نمل یونیورسٹی میں گیلی پولی برسی کی تقریب، ترک سفارتکار کی شرکت

0 996

اسلام میں ترک سفارت خانے اور یونس ایمرے انسٹیٹیوٹ کے زیر اہتمام نمل یونیورسٹی میں تقریب کا اہتمام کیا گیا۔ جس میں گیلی پولی جنگ میں حصہ لینے والے ترک سپاہیوں کو خراج تحسین پیش کیا گیا۔

چناق قلعے کی جنگ گیلی پولی کی 103 ویں برسی کے موقع پر جمعرات کے روز نمل یونیورسٹی کے شعبہ ترک زبان نے تقریب کا انتظام کیا۔ جس میں طلباء، اساتذہ اور اسٹاف کی بڑی تعداد نے شرکت کی۔

تقریب کے مہمان خصوصی پاکستان میں تعینات ترک سفیر احسان مصطفے یرداکل تھے۔

گیلی پولی جنگ 1915ء میں عثمانی ترکوں اور اتحادی افواج جن میں سلطنت برطانیہ اور فرانس شامل تھا کے مابین جنگ عظیم اول کا ایک بڑا معرکہ تھا۔ اس جنگ میں ترک افواج کا کمانڈر مصطفی کمال جبکہ اتحادی افواج کا کمانڈر سر ہملٹن تھا۔ اس جنگ میں 7 لاکھ ترک جبکہ ساڑھے پانچ لاکھ اتحادی فوجی مارے گئے۔ ترکوں نے بے مثل مزاحمت اور شجاعت کے ساتھ قربانی پیش کی اور اتحادیوں کو نقصان اٹھا کر گیلی پولی سے نکلنا پڑا اور ترکوں کو فتح حاصل ہوئی۔

ترک سفیر نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا، "چناق قلعے کی جنگ (گیلی پولی) محض زندگی کی جنگ نہیں تھی بلکہ نوجوانوں کی جدوجہد تھی جو فخر اور نیکی کے ساتھ شہید ہوئے”۔

ترک تاریخ میں اس جنگ کی اہمیت بیان کرتے ہوئے احسان یرداکل نے کہا، "بحیثیت ایک ملت کے یہ ہماری ذمہ داری ہے کہ چناق قلعہ کی فتح کو وہ اہمیت دیں جو اس کا حق ہے”۔

ترک سفیر نے کہا کہ ترک برصغیر کے مسلمانوں کی مدد کو کبھی نہیں بھول سکتے جو انہوں نے خلافت عثمانیہ کے بُرے وقتوں میں کی۔

تقریب میں یونس ایمرے انسٹیٹوٹ کے روح رواں پروفیسر ڈاکٹر خلیل طوقر نے بھی شرکت کی۔

تقریب میں نامور ترک شاعر محمد عاکف ارسوئے کو سپاس نامہ بھی پیش کیا گیا جنہوں نے ترکی کا قومی ترانہ بھی لکھا تھا۔

تبصرے
Loading...