‏TANAP‎ یورپ کو توانائی کی فراہمی کی ضمانت کے لیے ترکی کے کلیدی کردار کو ظاہر کرتی ہے

0 79

ٹرانس اناطولین نیچرل گیس پائپ لائن (TANAP) آذربائیجان سے بذریعہ ترکی اپنے یورپی حصے ٹرانس ایڈریاٹک پائپ لائن (TAP) کے پہلے پڑاؤ یونان تک قدرتی گیس فراہم کرنے والی پہلی گیس پائپ لائن بن کر ایک تاریخ رقم کر چکی ہے۔

"آج ہم ترکی، آذربائیجان اور جارجیا کی مشترکہ کوششوں سے ساڑھے سات سال طویل ایک مشکل مرحلے کی کامیاب تکمیل پر فخر محسوس کر رہے ہیں،” صدر رجب طیب ایردوان نے سرحدی شہر ادرنہ میں TANAP-یورپ کنکشن کی افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا۔

جون 2018ء میں شروع ہونے والے TANAP کو کثیر القومی جنوبی گیس راہ داری (SGC) منصوبے کی ریڑھ کی ہڈی قرار دیتے ہوئے صدر ایردوان نے منصوبے کی تکمیل اور شریک ممالک کے باہمی تعاون کو سراہا کہ جو راستے میں کئی رکاوٹیں آنے کے باوجود قائم و دائم رہا۔

توانائی کی "شاہراہِ ریشم” کہلانے والے TANAP اور TAP دونوں 8.5 ارب ڈالرز کی جنوبی گیس راہ داری کا حصہ ہیں جو ایک کثیر القومی قدرتی گیس پائپ لائن منصوبہ ہے جسے یورپی کمیشن کی حمایت اور عالمی بینک، یورپی بینک فار ری کنسٹرکشن اینڈ ڈیولپمنٹ (EBRD) اور ایشیائی انفرا اسٹرکچر انوسٹمنٹ بینک (AIIB) کا سرمایہ حاصل ہے۔

"ہم جو بڑے قدرتی وسائل رکھتے ہیں، اب وہ خطے کی دیگر اقوام کو بھی دیے جا سکتے ہیں،” صدر ایردوان نے مزید کہا کہ "TANAP ترکی کی توانائی سلامتی کی ہی ضمانت نہیں دیتی بلکہ یورپی ممالک کو توانائی رسد کی ضمانت بھی بڑھاتی ہے۔”

3,500 کلومیٹرز طویل SGC تین حصوں پر مشتمل ہے: جنوبی قفقاز پائپ لائن، TANAP اور TAP۔ منصوبے کا ترک حصہ TANAP سرحد تک پہنچنے سے پہلے تقریباً600 دیہات سے گزرتا ہے، جہاں سے یہ یورپی مارکیٹوں کو توانائی فراہم کرے گا۔ اب تک TANAP تقریباً 3.4 ارب مکعب میٹرز قدرتی گیس ترک نیٹ ورک کو دے چکا ہے۔

SGC، پٹرولیم پائپ لائن کارپوریشن (BOTAS)، BP اور SOCAR ترکیTANAP میں بالترتیب 51 فیصد، 30 فیصد، 12 فیصد اور 7 فیصد حصہ رکھتے ہیں۔

4.5 ارب یورو (5.1 ارب ڈالرز) کی TAP پائپ لائن اٹلی جاتے ہوئے بحیرۂ ایڈریاٹک میں داخل ہونے سے پہلے یونان اور البانیہ سے گزرے گی۔ اگلے سال کی دوسری شش ماہی میں آذربائیجانی گیس کا یورپی مارکیٹوں تک پہنچنا متوقع ہے اور اس وقت منصوبے کا 90 فیصد حصہ مکمل ہو چکا ہے۔

1,850 کلومیٹرز طویل TANAP شاہ دینز-2 فیلڈ اور جنوبی بحیرۂ قزوین کی دیگر فیلڈز سے نکلنے والی آذربائیجانی گیس کو ترک، جارجیائی اور یورپی مارکیٹ تک لاتی ہے۔ ترکی 6 ارب مکعب میٹر گیس جبکہ اضافی 10 ارب مکعب میٹر یورپی گیس نیٹ ورک میں منتقل کی جائے گی۔

