ترکی کو طالبان حکومت تسلیم کرنے کی جلدی نہیں، تعلقات اس نہج پر لے جائیں گے، ترک وزیر خارجہ

0 1,527

ترک وزیر خارجہ میولوت چاوش اولو نے کہا ہے کہ ترکی کو افغانستان کی طالبان حکومت تسلیم کرنے کی جلدی نہیں ہے۔ تاہم انقرہ اور کابل حکومت کے درمیان تعلقات کو بتدریج آگے بڑھائیں گے۔ ترک پارلیمنٹ میں افغان بحران کے حوالے سے ترکی کی خارجہ پالیسی کے حوالے سے بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ترکی، افغانستان سے لاتعلق نہیں رہ سکتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ "ہمارے تاریخی رشتوں کے علاوہ، ہمارے درمیان مشترکہ نسب و نسل، سرمایہ کاری اور بہت سے شعبوں میں ہماری موجودگی، ہمارے تعلقات کے لیے بہترین جواز پیدا کرتی ہے۔ دہشت گردی، نقل مکانی اور منشیات کے خطرات کو ان کے گڑھ سے ختم کرنا ہو گا، معاشی تباہی اور انسانی بحران کو روکنا ہو گا۔”

یہ بتاتے ہوئے کہ اگر بحران کے مقابل بہتر انتظام نہ کیا گیا تو اس کے نتائج براہ راست ہر ایک کو متاثر کریں گے، چاووش اولو نے کہا: "ان وجوہات کی بناء پر، ہم طالبان کے ساتھ بتدریج رابطے، انسانی مسائل میں مدد اور بین الاقوامی میدان میں فعال سفارت کاری کی پیروی کر رہے ہیں۔ بین الاقوامی برادری بھی عام طور پر طالبان کے ساتھ بتدریج رابطے کی پالیسی پر عمل کر رہی ہے۔

چاوش اولو نے کہا کہ جب انہوں نے افغانستان میں طالبان کی عبوری حکومت کے قائم مقام نائب وزیر خارجہ سے ملاقات کی تو انہیں مستقل استحکام کے لیے ایک جامع اور نمائندہ حکومت کے قیام کی اہمیت پر زور دیا گیا۔

افغانستان کی عبوری طالبان حکومت کے قائم مقام وزیر خارجہ امیر خان متقی کی قیادت میں ایک اعلیٰ سطحی وفد نے گزشتہ ماہ ترکی کا دورہ کیا تھا اس دورہ کے دوران انہوں نے سینئر ترک حکام سے بات چیت کی تھی۔

یہ 15 اگست کو طالبان کے اقتدار سنبھالنے کے بعد ترکی اور افغانستان میں نئی ​​انتظامیہ کے درمیان پہلا اعلیٰ سطحی رابطہ تھا۔

ملاقات کے بعد صحافیوں سے بات کرتے ہوئے چاوش اولو نے کہا تھا کہ طالبان کو تسلیم کرنا اور ان کے ساتھ تعلقات رکھنا دو مختلف چیزیں ہیں۔ انہوں نے مزید کہا تھا کہ ترکی نے ایک جامع حکومت کی ضرورت کا اعادہ کیا ہے اور کابل حامد کرزئی بین الاقوامی ہوائی اڈے کی سیکورٹی کے حوالے سے اپنی توقعات کا اظہار کیا ہے۔

"ہم انسانی امداد اور وہاں سرمایہ کاری کے تسلسل کے لیے یہ سب کر رہے ہیں” چاوش اولو نے یہ بھی کہا کہ ترک فریق نے ایک بار پھر لڑکیوں کی تعلیم اور کاروباری زندگی میں خواتین کی ملازمت کے بارے میں اپنا مشورہ طالبان سے شیئر کیا ہے۔

انہوں نے یہ بھی کہا کہ "طالبان قیادت نے کہا کہ اگر وہ (افغان مہاجرین) اپنے ملک واپس جانا چاہتے ہیں تو وہ ان کی پوری مدد کریں گے۔”

