ترکی اسلامی تعاون تنظیم کی ثالثی کوششوں میں مدد کا خواہش مند ہے، ترک وزیر خارجہ

0 162

ترک وزیر خارجہ نے کہا ہے کہ ترکی اسلامی تعاون تنظیم (او آئی سی) کے ثالثی ایجنڈے کو بہتر بنانے میں مدد دینے کے لیے تیار ہے۔

استنبول میں اسلامی کانفرنس تنظیم کی رکن ریاستوں کی تیسری ثالثی کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے وزیر خارجہ مولود چاؤش اوغلو نے کہا کہ "شام کےالم ناک سانحات ہماری سرحدوں کے بالکل ساتھ پیش آ رہے ہیں۔ دنیا کے دیگر علاقوں میں بھی ایسے تنازعات ہیں جو محض دُوری کی وجہ سے اتنی توجہ حاصل نہیں کر پاتے۔ لیکن آج کے دور میں کوئی جگہ زیادہ دُور نہیں ہے۔” انہوں نے زور دیا کہ او آئی سی ریاستیں”ترکی کی قیادت میں زیادہ اصولی اور منظم انداز میں ثالثی پر توجہ رکھے ہوئے ہیں۔ ہم سیکریٹریٹ اور رکن ریاستوں کے ساتھ مل کر کافی آگے آئے ہیں۔”

ترکی "تنظیم کے ثالثی ایجنڈے کو بہتر بنانے میں اپنی کوشش اور مد دینے کو تیار ہے،” چاؤش اوغلو نے کہا۔

"ہماری نظریں او آئی سی کے دائرۂ کار کے اندر رہتے ہوئے ثالثی کے عمل کو بہتر بنانے پر ہیں۔ سب سے پہلے تو ہم یہ سمجھتے ہیں کہ او آئی سی اس کی زبردست صلاحیت رکھتا ہے۔” انہوں نے کہا۔

او آئی سی اقوامِ متحدہ کے بعد دوسری سب سے بڑی بین الحکومتی انجمن ہے کہ جس کے اراکین کی تعداد 57 ہے جو چار براعظموں پر پھیلے ہوئے ہیں۔ تنظیم کی باضابطہ ویب سائٹ کے مطابق وہ "بین الاقوامی امن و آشتی کی ترویج کے ساتھ مسلم دنیا کے مفادات کے تحفظ کی کوشش کرتی ہے۔”

اس وقت آدھے سے زیادہ عالمی تنازعات او آئی سی کے علاقے میں ہیں، جس کی وجہ سے چاؤش اوغلو کا کہنا ہے کہ "ان کے کاندھوں پر بھاری ذمہ داری عائد ہوتی ہے۔”

استنبول نے چھٹی استنبول ثالثی کانفرنس کی بھی میزبانی کی کہ جس میں اقوامِ متحدہ کے سیکریٹری جنرل انتون گوتریس نے شرکت کی اور خطاب کیا۔

تبصرے
Loading...