افغان فورسز اور طالبان کے درمیان جنگ، قندوز سے ہزاروں خاندان نقل مکانی پر مجبور

0 953

افغان فورسز اور طالبان کے درمیان کئی دن تک طول پکڑنے والی جنگ کی وجہ سے قندوز کے ہزاروں خاندان نقل مکانی پر مجبور ہوئے ہیں۔ حالیہ برسوں میں طالبان نے دو بار اس شہر پر قبضہ کرنے کی کوشش کی لیکن اب اس نے آس پاس کے اضلاع اور تاجکستان کے ساتھ قریبی سرحد قبضہ حاصل کرلیا ہے۔

"قندوز کے مہاجرین اور وطن واپسی کے محکمہ کے ڈائریکٹر غلام سخی رسولی نے ایجنسی فرانس پریس (اے ایف پی) کو بتایا ،” لڑائی سے تقریبا 5،000 5000 خاندان بے گھر ہوگئے ہیں۔

انہوں نے بتایا کہ ان میں سے 2 ہزار خاندان کابل اور دوسرے صوبوں فرار ہوچکے ہیں۔

قندوز کی صوبائی کونسل کے رکن غلام ربانی ربانی نے بتایا کہ بہت سے لوگوں نے شہر کے ایک اسکول میں پناہ لی اور انہیں کھانا اور دیگر امدادی سامان مہیا کیا گیا تھا۔

اے ایف پی کے ذریعہ لی گئی ویڈیو فوٹیج میں درجنوں افراد کو دکھایا گیا ، جن میں بیشتر خواتین اور بچے اسکول کے احاطے میں خیموں کے اندر بیٹھے تھے۔

جمعہ خان ، جو اپنے اہل خانہ کے ساتھ فرار ہوا ، جمعہ خان نے اے ایف پی کو بتایا ، "ہم چھ کنبے ہیں جو یہاں تین دن سے ایک ساتھ رہ رہے ہیں۔ آپ دیکھ سکتے ہیں کہ میرے بچے زمین پر بیٹھے ہیں۔”

اختر محمد ، جو بھی اسکول میں پناہ لے چکے ہیں ، نے بتایا ، "ہمیں ابھی تک کوئی مدد نہیں ملی ہے۔ آج کچھ ٹیموں کا سروے کرنے کے لئے ایک ٹیم آئی تھی لیکن کچھ منٹ کے بعد وہ وہاں سے چلے گئے۔”

رسولی نے مزید کہا کہ باغیوں اور سرکاری افواج کے مابین ایک ماہ تک جاری جھڑپوں کے بعد مزید 8000 خاندان صوبہ قندوز میں بے گھر ہوگئے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ حکام صوبہ بھر کے تمام بے گھر ہونے والے خاندانوں کو امدادی سامان فراہم کرنے سے قاصر ہیں۔

قندوز شہر کے پبلک ہیلتھ ڈائریکٹر احسان اللہ فضلی نے بتایا کہ ایک ہفتہ سے زیادہ عرصہ قبل لڑائی شروع ہونے کے بعد سے 29 شہری ہلاک اور 225 زخمی ہوئے ہیں۔

طالبان اور افغان فورسز خونی لڑائوں میں مصروف ہیں۔

منگل کے روز باغیوں نے حالیہ مہینوں میں ان کے ایک اہم فائدہ میں تاجکستان کے ساتھ افغانستان کی مرکزی سرحد عبور کرنے والے شیر خان بندر پر قبضہ کرلیا۔

مئی کے شروع سے ہی ، طالبان نے متعدد بڑی سرکشیوں کا آغاز کیا ہے جنہوں نے ؤبڑ علاقوں میں سرکاری فوج کو نشانہ بنایا ہے اور ان کا کہنا ہے کہ انہوں نے ملک کے 400 سے زیادہ اضلاع میں سے 90 کے قریب علاقوں پر قبضہ کرلیا ہے۔

حکومت کے ذریعہ ان کے بہت سے دعوؤں کو متنازعہ اور آزادانہ طور پر تصدیق کرنا مشکل ہے۔

ریاستہائے متحدہ نے جو جو بائیڈن کے ذریعہ امریکہ کی طویل عرصے سے طویل ترین جنگ کے خاتمے کے اعلان کردہ 11 ستمبر کی آخری تاریخ کو پورا کرنے کے لئے ریاستہائے متحدہ فوج کی جانب سے ملک سے اپنے آخری بقیہ 2500 فوجیوں کی واپسی کا آغاز کیا تھا اس کے بعد تشدد میں اضافہ ہوا ۔

دونوں متحارب فریقین کے مابین امن مذاکرات قطر میں تعطل کا شکار ہیں۔

تبصرے
Loading...