان نے کہا کہ ترکی، اسرائیلی انتظامیہ کے جبر و ستم اور بے انصافی کے خلاف اپنے فلسطینی بھائیوں کے ساتھ کھڑا رہے گا۔

صدر رجب طیب ایردوان نے اسلامی دنیا، مسیحی دنیا اور تمام جمہوری اور لبرل ریاستوں، اداروں، این جی اور میڈیا کے افراد سے اپیل کی کہ وہ اسرائیل کے اقدامات کے خلاف کھڑے ہوں۔

تبصرے
Loading...