لیبیا امن مذاکرات سے پہلے صدر ایردوان کی لیبیائی رہنما سراج سے ملاقات

0 202

صدر رجب طیب ایردوان نے جمعرات کو دارالحکومت انقرہ میں لیبیا کے بین الاقوامی طور پر تسلیم شدہ رہنما فائز سراج سے ملاقات کی۔ دونوں اتحادی ملک ممکنہ سیزفائر پر مذاکرات کے نئے دور سے پہلے طرابلس کے قریب میدانِ جنگ میں حاصل کی گئی حالیہ کامیابیوں کو محفوظ کرنا چاہتے ہیں۔

ترکی نے نومبر میں سراج کی حکومت (GNA) کو فوجی مدد فراہم کرنے کا آغاز کیا تھا جب دونوں ملکوں نے بحری حدود پر معاہدے کے بعد فوجی تعاون کے معاہدے پر دستخط کیے تھے، جس کی بدولت انقرہ کو بحیرۂ روم میں تیل و گیس کی تلاش کے حقوق ملے۔

حالیہ چند مہینوں میں ترکی کی مدد کی بدولت باغی جرنیل خلیفہ حفتر کے دستوں کو کافی دھچکا پہنچا ہے جنہیں متحدہ عرب امارات، روس اور مصر کی پشت پناہی حاصل ہے اور وہ اپریل 2019ء سے طرابلس میں GNA حکومت پر حملے کر رہے تھے۔

یہ ملاقات GNA کی جانب سے طرابلس کے مرکزی ہوائی اڈے کا کنٹرول حاصل کرنے کے ایک دن بعد ہوئی ہے اور اب لگتا ہے کہ لیبیا میں معاملات عارضی صلح کی طرف جائیں گے۔ GNA کا یہ بھی کہنا ہے کہ اس نے طرابلس کا مکمل کنٹرول حاصل کر لیا ہے۔

پیر کو اقوام متحدہ نے کہا تھا کہ فریقین نے سیزفائر مذاکرات دوبارہ شروع کرنے پر رضامندی ظاہر کی ہے اور خبردار کیا کہ لیبیا میں ہتھیاروں اور جنگجوؤں کی آمد پابندی کی خلاف ورزی ہے اور بڑے پیمانے پر دوبارہ جنگ شروع ہونے کا سبب بن سکتی ہے۔

ترکی کے ایک سینئر عہدیدار نے کہا کہ ایئرپورٹ پر کنٹرول حاصل کرنا ممکنہ امن مذاکرات سے پہلے اہم تھا اور ترکی فریقین کے مابین لیبیا کی تقسیم کی کسی بھی تجویز کی مخالفت کرے گا۔

تبصرے
Loading...