مختلف ترک رہنماؤں نے بلدیاتی انتخابات میں ووٹ کاسٹ کر دیا

0 850

اتوار کے روز ہونے والے بلدیاتی انتخآبات میں مختلف ترک رہنماؤں میں اپنے حق رائے کا استعمال کیا۔ اکثریت نے انتخابات کے لیے نیک شگون کا اظہار کیا اور کہا کہ امید ہے کہ بلدیاتی انتخابات عام لوگوں کے لیے خوشیاں لائیں گے۔

ترک صدر رجب طیب ایردوان نے استنبول کے ایشیا طرف کے علاقے اسکودار میں سفات چیبی ایلیمنٹری اسکول میں اپنا ووٹ کاسٹ کیا۔ اسی اسکول میں خاتون اول امینہ ایردوان، وزیر خزانہ بیرات البیراک اور ان کی اہلیہ اسرا البیراک نے بھی ایردوان کے ہمراہ حق رائے استعمال کیا۔

اس موقع پر انہوں نے میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا کہ انہیں امید ہے کہ ہم ایک بڑے ٹرن آؤٹ کے ساتھ شام کو بیلٹ باکس پلٹیں گے۔

سابق وزیراعظم اور استنبول مئیر کے امیدوار بن علی یلدرم نے اپنا ووٹ توزلا میں کاسٹ کیا۔ ان کے ہمراہ ان کے نواسے اور اہلیہ بھی تھیں۔

اپوزیشن سیکولر جمہوریت عوام پارٹی (CHP) کے استنبول مئیر کے امیدوار اکرام امام اولو نے اپنا ووٹ استنبول کے بیلک دوزو ڈسٹرک میں کاسٹ کیا۔ ان کی اہلیہ دیلک امام اولو نے بھی ان کے ہمراہ ووٹ کاسٹ کیا۔

آق پارٹی کے انقرہ مئیر کے امیدوار محمدت اوزحا سیکی نے دارالحکومت میں اپنا ووٹ کاسٹ کیا۔

اتوار، 31 مارچ ترکی میں بلدیاتی انتخابات کے لیے پولنگ ہو رہی ہے۔ لاکھوں ترک شہری اپنے شہروں کے مئیر اور مقامی ذمہ داروں کا انتخاب کریں گے۔ ترک صدر رجب طیب ایردوان کی آق پارٹی جو 2002ء سے اب تک ملک کی سب سے طاقت ور پارٹی کے طور موجود رہی ہے۔ حالیہ انتخابات میں گذشتہ سال 2018ء کا ترک لیرا بحران ابھی تک ترک مارکیٹ پر اثرات قائم کئے ہوئے ہیں۔ اس لیے استنبول، انقرہ اور ازمیر جیسے بڑے شہروں میں بڑی انتخابی دنگل کا امکان ہے۔ استنبول اور انقرہ میں آق پارٹی جبکہ ازمیر میں سیکولر جمہوریت عوام پارٹی (CHP) برسراقتدار رہیں ہیں۔ ترک صدر ایردوان نے جاندار انتخابی مہم کے ساتھ اگرچہ انتخابی دنگل کو مخالفین کے لیے مشکل بنا دیا ہے لیکن دلچسپ مقابلے کے امکانات ہیں۔ بلدیاتی انتخابات میں اکثریت حاصل کرنے کے بعد ترک صدر ایردوان کی صدارت، پارلیمنٹ اور مقامی سیاست میں طاقت بڑھ جائے گی۔

تبصرے
Loading...