ایردوان کو بوسنیا میں قتل کرنے کا منصوبہ؛ خطرات نئے نہیں، آج بوسنیا ضرور جائیں گے: ترک نائب وزیراعظم

0 1,799

ترک نائب وزیر اعظم نے ترک صدر رجب طیب ایردوان کے اتوار کے روز دورہ بوسنیا کے دوران قاتلانہ حملے کے سیکیورٹی خطرات پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ ایردوان کو ایسے خطرات نئے نہیں ہیں-

باکر بوزداغ نے اپنے ٹویٹ میں کہا کہ”ہم آگاہ ہیں کہ ایسے حلقے موجود ہیں جو عظیم رہنماء اور ایک مقصد رکھنے والے انسان سے پریشان ہیں اور وہ ہمارے صدر سے چھٹکارا حاصل کرنا چاہتے ہیں- قتل کی یہ وارننگز نئی نہیں ہیں بلکہ ہمیشہ سے رہی ہیں”-

انہوں نے مزید لکھا، "رجب طیب ایردوان ایسا آدمی نہیں جو موت کی وارننگ سے ڈر جائے اور اپنے راستے اور مقصد سے منہ موڑ لے”-

انٹیلی جنس ذرائع کے مطابق ترکوں کا ایک گروپ ترک صدر ایردوان کو بوسنیا میں قتل کرنے کی منصوبہ بندی کر چکا ہے- اور ترک انٹیلی جنس اس بارے مزید معلومات اکٹھی کر رہی ہے-

ترک انٹیلی جنس کو مقدونیہ میں رہنے والے ترک شہریوں سے اطلاعات موصول ہوئی تھیں کہ چند افراد صدر ایردوان کو دورہ بلقان کے دوران قتل کرنے کی منصوبہ بندی کر رہے ہیں-

دوسری طرف مغربی انٹیلی جنس ایجنسیز نے بھی ترک انٹیلی جنس سے معلومات کے تبادلے کے دوران اسی قسم کی اطلاعات دی تھیں کہ بلقان کے دورے کے دوران ترک صدر کو قتل کرنے کی منصوبہ ہو چکی ہے-

اس قاتلانہ حملے کا مقام، طریقہ کار اور تاریخ تاحال معلوم نہیں ہو سکی- اس سلسلے میں ترک انٹیلی جنس ایجنسی نے تحقیقات کا آغاز کر رکھا ہے جبکہ آج ترک صدر بلقان پہنچ رہے ہیں-

تبصرے
Loading...