صدر رجب طیب ایردوان نے حال ہی میں افغانستان میں ایک جامع حکومت کی اہمیت پر روشنی ڈالی تھی، جیسا کہ انہوں نے کہا کہ یہ جامع حکومت کا قیام کابل ہوائی اڈے کے آپریشن کے حوالے سے کسی معاہدے تک پہنچنے میں اہم ہے۔ ترکی افغان دارالحکومت کابل کے ہوائی اڈے کو بین الاقوامی سفر کے لیے دوبارہ کھولنے کے لیے قطر کے ساتھ مل کر کام کر رہا ہے۔ تاہم، تجارتی پروازیں دوبارہ شروع ہونے سے پہلے ائیرپورٹ کو مرمت کی ضرورت ہے۔

طالبان کے تازہ بیانات "معتدل” ہیں، سخت گیر حکمرانی کو ترک کرنا قابل تحسین ہے، صدر ایردوان

صدرایردوان نے سب سے زیادہ طاقتور 20 معیشتوں کے گروپ کے مابین ایک ورچوئل میٹنگ میں یہ بھی کہا کہ بین الاقوامی برادری کو طالبان کے ساتھ مذاکرات کے راستے کھلے رکھنے چاہئیں ، تاکہ انہیں "صبر اور تدریجی عمل” کے ساتھ مزید جامع حکومت کے قیام کی طرف لے جایا جا سکے۔

انہوں نے کہا کہ ترکی، جو پہلے ہی 3.6 ملین سے زائد شامیوں کی میزبانی کر رہا ہے، افغانستان سے تارکین وطن کی آمد کو برداشت نہیں کر سکتا، اس نے خبردار کیا کہ تارکین وطن کی نئی لہر سے یورپی ممالک بھی متاثر ہوں گے۔

طالبان کا کہنا ہے کہ وہ بین الاقوامی شناخت چاہتے ہیں۔ وہ متنبہ کرتے ہیں کہ ان کی حکومت کو کمزور کرنے سے سیکیورٹی متاثر ہو گی جس کی وجہ سے افغانستان سے ہجرت کے اس سے بھی بڑا انسانی اخراج جنم لے گا۔ طالبان حکام نے پہلے کہا تھا کہ وہ چاہتے ہیں کہ ترکی افغان عوام کو امداد اور مدد فراہم کرے اور ترکی سے مطالبہ کیا تھا کہ وہ پہلا ملک بن جائے جس نے افغانستان میں نئی ​​انتظامیہ کو باضابطہ طور پر تسلیم کیا ہو۔

ترکی نے طالبان کے کابل میں داخلے اور مغربی ممالک کے انخلا کے بعد بھی افغانستان میں اپنا سفارت خانہ برقرار رکھا، اور ان ممالک پر بھی زور دیا کہ وہ مصروفیت میں اضافہ کریں۔ ساتھ ہی، اس نے شرط رکھی کہ وہ طالبان کے ساتھ صرف اس صورت میں مکمل طور پر کام کرے گا جب وہ زیادہ جامع انتظامیہ تشکیل دیں۔

چاوش اولو نے کہا، "افغانستان کے بحران کے دوران ہم نے اپنی کاروباری اور انسانی ہمدردی کی خارجہ پالیسی کے مطابق، 1502 افراد کے محفوظ انخلاء کو یقینی بنایا، جن میں سے زیادہ تر ہمارے شہری تھے۔ ہم نے 28 دوست اور اتحادی ممالک، 14 بین الاقوامی تنظیموں اور 17 بین الاقوامی میڈیا اداروں کی حمایت کی۔”

انہوں نے مزید کہا کہ "(افغانستان میں) ترک معارف فاؤنڈیشن کے 80 اسکول تھے، جن میں سے 14 اسکول لڑکیوں کے لیے تھے۔ ان 14 اسکولوں میں سے دس اسکولوں کو بحال کر کے دوبارہ تعلیم شروع کر دی گئی ہے۔ اس طرح ہم میدان میں بھی مدد فراہم کر رہے ہیں۔”

تبصرے
Loading...