صدر ایردوان نے نیو یارک میں ترکیوی سینٹر کا افتتاح کر دیا

0 36

اس نمایاں عمارت کو ایک "شاہکار” قرار دیتے ہوئے ترک صدر رجب طیب ایردوان نے نیو یارک شہر میں ترکیوی سینٹر کا باضابطہ افتتاح کر دیا ہے۔

افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے صدر ایردوان نے کہا کہ ترکیوی سینٹر ترک جمہوریہ کے 100 سال مکمل ہونے سے قبل عالمی منظرنامے پر ترکی کے مقام کا عکاس ہے۔ "ہم اس نئے سینٹر پر فخر محسوس کرتے ہیں۔ اس لیے کیونکہ ہم نیو یارک میں اپنا عکس پیش کر رہے ہیں، اپنے تاریخی اور روایتی طرزِ تعمیر کی ایک مثال سامنے لائے ہیں۔”

صدر نے کہا کہ "میں اس تاریخی موقع پر یہاں موجود ہر ہر شخص کا خاص شکریہ ادا کرنا چاہتا ہوں۔” انہوں نے مزید کہا کہ ترکیوی سینٹر اقوامِ متحدہ پر ترکی کے اعتماد کی علامت بھی ہے، اور ساتھ ہی جامعیت، انصاف اور امن کی بھی۔

1977ء میں امریکی ٹیکنالوجی ادارے آئی بی ایم سے خریدی گئی یہ عمارت اقوام متحدہ میں ترکی کے مستقل مشن کی حیثیت سے کام کر رہی تھی اور 2013ء تک قونصل خانے کی ذمہ داریاں بھی یہیں سے انجام دی جاتی تھیں۔ جس کے بعد اس کی تعمیر نو کا آغاز ہوا۔

صدر نے کہا کہ یہ عمارت آئندہ دہائیوں تک ترکی کی سفارتی کامیابی کی ایک علامت بنی رہے گی۔

نیو یارک کے قلب مین ہٹن میں منعقدہ اس عمارت کے افتتاح کے موقع پر اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل انتونیو گوتیریس بھی موجود تھے۔ جبکہ ترک جمہوریہ شمالی قبرص کے صدر ارسین تاتار، کوسوو کے صدر ویوسا عثمانی-صدریو اور لتھووینیا کے صدر گتاناس نوسیدا کے علاوہ کئی غیر ملکی سفیر بھی شریک تھے۔

نئے ترکیوی سینٹر کے افتتاح کی تقریب میں شرکت اپنے لیے باعث مسرت قرار دیتے ہوئے گوتیریس نے مہاجرین کی میزبانی اور ان کی امداد کے غیر معمولی کام پر ترکی کو سراہا۔

یہ 36 منزلہ فلک شگاف عمارت اقوام متحدہ کے لیے ترکی کے مستقل مشن کے لیے دفتر کے ساتھ ساتھ نیو یارک میں ترک قونصل خانے کا کردار بھی ادا کرے گی۔

اس عمارت میں ترکی طرز تعمیر، بالخصوص ایک ہزار سال قدیم سلجوق سلطنت کی علامات پائی جاتی ہیں، جو گلِ لالہ (ٹیولپ) کی صورت میں فضا میں بلند ہوتی ہے اور مین ہٹن کے مرکزی علاقے میں ہر جگء سے نظر آ سکتی ہے۔

اسے اس طرح تعمیر کیا گیا ہے کہ یہ دنیا کے اہم ترین شہروں میں سے ایک نیو یارک کی اسکائی لائن میں اہم اضافہ کرے اور ساتھ ہی ترک ثقافت، تاریخ اور تنوّع کو نمایاں کرے۔

تبصرے
Loading...