TANAP: ایک توانائی منصوبہ امن کے لیے

آذربائیجان کے صدر الہام علیف نے اپنے خطاب میں کہا کہ TANAP خطے میں امن اور خوشحالی لائے گی۔ "میرا ماننا ہے کہ TANAP لمبے عرصے تک چلے گی اور ترک، آذربائیجانی اور خطے کے عوام کے لیے امن و خوشحالی لائے گی،” علیف نے کہا۔

بین الاقوامی سطح پر توانائی رسد کی ضمانت کی اہمیت پر زور دیتے ہوئے آذربائیجانی صدر نے اشارہ کیا کہ TANAP ایک مصالحتی کارگزاری رکھتی ہے، جو یکساں توانائی اہداف رکھنے والی اقوام کے مابین تعلق کی حوصلہ افزائی کر رہی ہے۔

"ہم TANAP اور SGC کو محض توانائی انفرا اسٹرکچر کے منصوبوں کے طور پر نہیں دیکھ سکتے۔ ان منصوبوں نے دیگر تعاون، میکانزم اور پلیٹ فارموں کی راہ ہموار کی ہے۔ ہمارے توانائی منصوبے پہلے ہی مزید منصوبوں کو جنم دے چکے ہیں جو علاقائی ترقی اور استحکام میں حصہ ڈالتے ہیں۔” علیف نے کہا۔

آذربائیجانی صدر نے ترکی اور آذربائیجان کے مابین مشترکہ طور پر مکمل ہونے والے دیگر اہم توانائی منصوبوں کی جانب بھی توجہ دلائی۔ ترکی اور عالمی مارکیٹوں کو آذری تیل کی فراہمی کے لیے باکو-طفلس-جیہان (BTC) آئل پائپ لائن کی بات کرتے ہوئے علیف نے عالمی خریداروں کی رسد ضمانت کے لیے توانائی منصوبے کی اہمیت پر زور دیا۔

2006ء سے کام کرنے والی BTC خطے میں دیگر ممالک کے خام تیل کے علاوہ 450 ملین ٹن آذری تیل بھی فراہم کر چکی ہے۔ اس کو واضح کرتے ہوئے کہ BTC کس طرح دیگر سپلائرز کے لیے دروازے کھولنے کا کام کرتی ہے، انہوں نے کہا کہ 27 ملین ٹن ترکمانستان تیل BTC کے ذریعے عالمی مارکیٹوں کو برآمد کیا جا چکا ہے۔ جبکہ 12 ملین ٹن قازق تیل BTC کے ذریعے جا چکا ہے، 7 ملین ٹن روسی خام تیل بھی اب تک عالمی مارکیٹوں تک پہنچ چکا ہے۔ "BTC دیگر تیل پیدا کرنے والوں کے لیے توانائی کے بنیادی ڈھانچے کا منصوبہ بن چکا ہے،” علیف نے کہا۔

مشرقی بحیرۂ روم میں تناؤ

مشرقی بحیرۂ روم کی صورت حال کے حوالے سے کہ جہاں تیل کی تلاش کے حقوق کے بارے میں تنازعات سامنے آئے ہیں، صدر ایردوان نے زور دیا کہ متعدد علاقائی عناصر خطے میں تیل و گیس کے ذخائر کی مناسب تقسیم کو یقینی بنانے کے لیے کام کرنے کے بجائے تناؤ کو ہوا دینے کی کوشش کر رہے تھے۔

"دھمکی آمیز گفتگو اور بلیک میل کرنے کی پالیسی سامنے آئی جبکہ وسائل کی منصفانہ تقسیم کے مواقع موجود ہیں۔ پھر بھی کوئی ملک بین الاقوامی قانون سے بالاتر نہیں ہے۔ ہمیں یہ سمجھنے کی ضرورت ہے کہ کوئی فریق کسی مسئلے کو اپنی قسمت سمجھ کر نتائج تک نہیں پہنچ سکتا،” ایردوان نے کہا۔

صدر نے مزید زور دیا کہ ترکی کبھی کسی بھی ریاست کو ترک عوام اور ترک قبرصی باشندوں کے حقوق غصب نہیں کرنے دے گا۔ انہوں نے دعویٰ کیا کہ وہ کسی بھی ایسی سازش کو ممکن نہیں ہونے دیں گے جو ترکی کو باہر کا راستہ دکھائے، کیونکہ ترکی مشرقی بحیرۂ روم میں سب سے طویل ساحلی سرحد رکھتا ہے۔

