انقرہ میں یومِ استحصال کشمیر کی تقریب، مقبوضہ کشمیر کے مظلوم عوام سے اظہارِ یکجہتی

0 714

انقرہ میں پاکستان کے سفارت خانے سے بھارت کے غیر قانونی قبضے میں موجود جموں و کشمیر کے مظلوم عوام سے اظہارِ یکجہتی کے لیے یومِ استحصال منایا۔ پاکستانی کمیونٹی کے اراکین اور انقرہ میں رہنے والے کشمیریوں کے ساتھ ساتھ میڈیا کے نمائندے بھی اس موقع پر موجود تھے۔

اس موقع پر صدر اور وزیر اعظم پاکستان کے پیغامات پڑھ کر سنائے گئے۔ اپنے پیغامات میں پاکستانی قیادت نے مقبوضہ کشمیر میں بھارتی مظالم کو انسانیت کے خلاف جرائم قرار دیا کہ جنہوں نے مقبوضہ جموں و کشمیر میں عوام کی زندگیاں تباہ کر دی ہیں، ان کے ذرائع معاش تباہ کر دیے ہیں اور کشمیریوں سے ان کی شناخت کو خطرے میں ڈال دیا ہے۔ صدر اور وزیراعظم ونے بین الاقوامی برادری سے ایک مرتبہ پھر مطالبہ کیا کہ وہ محض مذمت کے کلمات کے بجائے عملی اقدامات اٹھائے جو بھارت کو مجبور کریں کہ وہ کشمیری عوام کے ساتھ اپنے رویّے کو تبدیل کرے۔ پاکستانی قیادت نے ایک مرتبہ پھر کشمیر کے عوام کی بھرپور حمایت کا اعادہ کیا جب تک کہ انہیں اقوامِ متحدہ کی سلامتی کونسل کی قراردادوں کے عین مطابق ایک شفاف اور آزادانہ استصوابِ رائے کے ذریعے حقِ رائے دہی کا موقع نہیں ملتا۔

ترکی کے لیے پاکستان کے سفیر محمد سائرس سجاد قاضی نے اپنے کلمات میں صدر اور وزیر اعظم پاکستان کے مؤقف کا اعادہ کیا اور مقبوضہ کشمیر کے عوام اور ان کی منصفانہ جدوجہد میں ان کی مدد کا پیغام دیا۔

سفیر نے جموں و کشمیر کے تنازع کے منصفانہ حل کے لیے ترک عوام اور قیادت کی حمایت پر انہیں سراہا اور اس حوالے سے 5 اگست 2020ء کو ترک وزارتِ امورِ خارجہ کی جانب سے دیے گئے بیان کو سراہا۔

پاکستانی سفیر نے انسانی حقوق کی پارلیمانی کمیٹی کے چیئرمین جناب خاقان چاؤش اوغلو کے بیان کو بھی سراہا کہ جنہوں نے مقبوضہ جموں و کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں پر تشویش کا اظہار کیا تھا۔ انہوں نے ترک پارلیمنٹ میں ترکی-پاکستان بین پارلیمانی فرینڈشپ گروپ کے چیئرمین جناب علی شاہین کے بیان کو بھی سراہا کہ جنہوں نے جموں و کشمیر کے عوام سے بھرپور اظہارِ یکجہتی کیا۔

یومِ استحصال کے حوالے سے مختلف تقریبات کا انعقاد بھی کیا جا رہا ہے۔

تبصرے
Loading...