امام نے بچوں کی توجہ حاصل کرنے کے لیے مسجد میں کھیل کی جگہ بنا دی

0 397

اس موسمِ گرما میں ہونے والی مطالعہ قرآن کی کلاسز میں بچوں کی کم تعداد سے پریشان ایک امام نے معاملات اپنے ہاتھ میں لے لیا ہے۔ کھیل کے ایک نئے میدان کے ساتھ مسجد میں بچوں کے لیے دوستانہ ماحول دے کر انہوں نے کئی بچوں کی توجہ مسجد کی جانب مبذول کرا دی ہے۔ قادر چیلک از، جو شمال مغربی صوبے قوجاایلی کے شہر باشسکلے کی مرکز مسجد کے امام ہیں، اپنے ان اقدامات کی وجہ سے اب بچوں کی ہر دل عزیز شخصیت بن چکے ہیں۔

ملک بھر کے دیگر اماموں کی طرح قادر بھی سمر کلاسز میں قرآن مجید پڑھاتے ہیں۔ جب انہیں پتہ چلا کہ چند بچوں نے ہی ان کلاسوں میں داخلہ لیا ہے تو انہوں نے بچوں کی توجہ حاصل کرنے کے لیے مسجد کے صحن میں جھولے لگا دیے۔ 10 سالوں سے اس مسجد میں امامت کی ذمہ داریاں انجام دینے والے قادر نے ان سرگرمیوں کے لیے اسپانسرز کی تلاش کی اور ان کی مدد سے وہ کھیل کا یہ میدان سجانے میں کامیاب ہو گئے ہیں جس میں بچوں کے لیے تھیٹر کے علاوہ انہیں پاپ کارن اور ٹافیاں بھی ملتی ہیں۔ جلد ہی کلاسز لینے والے بچوں کی تعداد ایک سال کے عرصے میں 30 کے مقابلے میں 150 تک جا پہنچی، اور اِس سال تو ریکارڈ 250 بچوں نے نام لکھوایا ہے۔

ہر سوموار کو کلاسیں ختم ہونے کے بعد بچوں کو تھیٹر دیکھنے کے لیے مدعو کیا جاتا ہے اور اس میدان پر انہیں اخلاقی اقدار سکھانے کے لیے گھنٹوں تک پڑھایا جاتا ہے۔ قادر نے بچوں کے لیے رسہ کشی سے لے کر بوری ریس تک کے روایتی کھیلوں کا بھی اہتمام کر رکھا ہے۔

قادر کے مطابق وہ مسجد کو بچوں کے لیے پسندیدہ مقام بنانا چاہتے ہیں۔ "میں جب چھوٹا تھا تو مسجد میں کھیلتا تھا، نماز پڑھتے بڑے بوڑھے ڈانٹ دیتے۔ اس سے مجھے بہت پریشانی ہوتی۔ میں اس ذہنیت کا خاتمہ چاہتا ہوں اور بچوں کے مسجد سے زیادہ جڑا ہوا دیکھنا چاہتا ہوں۔”

عموماً نمازی مسجدوں میں معمولی سا شور کرنے پر بھی بچوں کی سرزنش کرتے ہیں، اور مذہبی امور کی وزارت نے حال ہی میں ایک مہم شروع کی ہے جس میں مسجدوں میں آنے والے بچوں کے ساتھ اچھا سلوک کرنے کی ہدایت کی گئی۔

تبصرے
Loading...