ہماری عراق پالیسی عراق کی سیاسی وحدت اور علاقائی سالمیت کے تحفظ پر مبنی ہے، صدر ایردوان

0 735

وزیر اعظم عراق عادل عبد المہدی کے ساتھ مشترکہ پریس کانفرنس میں صدر رجب طیب ایردوان نے کہا کہ "ہماری عراق پالیسی عراق کی سیاسی وحدت اور علاقائی سالمیت کے تحفظ پر مبنی ہے جو اس کے استحکام اور تحفظ کو یقینی بنا رہی ہے۔ تمام نسلی و مذہبی گروہ، جو عراق کی دولت ہیں، ترک عوام کے دوست اور بھائی ہیں۔”

صدر رجب طیب ایردوان نے وزیر اعظم عراق عادل عبد المہدی سے ایوانِ صدر میں ملاقات کے بعد ایک مشترکہ پریس کانفرنس کی

"دوطرفہ تعلقات کے تمام پہلوؤں کا جائزہ”

داعش کے خلاف کامیابیوں پر عراقی افواج کو سراہتے ہوئے صدر ایردوان نے عراق کے شہید فوجیوں کے لیے مغفرت اور زخمیوں کی جلد صحت یابی کی دعا کی۔

"ہم نے دوطرفہ تعلقات اور علاقائی پیشرفت کے تمام پہلوؤں کا جائزہ لیا،” صدر ایردوان نے کہا۔ "ہماری عراق پالیسی عراق کی سیاسی وحدت اور علاقائی سالمیت پر مبنی ہے، جو اس کے استحکام اور تحفظ کو یقینی بنا رہی ہے۔ تمام نسلی و مذہبی گروہ، جو عراق کی اصل دولت ہیں، ترک عوام کے دوست اور بھائی ہیں۔”

20 ارب ڈالرز کے طے شدہ دو طرفہ تجارتی ہدف کی طرف اشارہ کرتے ہوئے صدر ایردوان نے کہا کہ "گو کہ ہم اس ہدف کو کافی نہیں سمجھتے۔ اس لیے ہم اعلیٰ سطحی اسٹریٹجک کونسل کے اجلاس میں، کہ جو عراق میں ہوگا، اپنے اہداف کو بہتر بنائیں گے اور کہیں بڑا ہدف مقرر کریں گے۔”

ترک اور عراقی کاروباری شخصیات کے سامنے موجود رکاوٹوں کو ہٹانے کی اہمیت پر بات کرتے ہوئے صدر ایردوان نے کہا کہ یہ بات واضح تھی کہ وہ عراق کی تعمیر نو کو ترجیح دیتے ہیں، ان علاقوں کی ترقی جو داعش کے قبضے سے سب سے زیادہ متاثر ہوئے، اور ایک تجارتی کوریڈور کا قیام جو عراق کے جنوبی علاقوں تک پھیلا ہوا ہو۔”

"ہم عراق میں اپنے موجودہ قونصل خانوں کو دوبارہ بحال کرکے اور مرحلہ وار نئے قونصل خانے کھول کر عراق کے تمام خطوں کے ساتھ اپنے تعلقات کو بڑھانا چاہیں گے۔”

"کرکوک-جیہان تیل پائپ لائن لازماً جلد از جلد کھلنی چاہیے”

توانائی کے شعبے میں ترکی اور عراق کے درمیان زبردست صلاحیتوں پر زور دیتے ہوئے صدر ایردوان نے کہا کہ ” بجلی کے بارے میں میں نے وزیر اعظم کو کہا کہ ہم عراق کو اس کی قلت پوری کرنے میں مدد دے سکتے ہیں۔ ہم نے کرکوک-جیہان تیل پائپ لائن کے دوبارہ آغاز کی اہمیت پر زور دیا کہ جو داعش کی جانب سے تباہ کی گئی تھی۔ ہمارا خطہ گزشتہ چند سالوں سے قحط سالی اور اس سال زیادہ بارشوں کی وجہ سے سیلاب سے متاثر ہے۔ ہم نے گزشتہ سال کی خشک سالی میں عراق کو جتنی مدد دی جا سکتی تھی، فراہم کی۔ موسمیاتی تبدیلی اور بڑھتی ہوئی ضروریات کے ہوتے ہوئے تمام ممالک کے لیے سائنس اور ٹیکنالوجی کا بہترین استعمال لازمی ہے۔”

