کروناوائرس سے نمٹنے کے لیے ترکی کی امریکا کے لیے طبّی امداد روانہ

0 243

‏COVID-19 سے نمٹنے کے لیے اہم طبّی سامان لے جانے والا ترک فوجی طیارہ دارالحکومت انقرہ سے امریکا روانہ ہو گیا ہے۔

وزارت دفاع کے مطابق طیارہ "کوجا یوسف” طبّی امداد لے کر انقرہ کے فوجی ہوائی اڈے سے روانہ ہوا۔

امریکی سفیر ڈیوڈ سیٹرفیلڈ نے اس "فیاضانہ” عطیہ پر ترکی کا شکریہ ادا کیا، کہ جو واشنگٹن ڈی سی کے قریب اینڈریوز ایئرفورس بیس پر اترے گا۔ سیٹرفیلڈ نے ایک بیان میں کہا کہ "بحران کے دنوں میں، COVID-19 کے خلاف عالمی جدوجہد میں ہم خیال اتحادیوں اور شراکت داروں کا باہمی تعاون ایک فوری اور مؤثر ردعمل کے لیے اہم ہے۔ ہم میں سے کوئی بھی یہ سب کچھ اکیلا نہیں کر سکتا۔” انہوں نے کہا کہ فیڈرل ایمرجنسی مینجمنٹ ایجنسی یہ امداد ملک کے اہم علاقوں میں بھیجے گی۔

سفیر نے دونوں ملکوں کے مابین تعلقات کو بھی سراہا اور کہا کہ واشنگٹن کی نظریں انقرہ کے ساتھ باہمی ترجیحات پر تعاون کرنے پر لگی ہوئی ہیں۔انہوں نے مزید کہا کہ "شکریہ ترکی کی حکومت اور عوام کا، مدد کرنے اور امریکی عوام کے ساتھ دوستی نبھانے پر۔”

ایسی ہی امداد برطانیہ کو بھی ارسال کی گئی ہے جبکہ امریکا بھیجی گئی امداد کے ڈبوں پر 13 ویں صدی کے صوفی مولانا جلال الدین رومی کے یہ الفاظ انگریزی و ترکی زبان میں درج ہیں: "جہاں کھنڈرات ہوں، وہاں خزانے کی امید ہوتی ہے۔”

صدر رجب طیب ایردوان نے پیر کے دن اعلان کیا تھا کہ ترکی طبی امداد پر مشتمل سامان امریکا روانہ کرے گا تاکہ کرونا وائرس کی وباء روکنے میں مدد حاصل ہو۔

اس میں 5 لاکھ سرجیکل ماسک، 400 این95 ماسک، 4 ہزار اوور آل، 2 ہزار لیٹر جراثیم کش محلول، ڈیڑھ ہزار گوگل اور 500 فیس شیلڈز شامل ہیں۔

امریکا اس وقت کرونا وائرس سے سب سے زیادہ متاثر ہونے والا ملک ہے کہ جہاں مریضوں کی تعداد 10 لاکھ سے تجاوز کر چکی ہے جبکہ سب سے زیادہ 56 ہزار اموات بھی امریکا میں ہی ہوئی ہیں۔

تبصرے
Loading...