ترکی میں سال 2022ء کے لیے بجلی اور گیس کی قیمتوں میں اضافہ

0 899

ترکی نے ہفتہ کے روز بجلی کی قیمتوں میں گھریلو اور فیکٹریوں کے لیے 50 فیصد سے 100 فیصد اضافہ کا اعلان کیا ہے جبکہ دوسری طرف ماہانہ قدرتی گیس کے استعمال پر بھی بلز میں اضافہ کیا گیا ہے۔

انرجی مارکیٹ ریگولیٹری اتھارٹی نے کہا کہ 2022 کے لیے کم ڈیمانڈ والے گھرانوں کے لیے بجلی کی قیمتوں میں تقریباً 50 فیصد اضافہ کیا گیا تھا، جب کہ زیادہ مانگ والے کمرشل صارفین کے لیے ان میں 100 فیصد سے زیادہ اضافہ کیا گیا تھا۔

قدرتی گیس کی قیمتوں میں رہائشی استعمال کے لیے 25% اور صنعتی استعمال کے لیے جنوری میں 50% اضافہ ہوا، قومی تقسیم کار بوٹاس نے الگ سے کہا ہے کہ بجلی پیدا کرنے والے صنعتی استعمال کے لیے قیمتوں میں 15 فیصد اضافہ ہوا۔

ترکی کی سالانہ افراط زر نومبر میں تین سال کی بلند ترین سطح تک بڑھ گئی ، سرکاری اعداد و شمار سے ظاہر ہوتا ہے کہ قیمتوں میں مسلسل اضافہ نے صارفین کے نقطہ نظر کو دھندلا دیا ہے۔

ترکی کے شماریاتی ادارے (TurkStat) نے کہا کہ افراط زر کی شرح گزشتہ ماہ 21.31 فیصد تک پہنچ گئی، جو نومبر 2018 کے بعد سب سے زیادہ شرح ہے، اکتوبر میں یہ شرح 19.89 فیصد تھی ۔

اس ہفتے کے شروع میں، جمہوریہ ترکی کے مرکزی بینک (CBRT) نے 2022 کے لیے اپنی سالانہ مانیٹری اور ایکسچینج ریٹ پالیسی فریم ورک کی رپورٹ پیش کی تھی، جس کا مقصد افراط زر کو بتدریج متوازن کرنا ہے۔

ترکی کے مرکزی بینک کی مانیٹری پالیسی اگلے سال افراط زر کو بتدریج اس کے درمیانی مدت کے ہدف کی طرف لانے کے مقصد کے ساتھ وضع کی جائے گی، جبکہ یہ زرمبادلہ کی منڈی سے متعلق خطرات پر بھی نظر رکھے گی۔

ترکی کے مرکزی بینک نے وسط مدتی افراط زر کا ہدف 5% برقرار رکھا ہے، یہ بتاتے ہوئے کہ مالیاتی پالیسی کو بتدریج ہدف تک پہنچنے کے لیے ڈیزائن کیا جائے گا۔

 

 

تبصرے
Loading...
%d bloggers like this: