عالمی برادری مقبوضہ کشمیر کے حوالے سے اپنی قانونی و اخلاقی ذمہ داریاں ادا کرے، پاکستانی سفیر

0 802

پاکستان کے سفیر برائے ترکی سائرس سجاد قاضی نے بین الاقوامی برادری سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ مقبوضہ جموں و کشمیر میں انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں کے خاتمے کے لیے اپنی قانونی و اخلاقی ذمہ داری ادا کرے۔ وہ انسٹیٹیوٹ آف اسٹریٹجک تھنکنگ (SDE)، انقرہ کے زیر اہتمام "جموں و کشمیر تنازع: جاری بحران اور علاقائی من و سلامتی کو لاحق خطرات” کے عنوان سے منعقدہ ایک کانفرنس سے خطاب کر رہے تھے۔

اپنے خطاب کے دوران سفیر پاکستان نے کہا کہ بین الاقوامی میڈیا کی خبروں اور انسانی حقوق کے آزاد مبصروں کے بیانات کے مطابق مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی صورت حال ایک حراستی کیمپ جیسی ہے۔ مقبوضہ کشمیر میں بھارت کے غیر انسانی ہتھکنڈے کوئی ڈھکی چھپی چیز نہیں ہیں لیکن 5 اگست 2019ء کے بعد سے یہ اپنے عروج پر پہنچ گئے ہیں کہ جس دن بھارت نے اپنے آئین کی دفعہ 370 کا خاتمہ کرکے غیر قانونی انداز میں جموں و کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کی۔ انہوں نے کہا کہ 5 اگست 2019ء کے غیر قانونی بھارتی اقدامات اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی قراردادوں کی سنگین خلاف ورزی ہیں۔ ایسی اشتعال انگیز حرکات اس حقیقت کو نہیں بدل سکتیں کہ جموں و کشمیر ایک بین الاقوامی طور پر تسلیم شدہ متنازع علاقہ تھا اور بدستور ہے۔ معصوم کشمیریوں پر مظالم کی انتہا انہیں اپنے حقِ خود ارادی کے مطالبے سے نہیں ہٹا سکتی۔

سائرس قاضی نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر میں بڑھتے ہوئے مظالم اور گئو رکھشا، مسلمانوں کے قتلِ عام اور ساتھ ہی اقلیتوں کے خلاف مذہبی امتیاز سے دائیں بازو کے نفرت انگیز ہندوتوا نظریات سے بڑھتی شدت پسندی، جنگجویانہ وطن پرستی، پاپولزم اور اسلاموفوبیا کی بڑھتی ہوئی لہر ظاہر ہے۔ خطے میں امن قائم نہیں ہوگا جب تک کہ یہ نفرت انگیز نظریہ غالب رہے گا۔

مقبوضہ کشمیر کی صورت حال اور علاقائی امن و سالمیت پر اس کے اثرات کے حوالے سے 16 اگست 2019ء کو ہونے والے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے اجلاس کا خیر مقدم کرتے ہوئے سفیر پاکستان نے زور دیا کہ خطے کو ایک اور تنازع سے دوچار ہونے سے بچانے کے لیے عالمی برادری کو اقدامات اٹھانے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے یہ بھی مطالبہ کیا کہ بین الاقوامی برادری بھارت سے مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں اور اس وقت جاری لاک ڈاؤن کے خاتمے کا مطالبہ کرے۔

سفیر سائرس قاضی نے مظلوم کشمیریوں کے حق میں آواز بلند کرنے پر ترکی کے عوام اور قیادت کا شکریہ ادا کیا کہ جنہوں نے سات دہائیوں سے بھارتی کے قبضے میں موجود کشمیریوں کو حق خود ارادی دینے کا مطالبہ کیا ہے۔

تبصرے
Loading...