آب پاشی، آبی فضلے کے انتظام اور ماحولیاتی طریق کار کے لیے ٹیکنالوجی کے حوالے سے ترکی کے تجربے کو اجاگر کرتے ہوئے صدر ایردوان نے کہا کہ انہوں نے گفتگو کے دوران ایکشن پلان بھی پر تبادلہ خیال کیا، جو خصوصی نمائندے پروفیسر ویسل ایروغلو کی زیر قیادت 50 اراکین کے ورکنگ گروپ کی جانب سے بنایا گیا ہے، جس کا ہدف ترکی کے تجربات عراق کے سامنے پیش کرنا ہے۔

"عسکری تعاون اور ترکی اور عراق کے درمیان اعتماد کا معاہدہ مناسب ہوگا”

"اپنے مذاکرات کے دوران ہم نے داعش، PKK اور FETO دہشت گرد تنظیموں کے خلاف اپنی جدوجہد ثابت قدمی کے ساتھ جاری رکھنے کا فیصلہ کیا اور یہ کہ ترکی اور عراق کے درمیان عسکری تعاون اور اعتماد کا معاہدہ بہت مناسب ہوگا،” صدر ایردوان نے کہا۔

شام کی علاقائی سالمیت کے تحفظ پر بھی ترکی اور عراق کے متفق ہونے اور اس مسئلے کے ایک دیرپا سیاسی حل کی تلاش پر زور دیتے صدر ایردوان نے کہا کہ "اس ضمن میں ہم آستانہ پلیٹ فارم میں بطور مبصر عراق کی شمولیت کا خیرمقدم کرتے ہیں۔”

عراق کے وزیر اعظم عبد المہدی: "ہم مل کر ایسے اقدامات اٹھا سکتے ہیں جو دونوں ممالک اور خطوں کے لیے فائدہ مند ہوں گے”

عراق کے وزیر اعظم عادل عبد المہدی نے کہا کہ "ہم مل جل کر ایسے اقدامات اٹھا سکتے ہیں جو دونوں ملکوں اور خطے کے لیے فائدہ مند ہوں۔ ترکی مشکل ترین ایام میں بھی ہمیشہ عراق کے ساتھ کھڑا رہا ہے اور اب بھی ہمارے ساتھ ہے۔ ہمارے ترک بھائیوں نے اپنی جانوں کی قربانیاں دیں۔ ہمیں معلوم ہے کہ ترک محنت کش اور ڈرائیورز نے عراق میں اپنی جانیں دیں۔ پھر یہ کبھی نہیں بھلایا جا سکتا کہ ترکی نے عراقی مہاجرین کا کشادہ بانہوں سے خیر مقدم کیا۔”

"ہم عراق کی سرزمین سے ترکی کے خلاف کسی بھی سکیورٹی خدشے کو قبول نہیں کریں۔ ہم مل جل کر اس سلسلے میں کام کریں گے۔ ہم دو برادر ملکوں کے مشترکہ مفادات کے مطابق کام جاری رکھیں گے۔ عراق کو درپیش کوئی بھی خطرہ ترکی کے لیے بھی خطرہ ہوگا۔ ہمیں مل جل کر دشمن کا مقابلہ کرنا ہے۔” وزیر اعظم عبد المہدی نے کہا۔

پریس کانفرنس سے قبل صدر ایردوان نے عراقی وزیر اعظم عبد المہدی کے اعزاز میں دعوتِ افطار کی۔

تبصرے
Loading...