ترکی کے دو ڈرِلنگ بحری جہاز، فاتح اور یاوُز، دو دوسرے بحری جہازوں کے ساتھ، اِس وقت خطے میں تیل و گیس کے ذخائر کی تلاش کا کام کر رہے ہیں۔ "ہمارے ڈرلنگ آپریشنز امن و خوشحالی کا ذریعہ بنیں گے۔ اس لیے میں مشرقی بحیرۂ روم میں فریقین سے مطالبہ کرتا ہوں کہ وہ توانائی کے وسائل کو باہمی تعاون کا ذریعہ بنائیں، وجہ نزاع نہیں،” صدر ایردوان نے کہا۔

ترکی، ترک جمہوریہ شمالی قبرص کی ضامن ریاست کی حیثیت سے مشرقی بحیرۂ روم میں اس کے حقوق کا حامی ہے۔ یونانی قبرص نے یک طرفہ طور پر مشرقی بحیرۂ روم کے 13 مقامات کو اپنے خصوصی اقتصادی زون (EEZ) قرار دیا اور بین الاقوامی آئل اینڈ ڈرلنگ کمپنیوں کو اُن علاقوں میں کام کرنے کی اجازت دے دی کہ جہاں تیل و گیس کے وسیع ذخائر متوقع ہیں۔

البتہ ان علاقوں کی اکثریت ترک جمہوریہ شمالی قبرص کے EEZ قرار دیے گئے علاقوں سے متصادم ہے، یوں یونانی قبرص نے TRNC کے حصے کے وسائل پر قبضہ جمانے کی کوشش کی ہے۔ ترکی یونانی قبرص کی انتظامیہ سے مشرقی بحیرۂ روم میں یک طرفہ ڈرلنگ پر بارہا بات کر چکا ہے اور زور دیا ہے کہ TRNC بھی علاقے کے وسائل پر حق رکھتا ہے۔ یک طرفہ طور پر EEZ کا اعلان ترکی کے بر اعظمی کنارے کی خلاف ورزی کی گئی ہے، خاص طور پر بلاک 1، 4، 5، 6 اور 7 میں۔

ترکی کے لیے رسد ضمانت اب کوئی مسئلہ نہیں

"TANAP کا 1850 کلومیٹر طویل اناطولیائی سفر آج اپنے اختتام کو پہنچا اور اب گیس کا یورپی سفر شروع ہوتا ہے،” توانائی اور قدرتی وسائل کے وزیر فاتح دونمیز نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا۔

"اب ہم یورپ کو گیس کی فراہمی کے لیے تیار ہیں۔ اب یہ منصوبہ ہم اپنے یورپی دوستوں کے سپرد کرتے ہیں،” دونمیز نے مزید کہا۔ وزیر نے زور دیا کہ TANAP ترکی-آذربائیجان تعاون کی قوت کے ساتھ نئے ملک اور نئے لوگوں تک پہنچے گی۔ "TANAP نہ صرف ایک توانائی منصوبہ ہے بلکہ یہ کامیابی کی داستان بھی ہے۔ یہ منصوبہ نہ صرف ترکی بلکہ یورپی کی توانائی رسد کی ضمانت کے لیے بھی ضروری ہے،” وزیر نے مزید کہا کہ یہ ترکی اور یورپ دونوں کے توانائی مستقبل میں بڑا حصہ ڈالے گا۔

دونمیز نے زور دیا کہ TANAP کی بدولت ترکی اب توانائی کی فراہمی میں کوئی مسئلہ نہیں رکھتا، اور کہا کہ ترکی ایک توانائی مرکز بننے کے لیے مزید گیس سرمایہ کاریوں کی جانب دیکھے گا۔ انہوں نے زور دیا کہ ترکی سب کے لیے یکساں مفید پالیسی کا استعمال کرے گا اور اسی انرجی ڈپلومیسی کا کہ جس کا ہدف ہے علاقائی خوشحالی کو بڑھانا۔

آذربائیجانی گیس پہلی بار یورپ میں

TAP کی تکمیل کے بعد آذربائیجانی گیس براہ راست قزوین کے علاقے سے یورپی علاقوں تک پہنچے گی، وہ بھی تاریخ میں پہلی بار، SOCAR کے صدر اور TANAP چیئرمین آف دی بورڈ رووناگ عبدالائیف نے کہا۔ "یوں یورپ کے نئے گیس سپلائر بن کر ہم ترکی کے دوسرے سب سے بڑے سپلائر بننےکا ہدف رکھتے ہیں،” انہوں نے کہا۔

