شرح سود پر حساسیت برقرار مگر سنٹرل بنک خودمختار ہے: ایردوان، ترک سنٹرل بنک نے کچھ ہی دیر بعد شرح سود بڑھا دی

0 999

ترک صدر رجب طیب ایردوان نے جمعرات کے روز کنفیڈریشن آف ترکش ٹریڈمین اینڈ کرافٹمین (TESK) کی جنرل اسمبلی سے انقرہ میں خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ زیادہ شرح سود پر ان کی حساسیت برقرار ہے لیکن سنٹرل بنک اپنے فیصلے کرنے میں خود مختار ہے۔ انہوں نے کہا، "شرح سود پر میری حساسیت پہلے کی طرح برقرار ہے۔ کچھ بھی نہیں بدلا۔ سنٹرل بنک خود مختار ہے اور وہ اپنے فیصلے کر سکتا ہے۔ لیکن یہاں پرائیویٹ بنک بھی ہیں، وہ کس طرح کردار ادا کرتے ہیں؟ وہ سنٹرل بنک کے فیصلے کو دیکھ کر چلتے ہیں اور شرح سود اب بھی عملی طور پر 50 فیصد زیادہ ہے” انہوں نے کہا اتنا زیادہ منافع تو صرف منشیات کے کاروبار سے ہی حاصل ہوتا ہے۔

صدر ایردوان نے مزید کہا، "یہ روز روشن کی طرح سچ ہے، ہم کسی صورت ان استحصالی آلے کے درمیان کردار ادا نہیں کر سکتے جس کا نام "سود” ہے”۔ انہوں نے ایک بار پھر کہا کہ شرح سود وجہ ہے اور مہنگائی اس کا ثمر ہے۔

صدر ایردوان نے کہا، "تم (سنٹرل بنک) صرف شرح سود کا تعین کر سکتے ہو لیکن مہنگائی خود بخود واقع ہو جاتی ہے۔ سنٹرل بنک سال کے اختتام پر مہنگائی کی شرح پیش کرتا ہے اور میں نے آج تک کبھی نہیں دیکھا کہ وہ اپنے اہداف کو طے کر لے۔ وہ اس کا غلط اندازہ لگاتے ہیں اور اپنی شرح پھر بڑھاتے ہیں”۔

ترکی کی کارکردگی اور عمل فری مارکیٹ اکانومی کے حق میں ہیں

ترک صدر نے مزید کہا، "ترکی کی کارکردگی اور عمل فری مارکیٹ اکانومی کے حق میں ہیں، ہم فری مارکیٹ فریم ورک کو چھوڑے بغیر ان تمام واقعات سے نبٹنے کی جدوجہد کر رہے ہیں جو ہماری معیشت پر منفی طور پر اثر انداز ہوتے ہیں خاص طور پر کرنسی ریٹ”۔

ترک صدر نے مزید کہا، "ہمارا مقصد اس ذہنیت کو عملی طور پر لاگو کرنا ہے کہ پیدوار، صلاحیت اور بچت کا نظام قائم کیا جائے اور ان مسائل کا اس طرح قلع قمع کیا جائے جن کا ہم سامنا کر رہے ہیں۔ مشکل حالات کا یہ دور ہمارے لیے امکانات پیدا کرتا ہے۔ اگر بنک شرح سود بڑھا کر اس جلتی پر تیل ڈالتے ہیں، کریڈٹ ٹیپس کو بدلتے ہیں اور حقیقی شعبے میں قیمتیں بڑھتی ہیں تو ہر شخص اس کا نقصان اٹھائے گا۔ باقی اصل فیصلہ ترکی نے کرنا ہے جس نے کئی مشکلات کا سامنا کیا ہے اور اپنے اہداف کی طرف بڑھتی چلی گئی ہے۔ ہم اس دور پر بھی قابو پا لیں گے”۔

ترکی کے سنٹرل بنک نے ایردوان کے خطاب کے ڈیڑھ گھنٹے بعد شرح سود بڑھا دئیے

دوسری طرح سنٹرل بنک (CBRT) نے صدر ایردوان کے اس خطاب کے ڈیڑھ گھنٹے بعد شرح سود 17.75 فیصد سے 24 فیصد تک بڑھا دی ہے۔ سنٹرل بنک کے فیصلے کے فوری بعد ترک لیرا ڈالر کے مقابلے میں 5 فیصد مضبوط ہو کر 6.15 پر آ گیا۔ اس سے قبل انٹر بنک مارکیٹ میں لیرا کا ریٹ 6.45 تھا۔ ترکش سنٹرل بنک نے کہا ہے کہ اس کے فیصلے قیمت کے استحکام کا ذریعہ بنیں گے اور مارکیٹ کو درپیش خطرات کا ازالہ ہو گا۔

 

 

 

تبصرے
Loading...