فروری میں برآمدات عروج پر، 14.7 ارب ڈالرز تک پہنچ گئیں

0 299

ترکی کی برآمدات کی کارکردگی نے فروری میں ایک اور ریکارڈ قائم کیا ہے اور ترکش ایکسپورٹرز اسمبلی (TIM) کے مطابق 14.7 ارب ڈالرز تک جا پہنچی ہیں۔

وزیر تجارت رخسار پیک جان نے ایک تحریری بیان میں کہا کہ ترک برآمد کنندگان نے پچھلے مہینے سالانہ بنیادوں پر 2.3 فیصد کا اضافہ کیا جبکہ درآمدات 9.9 فیصد اضافے کے ساتھ 17.7 ارب ڈالرز تک پہنچی۔

ملک کی غیر ملکی تجارتی کا حجم کُل 32.3 ارب ڈالرز تک پہنچ گیا ہے جو پچھلے سال کے اسی مہینے کے مقابلے میں 6.43 فیصد زیادہ ہے۔ پیک جان نے یہ بھی کہا کہ درآمد-برآمد کا تناسب اس مہینے بڑھ کر 83 فیصد تک پہنچا۔ انہوں نے کہا کہ "غیر ملکی طلب، عالمی و علاقائی منفی حالات، غیر یقینی کیفیات ور خطرات کے باوجود یہ اضافہ دنیام یں ہمارے برآمدکنندگان کی قوت کو ظاہر کرتا ہے۔”

جنوری-فروری میں کُل برآمدات 29.4 ارب ڈالرز کی رہیں، جو سالانہ بنیادوں پر 4.3 فیصد اضافے کو ظاہر کرتے ہیں۔ درآمدات بھی سالانہ 14.4 فیصد اضافے کے ساتھ اِس عرصے میں 36.9 ارب ڈالرز تک جا پہنچی ہیں۔

جرمنی، عراق اور برطانیہ ترک برآمدات کے سب سے بڑے وصول کنندہ رہے جبکہ جن ملکوں سے سب سے زیادہ درآمدات کی گئیں وہ روس، چین اورجرمنی تھے۔ ڈیٹا ظاہر کرتا ہے کہ جرمنی کے لیے برآمدات 1.3 ارب ڈالرز رہیں جس کے بعد عراق 906 ملین ڈالرز اور برطانیہ 856 ملین ڈالرز۔ ملک کی تقریباً 48.1 فیصد برآمدات یورپی یونین کے ممالک کو جاتی ہیں۔

شعبہ جات کے لحاظ سے دیکھا جائے تو آٹوموٹِو بدستور سب سے نمایاں شعبہ رہا کہ جس کی برآمدات فروری میں 2.52 ارب ڈالرز رہیں۔ اس کے بعد تیار ملبوسات ہیں جو 1.52 ارب ڈالرز اور ہیں جبکہ کیمیائی مادّے 1.51 ارب ڈالرز کے ساتھ تیسرے نمبر پر رہے۔ سال کے پہلے دو مہینوں میں کُل 21 شعبہ جات نے اپنی مجموعی فروخت کو بہتر بنایا۔

تبصرے
Loading...