یونان نے ڈی ملٹرائزڈ زون میں واقع جزیرے پر فوج بھیج دی

0 184

یونان نے ترکی کے ساحل کے ساتھ واقع ایک جزیرے پر فوجی دستے بھیجنا شروع کر دیے ہیں حالانکہ ان جزائر کی حیثیت غیر فوجی ہے۔ ترکی ایک اور جزیرے پر یونانی فوج کی موجودگی سے پہلے ہی خبردار کر چکا ہے۔

ایک وڈیو فوٹیج میں دیکھا جا سکتا ہے کہ یونانی فوجی رو (کرادا) کے جزیرے پر اتر رہے ہیں، جو کاستیلوریزو کی بلدیہ کا حصہ ہے۔ خبروں کے مطابق یونان نے جزیرے پر کئی شہری عمارات کو فوجی ہیڈکوارٹر بنا دیا ہے کہ جنہیں افواج استعمال کر رہی ہیں۔

رو کا جزیرہ ترکی کے ساحل سے تقریباً 2.4 کلومیٹرز کے فاصلے پر ہے اور غیر آباد ہے۔

ترکی نے اگست میں demilitarized جزیرے کاستیلوریزو پر فوجی تعینات کرنے پر تنقید کی تھی اور اسے اشتعال انگیز اور مشرقی بحیرۂ روم میں یونان کے اصل ارادوں کا عکاس قرار دیا تھا۔

جزیرہ 1947ء کے پیرس امن معاہدوں کے تحت demilitarized ہے، یعنی یہاں فوج تعینات نہیں کی جا سکتی لیکن یونان ماضی میں بھی یہاں فوجی مشقیں کر چکا ہے۔

کاستیلوریزو ترکی کے قریب بحیرۂ ایجیئن میں واقع 14 جزیروں میں سب سے بڑا ہے کہ جنہیں مجموعی طور پر Dodecanese جزائر کہا جاتا ہے۔

دونوں ملکوں کے مابین تعلقات مختلف معاملات کی وجہ سے تعلقات کشیدہ ہیں، جن میں مشرقی بحیرۂ روم کا تنازع، مسئلہ قبرص اور یونان کی جانب سے گولن دہشت گرد گروپ (FETO) کے مفرو افراد کو پناہ دینا شامل ہے کہ جو 2016ء کی ناکام بغاوت کے بعد بھاگ گئے تھے۔

لیکن حالیہ کشیدگی مشرقی بحیرۂ روم کی وجہ سے ہے کہ جہاں ترکی کا بحری جہاز ‘عروج رئیس’ قدرتی وسائل کی تلاش کی سرگرمیاں کر رہا ہے۔ ترک حکومت اس علاقے پر یونان کے دعووں کو مسترد کرتی ہے اور اس کا کہنا ہے کہ دونوں ممالک کے مابین سمندری حدود کے تعین کے لیے اِن جزائر کو شامل نہیں کیا جا سکتا۔

یونان دعویٰ کرتا ہے کہ بحیرۂ ایجیئن اور مشرقی بحیرۂ روم میں موجود چھوٹے جزائر کی بدولت اسے سمندری حدود کا حق حاصل ہے اور یہ اُس کے براعظمی کنارے (continental shelf) کو پھیلاتے ہیں۔ ان میں سے کئی جزائر ترکی سے محض چند کلومیٹرز کے فاصلے پر واقع ہیں۔

ایتھنز 10 مربع کلومیٹرز کے کاستیلوریزو جزیرے کی بنیاد پر 40 ہزار مربع کلومیٹرز کی سمندری حدود کا دعویٰ کرتا ہے، حالانکہ یہ جزیرہ یونان کے مرکزی علاقوں سے 580 کلومیٹرز دور ہے۔

تبصرے
Loading...