کوروناوائرس کے مقابلے میں تدابیر اور احتیاطیں: 10 دن میں 30 فیصد تک آلودگی میں کمی

0 1,565

کورونا وائرس کی عالمی وباء کے بعد آبادی کے بڑے حصے کے گھر بیٹھ جانے اور ٹریفک کی کمی کی وجہ سے تازہ ترین ماحولیاتی اعداد و شمار کے مطابق استنبول کی آب و ہوا سانس لینے کے لیے انسان کے لیے بہتر ہو گئی ہے۔ استنبول ٹیکنیکل یونیورسٹی کے پروفیسر ڈاکٹر حسین طوروس کے مطابق، پچھلے 10 دنوں میں، استنبول کے آس پاس فضائی آلودگی جنوری 2020 سے اوسط کے مقابلے میں 30٪ کم ہوگئی ہے۔

طوروس کے مطابق، شہر کی پارٹیکولیٹ میٹر ویلیو 30 مائیکروگرام پر آ گئی ہے جو کہ اس سے 50 مائیکروگرام تک رہتی تھی۔ کچھ ہی دنوں میں، میٹروپولیٹن شہر کی ہوا کا معیار اس قدر بہتر ہوا ہے کہ اسے اس کی سابقہ "درمیانے درجے” کی درجہ بندی کے مقابلے میں باضابطہ طور پر "اچھا” قرار دیا جا سکتا ہے۔

طوروس نے کہا کہ آلودگی کی تین بنیادی وجوہات ہیں: "پہلی نقل و حمل ، دوسری صنعتی سہولیات اور تیسری حرارتی نظام سے پیدا ہونے والی آلودگی ہے۔ لہذا، جب یہ تینوں عوامل کم ہوجاتے ہیں تو ہوا کے معیار میں حیران کن بہتری آتی ہے”۔

انہوں نے غازی عثمان پاشا، باشکشہر، ایسین یورت اور کرتال کو سب سے زیادہ آلودگی والے اضلاع کے طور پر درج کیا، جبکہ سارعیر، شیلے اور بیکوز شہر کا صاف ستھرا حصہ سمجھا جاتا ہے۔

ترکی نے کورونا وائرس کے مزید پھیلاؤ سے نمٹنے کے لئے متعدد اقدامات اٹھائے ہیں، جن میں تازہ ترین 65 سال اور اس سے زیادہ عمر کے شہریوں کے ساتھ ساتھ دائمی بیماریوں میں مبتلا افراد کے لئے کرفیو ہے۔

تبصرے
Loading...