ترکی-بیلاروس تعلقات مضبوط بنیادوں پر آگے بڑھیں گے

0 515

صدر رجب طیب ایردوان نے بیلاروس کے صدر الیگزینڈر لوکاشنکو سے روبرو ملاقات اور دونوں ملکوں کے وفود کے درمیان اجلاس کے بعد مشترکہ پریس کانفرنس کی۔ اس موقع پر رجب ایردوان نے بیلاروسی صدر کی میزبانی پر اظہارِ مسرت کرتے ہوئے کرتے ہوئے کہا کہ روبرو ملاقات اور وفود کے اجلاس میں انہیں ترکی اور بیلاروس کے درمیان تمام سیاسی، عسکری، اقتصادی، تجارتی اور ثقافتی معاملات پر تبادلہ خیال کا موقع ملا اور اس دوران مستقبل کے اقدامات پر بھی زور دیا۔

بیلاروس کی آزادی کو تسلیم کرنے والے پہلے ملک ترکی کے صدر نے کہا کہ 27 سال سے ترکی-بیلاروس تعلقات کی جڑیں یکساں مفاہمت کے ساتھ باہمی احترام اور بھروسے میں پیوست ہیں اور دونوں ملکوں کے درمیان تعلقات کو مزید بڑھانے کے لیے وہ ہر سطح پر کام کریں گے۔

ترکی و بیلاروس کے درمیان معاشی امکانات پر صدر ایردوان نے کہا کہ ترک اور بیلاروسی کی کاروباری شخصیات آج ترکی-بیلاروس بزنس فورم پر اکٹھی ہوئیں اور دونوں ملکوں کے درمیان باہمی تجارت کا حجم مزید بڑھے گا۔

2016ء میں مقرر کیے گئے ایک ارب ڈالر کے باہمی تجارت کے ہدف کا ذکر کرتے ہوئے صدر ایردوان نے کہا کہ یہ ہدف حاصل کرنا اب بھی باقی ہے۔ "باہمی گفتگو کے دوران یہ بات واضح طور پر کی گئی کہ ہمیں اس ہدف کو حاصل کرنے کے لیے مزید کام کرنا چاہیے اور اب ہمارا نیا ہدف 1.5 ارب ڈالرز تک پہنچنا ہے۔ درحقیقت ترکی اور بیلاروس اس ہدف کو حاصل کرنے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔”

فتح اللہ ٹیررسٹ آرگنائزیشن (FETO) کے خلاف جنگ بھی گفتگو کا حصہ بنی۔ صدر ایردوان نے کہا کہ بیلاروس نے FETO کے خلاف اِس جنگ میں ترکی کو تنہا نہیں چھوڑا، ضروری اقدامات اٹھانے میں بھی ہچکچاہٹ نہیں دکھائی اور FETO سے تعلق رکھنے والے اداروں کو بند کرنا بھی یقینی بنایا۔ صدر ایردوان نے صدر لوکاشنکو اور دیگر بیلاروسی حکام کا شکریہ ادا کیا کہ انہوں نے اِس معاملے میں بھرپور حساسیت کا مظاہرہ کیا اور مثالی اقدامات اٹھائے۔

ترکی-بیلاروس تعلقا ت کی مستحکم بنیادوں پر پیشرفت پر زور دیتے ہوئے صدر ایردوان نے کہا کہ دونوں ممالک کے درمیان معاہدوں پر دستخط ترکی اور بیلاروس کے تعلقات کو مزید مضبوط کریں گے۔

اس موقع پر بیلاروس کے صدر لوکاشنکو نے کہا کہ ترکی اور بیلاروس کی آراء میں کسی بھی معاملے پر اختلاف نہیں ہے اور بیلاروس ترکی کے ساتھ ہر قسم کا تعاون جاری رکھنے کے لیے تیار ہے۔

مشترکہ پریس کانفرنس کے بعد صدر ایردوان نے صدر لوکاشنکو کے اعزاز میں ایوانِ صدر میں سرکاری عشائیہ دیا۔

تبصرے
Loading...