مسئلہ شام کے حوالے سےترکی و روس کے مابین مفاہمت کی یادداشت پر دستخط

0 225

صدر رجب طیب ایردوان نے روس کے شہر سوچی کے ایک روزہ دورے میں روسی صدر ولادیمر پوتن سے ملاقات کی۔

اس موقع پر تنازع شام کے حوالے سے دونوں ممالک کے مابین مفاہمت کی ایک یادداشت پر دستخط ہوئے کہ جن میں مندرجہ ذیل نکات پر اتفاق کیا گیا:

1. فریقین نے شام کی سیاسی اکائی اور علاقائی سالمیت اور ترکی کی قومی سالمیت کے تحفظ سے اپنی وابستگی کا اعادہ کیا

2. انہوں نے ہر قسم کی دہشت گردی کا مقابلہ کرنے اور شامی علاقے میں علیحدگی پسند ایجنڈوں کو تہہ و بالا کرنے پر زور دیا

3. اس صورت حال میں آپریشن چشمہ امن سے قائم ہونے والی حالت کو برقرار رکھا جائے گا، جس میں تل ابیض اور راس العین کا احاطہ کرتے ہوئے 32 کلومیٹر گہرائی تک کا علاقہ شامل ہے

4. فریقین نے ادانہ معاہدے کی اہمیت کی توثیق کی۔ وفاقِ روس موجودہ حالات میں ادانہ معاہدے کے نفاذ میں سہولت کاری کرے گا

5. 23 اکتوبر 2019ء کو دوپہر 12 بجے سے روس کی فوجی پولیس اور شامی سرحدی محافظین آپریشن چشمہ امن کے علاقوں سے باہر رہتے ہوئے ترک-شام سرحد پر واقع شامی علاقے میں داخل ہوں گے، تاکہ ترک شامی سرحد کے 30 کلومیٹرز اندر تک YPG عناصر اور اُن کے ہتھیاروں کے خاتمے میں سہولت کاری دے سکیں ، یہ کارروائی 150 گھنٹوں میں مکمل ہو جائے گی۔ تب آپریشن چشمہ امن کے مشرقی اور مغربی علاقوں میں ، قامشلی کو چھوڑ کر، 10 کلومیٹر اندر کے علاقے تک مشترکہ روس-ترک گشت شروع ہو جائے گا

6. منبج اور تل رفعت سے تمام YPG عناصر اور اُن کے ہتھیار نکال دیے جائیں گے

7. فریقین دہشت گرد عناصر کے نفوذ کو روکنے کے لیے ضروری اقدامات اٹھائیں گے

8. مہاجرین کی محفوظ اور رضاکارانہ واپسی میں آسانی پیدا کرنے کے لیے مشترکہ کوششیں شروع کی جائیں گی

9. اس یادداشت کے عملی نفاذ کی نگرانی اور اس میں تعاون کے لیے نگرانی و تصدیق کا ایک مشترکہ میکانیہ تیار کیا جائے گا

10. فریقین آستانہ طریقِ کار کے مطابق شامی تنازع کے دیرپا سیاسی حل کی تلاش جاری رکھیں گے اور آئینی کمیٹی کی سرگرمی میں مدد دیں گے

تبصرے
Loading...