کرونا وائرس: اللہ کی نصرت، احتیاط کی صورت ہے، ایک واقعہ

0 1,890

کہتے ہیں ایک علاقے میں سیلاب آیا شہر کے تمام لوگ شہر چھوڑ کر جارہے تھے کہ ان میں ایک شخص نے کہا مجھے خدا پر بھروسہ ہے وہ مجھے تنہا نہیں چھوڑے گا لہٰذا میں ادھر ہی رہوں گا یہ سیلاب میرا کچھ نہیں بگاڑ سکتا، لوگوں نے بہت منتیں کی لیکن وہ نہ مانا۔ حتی کہ لوگ اسے وہیں چھوڑ پر چلے گئے۔

تھوڑی دیر بعد پانی بڑھ گیا کہ ایک گاڑی آئی گاڑی والے نے کہا پانی بڑھ رہا ہے میرے ساتھ گاڑی میں بیٹھ جاو ورنہ ڈوب جاو گے اس نے کہا نہیں مجھے اپنے خدا پر بھروسہ ہے وہ مجھے بچائے گا۔ وہ بھی چلا گیا، اور پانی مزید بڑھتا چلا گیا۔

کچھ وقت کے بعد ایک کشتی آگئی۔ کشتی والے نے کہا میرے ساتھ بیٹھ جاؤ ورنہ پانی سر تک آن پہنچا ہے بہت جلد ڈوب جاو گے اس نے کہا نہیں، مجھے اپنے خدا پر بھروسہ ہے وہ مجھے بچائے گا کشتی والا بھی چلا گیا پانی سر سے بڑھ گیا تو وہ مکان کی چھت پر چڑھ گیا۔

اسی وقت ایک آخری آپشن اس کے پاس آیا۔ ایک ہیلی کاپٹر آیا اور اسے کہا گیا کہ اب تو ہمارے ساتھ بیٹھ جاؤ اس کے بعد کوئی آپشن نہیں تمھارے پاس۔ اس نے کہا مجھے میرے خدا پر مجھے بھروسہ ہے میرا خدا مجھے بچائے گا۔ ہیلی کاپٹر اسے وہیں چھوڑ کر چلا گیا۔

آخر وہی ہوا جس کا سب کو ڈر تھا، پانی چھت تک پہنچ گیا اور وہ ڈوب کر مر گیا۔

کچھ دنوں بعد اسے ایک شخص نے خواب میں دیکھا کہ وہ شخص اللہ سے ہمکلام ہو رہا ہے اور کہہ رہا ہے کہ میں نے آپ پر سچے دل سے بھروسہ کیا اور آپ نے مجھے ڈبو دیا۔

اللہ تعالیٰ نے فرمایا کہ وہ لوگ جو تجھے جانے کا کہہ رہے تھے۔ معلوم ہے کس نے بھیجے تھے؟ اس کے بعد وہ گاڑی، کشی اور ہیلی کاپٹر یکے بعد دیگرے تجھے بچانے کے ذرائع کس نے بھیجے تھے؟ اور تجھے دماغ کس نے بخشا تھا؟ تو نے میری دی گئی نعمتوں کا استعمال کیوں نہیں کیا؟ تو نے میرے بھیجے گئے ذرائع کا فائدہ کیوں نہ اٹھایا؟ یہی میری مدد و نصرت تھی جو تو نے ٹھکرا دی۔ بہتر تھا کہ تم میری دی گئی عقل اور شعور کا درست استعمال کرتے تو آج مجھ سے شکوہ کی نوبت نہ آتی۔

تحریر:

تبصرے
Loading...