سیاحتی شہر انطالیہ میں پہلی بار ڈیڑھ کروڑ سیاحوں کی آمد

0 123

سیاحتی مقام کی حیثیت سے دنیا بھر میں معروف ترک شہر انطالیہ نے اس سال ڈیڑھ کروڑ سیاحوں کی میزبانی کرکے نیا ریکارڈ قائم کر لیا ہے۔

سرکاری اعداد و شمار کے مطابق تاریخی مقامات، قدرتی مناظر اور پُر سکون تعطیلات کے لیے مقبول انطالیہ میں سال 2019ء کے دوران ایک کروڑ 55 لاکھ 70 ہزار سیاح آ چکے ہیں، یوں 193 ممالک سے آنے والے سیاحوں نے ایک نیا ریکارڈ قائم کیا۔

ترکی کا "سیاحتی دارالحکومت” سمجھا جانے والا انطالیہ ہمیشہ سے سیاحوں مرکزِ نگاہ رہا ہے کہ جہاں بحیرۂ روم کے خوبصورت ساحلوں کے ساتھ ساتھ خطے کی عظیم تاریخ بھی دلچسپی کی وجہ بنتی ہے کیونکہ یہ علاقہ کئی تہذیبوں کا مسکن رہا ہے۔

یکم جنوری سے لے کر 31 اکتوبر تک آنے والے سیاحوں میں روس سے تعلق رکھنے والے سیاح سب سے زیادہ رہے کہ جن کی تعداد 55 لاکھ رہی۔ یہ پچھلے سال کے مقابلے میں 16 فیصد زیادہ تعداد ہے۔

جرمن 25 لاکھ کے ساتھ دوسرے نمبر پر رہے جن کی تعداد میں بھی پچھلے سال کے مقابلے میں 16 فیصد اضافہ ہوا۔

یوکرین 8 لاکھ سیاحوں کے ساتھ تیسرے نمبر پر رہا جبکہ برطانوی سیاحوں کی تعداد بڑھ کر 6 لاکھ 86 ہزار تک جا پہنچی ہے کہ جو فہرست میں چوتھے نمبر پر رہے۔

پولینڈ سے آنے والے سیاحوں کی تعداد 5 لاکھ 35 ہزار رہی جبکہ نیدرلینڈز 4 لاکھ 24 ہزار اور رومانیہ تقریباً ڈھائی لاکھ سیاحوں کے ساتھ ان کے پیچھے رہے۔

ترکی میں سیاحت کا شعبہ بہت تیزی سے ترقی کر رہا ہے اور 2018ء کے مقابلے میں اس میں مزید تیزی آ گئی ہے۔

وزارت ثقافت و سیاحت نے اکتوبر کے اواخر میں اعلان کیا تھا کہ ترکی سال کے پہلے 10 ماہ میں 3 کروڑ 64 لاکھ سیاحوں کی میزبانی کر چکا ہے جو پچھلے سال کے مقابلے میں 14.5 فیصد زیادہ ہیں اور انطالیہ نے اس میں اہم کردار ادا کیا ہے۔

اس شہر نے 2018ء میں ایک کروڑ 36 لاکھ سیاحوں کی میزبانی کی تھی اور اس وقت ایک کروڑ 60 لاکھ سیاحوں کے ہدف کی جانب تیزی سے گامزن ہے۔

2000ء کی دہائی سے ہی غیر ملکی سیاحوں کی آمد میں سالانہ مسلسل دہرے ہندسے کا اضافہ دیکھنے والے انطالیہ کو 2016ء اور 2017ء میں دو مشکل سالوں کا سامنا رہا۔

خاص طور پر 2016ء میں کہ جب شہر میں آنے والے سیاحوں گی تعددا تقریباً آدھی ہوگئی اور صرف 65 لاکھ سیاح شہر مین آئے البتہ 2017ء سے سیاحوں کی آمد بحال ہونا شروع ہو گئی اور اب نئي بلندیوں کی جانب گامزن ہے۔

تبصرے
Loading...