ایک عظیم اور طاقتوَر ترکی کا ہدف حاصل کرنے کے لیے بحیثیتِ ادارہ خاندان کا استحکام بنیادی شرط ہے، صدر ایردوان

0 514

معذور افراد اور ریاست کے زیرِ کفالت نوجوانوں کو سرکاری ملازمتیں دینے کے حوالے سے ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے صدر رجب طیب ایردوان نے کہا کہ "خاندان بحیثیتِ ادارہ ہمارے قومی وجود میں ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت رکھتا ہے۔ ہمارے لیے ایک عظیم اور طاقتور ترکی کا ہدف حاصل کرنے کی بنیادی شرط یہی ہے کہ بحیثیتِ ادارہ خاندان بدستور مضبوط رہے۔ ٹوٹ پھوٹ کے شکار خاندان رکھنے والے معاشرے کا زوال ناگزیر ہے، بالکل اسی طرح جیسے ریڑھ کی ہڈی ٹوٹ جائے تو جسم کا شکست و ریخت سے دوچار ہونا یقینی ہے۔”

صدر رجب طیب ایردوان نے انقرہ کے باش تپہ پیپلز کنونشن اینڈ کلچرل سینٹر میں معذوری کے شکار افراد اور ریاست کے زیرِ کفالت موجود نوجوانوں کی سرکاری ملازمتوں کے حوالے سے ایک تقریب سے خطاب کیا۔

"ہم یقینی بنا رہے ہیں کہ ریاست کی شفقت سے کوئی محروم نہ رہے”

صدر ایردوان نے کہا کہ "ہم خصوصی اہتمام کرتے ہیں کہ کوئی بھی شخص ریاست کی شفقت سے محروم نہ رہ جائے۔ ہم نے سالانہ بجٹ میں سماجی مدد کے لیے مختص رقم کو 2 ارب سے بڑھا کر 55 ارب لیرا کر دیا ہے۔ گزشتہ 17 سالوں میں ترکی بھر میں سماجی مدد کے ضمن میں 339 ارب لیرا خرچ کیے گئے۔ قومی آمدنی کے تناسب سے سماجی مدد 0.3 سے بڑھا کر 1.2 فیصد کر دی گئی۔ صدر ایردان نے کہا کہ "ہم اپنے تمام شہریوں کو اُس دولت سے فائدہ اٹھانے کا موقع دیں گے جو ترکی میں پیدا ہوتی اور بڑھتی ہے۔”

"خاندان بحیثیتِ ادارہ ہمارے قومی وجود میں ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت رکھتا ہے”

خاندان کو قومی وجود میں ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت قرار دیتے ہوئے صدر ایردوان نے زور دیا کہ "ہمارے لیے ایک عظیم اور طاقتور ترکی کا ہدف حاصل کرنے کی بنیادی شرط یہی ہے کہ بحیثیتِ ادارہ خاندان بدستور مضبوط رہے۔ ٹوٹ پھوٹ کے شکار خاندان رکھنے والے معاشرے کا زوال ناگزیر ہے، بالکل اسی طرح جیسے ریڑھ کی ہڈی ٹوٹ جائے تو جسم کا شکست و ریخت سے دوچار ہونا یقینی ہے۔ یہ وہ سنگین ترین خطرہ ہے جس کا آج کے مغربی معاشرے کو سامنا ہے۔”

"ترکی بحیرۂ روم میں اپنے حقوق اور مفادات کا تحفظ کرتا رہے گا”

لیبیا کے ساتھ ترکی کے معاہدے کے موضوع پر بات کرتے ہوئے صدر ایردوان نے زور دیا کہ ترکی عراق، شام اور بحیرۂ روم میں اپنے حقوق اور مفادات کا تحفظ کرتا رہے گا۔ یہ بتاتے ہوئے کہ لیبیا میں ترکی دستوں کی تعیناتی لیبیا کی حکومت کے مطالبے پر ہو رہی ہے، صدر ایردوان نے کہا کہ "بحیرۂ روم میں ترکی کو اس کے ساحلوں تک محدود رکھنے کا منصوبہ بنایا گیا۔ لیکن ہم نے ترک جمہوریہ شمالی قبرص اور اس کے بعد لیبیا کے ساتھ معاہدوں پر دستخط کرکے اس منصوبے کو ناکام بنا دیا ہے۔”

تبصرے
Loading...