پابندیوں میں نرمی کے بعد سماجی فاصلہ ایک چیلنج

0 211

کروناوائرس کی وباء میں کمی آنے کے بعد ترکی کے سب سے بڑے شہروں کے مابین سفر کی اجازت اور کاروباری اداروں پر عائد پابندیوں میں نرمی کا خیر مقدم کیا گیا ہے۔ ملک بھر میں زندگی کی گہماگہمی لوٹ رہی ہے اور پبلک ٹرانسپورٹ روایتی رش کے ساتھ شروع ہو گئی ہے۔ گو کہ عوام کی اکثریت فیس ماسک پہن کر روزمرہ امور انجام دے رہی ہے لیکن سماجی فاصلہ برقرار رکھنا اب بھی ایک چیلنج ہے۔

خاص طور پر استنبول میں حالات خراب ہیں جو ملک کا مالیاتی مرکز اور سب سے بڑا شہر ہے۔ یہاں رش کے اوقات بسیں، میٹرو بسیں اور منی بسیں مسافروں سے بھری ہوئی ہیں۔ گو کہ ماس ٹرانزٹ میں ایک خاص حد سے زیادہ مسافر بٹھانے کی گنجائش نہیں تاکہ ممکنہ حد تک سماجی فاصلہ برقرار رہے، لیکن پیر اور منگل کے دن ان بسوں میں ویسا ہی رش نظر آیا جیسا وباء سے پہلے ہوا تھا۔

ماہرین کے مطابق ماسک پہننا اور کم از کم ڈیڑھ میٹر (5 فٹ) کا سماجی فاصلہ اختیار کرنا انفیکشن سے بچنے کے لیے ضروری ہے۔ لیکن پھر بھی بڑے شہروں میں پبلک ٹرانسپورٹ میں ایسا تقریباً ناممکن ہے۔ مسافروں کے لیے ایک اور چیلنج ایئر کنڈیشننگ نہ ہونا ہے۔ مسافروں کو بڑھتی ہوئی گرمی کے باوجود باہر کی تازہ ہوا پر انحصار کرنا پڑ رہا ہے۔

کاروباری اداروں کے کھلنے اور پابندیوں کے نرم ہونے کے دوسرے روز فیری اور ٹرام سروس میں نسبتاً کم رش نظر آ رہا ہے البتہ شہر کی میٹرو بس سروس پہلے کی طرح کھچاکھچ بھری ہوئی ہے۔ مسافر وقت پر اپنی منزل تک پہنچنے کے لیے سماجی فاصلے کو نظر انداز کرتے دکھائی دیے۔ پیر اور منگل کے دن رش کے اوقات میں ٹریفک جام بھی نظر آیا۔

ترکی میں پیر کے روز COVID-19 سے 23 مزید افراد ہلاک ہوئے جبکہ 826 نئے کیس سامنے آئے۔ گزشتہ 24 گھنٹوں میں 974 مریض صحت یاب ہوئے جبکہ مریضوں کی کُل تعداد 1,30,000 تک جا پہنچی۔ ملک میں اب تک 20 لاکھ سے زیادہ ٹیسٹ ہو چکے ہیں جبکہ پچھلے 24 گھنٹوں میں 31,525 ٹیسٹ ہو چکے ہیں۔

وزارتِ صحت نے عوام سے ہاتھ صاف کرنے، ماسک پہننے اور سماجی فاصلہ اختیار کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

تبصرے
Loading...