یورپی کمیشن کے اعداد و شمار کے ادارے یوروسٹیٹ کے مطابق روس سال کی پہلی شش ماہی میں یورپی یونین کے ممالک کو گیس فراہم کرنے والا سب سے بڑا ملک تھا، جو مجموعی گیس درآمدات کا 39.4 فیصد رکھتا ہے۔ خالص گیس درآمدات 2019ء کی دوسری سہ ماہی میں 109 bcm تھیں اور پہلی شش ماہی میں 210 bcm رہیں۔

یورپی گیس فراہم کنندگان میں ناروے 29.6 فیصد کے ساتھ دوسرے نمبر پر آیا جس کے بعد الجزائر 11 فیصد کا حصہ رکھتا ہے۔ سال کی پہلی شش ماہی میں قطر نے یورپی یونین کی کُل گیس درآمدات کا 7.2 فیصد اور نائیجیریا 4.1 فیصد گیس فراہم کی۔ ٹرینیڈاڈ اینڈ ٹوباگو اور لیبیا بالترتیب 3.4، 1.9 اور 1.4 فیصد حصہ رکھتے ہیں۔

یورپی خریداروں کی آذری گیس میں دلچسپی

TANAP جنرل مینیجر سالتوک دوزیول نے افتتاحی تقریب میں صحافیوں کو بتایا کہ نو خریدار اِس پائپ لائن سے آنے والی گیس خریدنے کے لیے تیار ہیں۔

"ہم آذربائیجان کی شاہ دینز-2 فیلڈ سے نکلنے والی قدرتی گیس کی 3,500 کلومیٹر طویل پائپ لائن کے ذریعے یورپی مارکیٹوں کو فراہمی کے لیے تیار ہیں بلکہ آج ہی سے یورپ کو گیس منتقل کرنے کے لیے تیار ہیں،” دوزیول نے کہا۔

یورپی مارکیٹوں کو بلاتعطل گیس فراہمی کو یقینی بنانے کے لیے ٹرانس ایڈریاٹک پائپ لائن سسٹم کی مکمل تکمیل ضروری ہے، انہوں نے کہا۔ "اس ہفتے کے مطابق وہ TAP کی ابتدائی جانچ کے لیے گیس پمپ کر چکے ہیں۔ اس وقت یونانی سرحد کے ساتھ 5 کلومیٹرز کی TAP آذری گیس سے بھری ہوئی ہے۔ یونانی حصے میں 2 کلومیٹرز کی پائپ لائن میں گیس ہے،” انہوں نے کہا کہ TAP میں موجود کل گیس اس وقت 2,56,000 مکعب میٹرز ہے۔

TANAP جنرل مینیجر نے ایک مرتبہ پھر ترکی اور یورپ کو توانائی فراہمی کی ضمانت کے لیے منصوبے کی اہمیت پر زور دیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ TANAP آذربائیجان کے یورپی یونین کے ساتھ معاشی اور سیاسی تعلق کو مضبوط کرتا ہے اور مزید زور دیا کہ منصوبہ ایک اہم علاقائی توانائی تجارتی مرکز کی حیثیت سے خطے میں ترکی کے مقام کو بھی نمایاں کرتا ہے۔

"منصوبہ گیس کے لیے یورپی یونین کے کسی ایک سپلائر پر انحصار کرنے کو کم کرنے میں اہم کردار ادا کرتا ہے،” دوزیول نے کہا۔ "اس وقت یورپ میں اس گیس کے نو خریدار ہے جن میں فرانسیسی، اطالوی، جرمن اور ہسپانوی کمپنیاں شامل ہیں۔ ہمارا نہیں خیال کہ صرف تین یورپی ممالک – اٹلی، البانیہ اور یونان – جنوبی گیس راہ داری سے آنے والی اس گیس کے واحد صارفین ہوں گے۔”

یہ بہت حد تک ممکن ہے کہ بوسنیا ہرزیگووینا، مونٹی نیگرو اور کروشیا آئندہ سالوں میں آذری گیس کے صارفین ہوں، انہوں نے دعویٰ کیا۔ "TANAP اور TAP کے ذریعے جانے والی گیس کے بڑے خریدار معاہدے کے ذریعے اسے دوسرے ممالک کو فروخت کرنے کے بھی قابل ہوں گے،” انہوں نے کہا۔

تبصرے
Loading...