صدر ایردوان اقوامِ متحدہ کو مشرقی بحیرۂ روم میں ترکی کے عزائم اور یونانی خلاف ورزیوں سے آگاہ کریں گے

0 153

صدر رجب طیب ایردوان اقوامِ متحدہ سے خطاب میں مشرقی بحیرۂ روم میں ترکی کے عزائم اور یونان کی خلاف ورزیوں سے دنیا کو آگاہ کریں گے۔

اقوامِ متحدہ کی جنرل اسمبلی کا اجلاس 22 ستمبر سے تاریخ میں پہلی بار آن لائن منعقد ہو رہا ہے جس کی تیاریاں اس وقت جاری ہیں۔ صدر ایردوان اجلاس کے پہلے ہی دن خطاب کریں گے۔

خطاب میں صدر مشرقی بحیرۂ روم میں اپنے حقوق و مفادات کے تحفظ کے لیے ترکی کے عزائم اور خطے میں یونان کے اشتعال انگیز اقدامات پر بات کریں گے۔ وہ دنیا کو یونان کی جانب سے بین الاقوامی قوانین اور اقوام متحدہ کی قراردادوں کی خلاف ورزیوں سے بھی آگاہ کریں گے جبکہ یہ بھی کہیں گے کہ اس معاملے کے حل کے لیے ترکی مذاکرات کے حق میں ہے۔

صدر جنوب مشرقی پڑوسی شام میں ہونے والی پیش رفت پر بھی بات کریں گے، جہاں ترکی نے علاقے کو دہشت گردوں سے خالی کرانے اور شامی مہاجرین کی بحفاظت وطن واپسی کے انتظامات کیے ہیں۔

لیبیا کے حوالے سے صدر ایردوان اس کی علاقائی سالمیت کے تحفظ اور اقوامِ متحدہ کی تسلیم شدہ حکومت کی حمایت پر روشنی ڈالیں گے۔

صدر ایردوان مغربی کنارے اور غزہ میں اسرائیل کی خلاف ورزیوں اور یروشلم کی حیثیت اور ساتھ ساتھ مغرب میں اسلام مخالفت کے بڑھتے ہوئے رحجان پر بھی بات کریں۔

ترک صدر ماضی میں دنیا بھر میں ہونے والے مظالم اور ناانصافی کی طرف توجہ دلانے کے ساتھ ساتھ اقوامِ متحدہ کی سلامتی کونسل کے ڈھانچے میں تبدیلی کی بات بھی کر چکے ہیں۔ ایردوان کے اس جملے کہ "دنیا پانچ ملکوں سے کہیں زیادہ بڑی ہے” کو اقوامِ متحدہ کے کئی اراکین نے مانا ہے، جن کا کہنا ہے کہ بڑے فیصلے محض پانچ ملکوں پر نہیں چھوڑے جا سکتے۔ ان کے خیال میں سلامتی کونسل کے مستقل اراکین کی تعداد بڑھا کر 20 کرنی چاہیے۔

تبصرے
Loading...