ترکی دنیا کے سب سے زیادہ سخی ملکوں میں شامل

0 416

ایک آزاد بین الاقوامی ترقیاتی ادارے نے بتایا ہے کہ ترکی پچھلے دو سال سے عالمی انسانی امداد میں سب سے زیادہ خرچ کرنے والا ملک رہا ہے۔

ڈیولپمنٹ انیشی ایٹو (DI) کی عالمی انسانی امداد رپورٹ کے مطابق ملک نے 2018ء میں انسانی امداد میں 8.4 ارب ڈالرز خرچ کیے جبکہ 2017ء میں اس کے امدادی اخراجات 8.1 ارب ڈالرز تھے۔

رپورٹ نے ظاہر کیا کہ 2018ء میں تمام بین الاقوامی انسانی امداد، 28.9 ارب ڈالرز، کا تقریباً 29 فیصد ترکی سے آیا۔ 2018ء میں دوسرے ملکوں کی جانب سے فراہم کی گئی امداد میں سالانہ بنیادوں پر تبدیلی نظر آئی جس میں امریکا 6.68 ارب سے 6.65 ارب ڈالرز، جرمنی 2.98 ارب سے 2.96 ارب ڈالرز اور برطانیہ 2.52 ارب سے 2.19 ارب ڈالرز تک پہنچ گیا۔

ترکی کے انسانی امداد پر آنے والے اخراجات 2018ء میں اس کے GDP کا تقریباً 1.1 فیصد رہے، جو2017ء کے مقابلے میں ایک فیصد اضافہ ہوا۔ امریکا نے اپنے GDP کا 0.032 فیصد، جرمنی نے 0.074 فیصد اور برطانیہ نے 0.077 فیصد فراہم کیا۔ ترکی DI کی رپورٹ میں 2013ء، 2014ء اور 2015ء میں تیسرے جبکہ 2016ء میں دوسرے نمبر پر آیا تھا۔

سرکاری اعداد و شمار کے مطابق ترکی دنیا میں مہاجرین کی سب سے بڑی تعداد کا میزبان بھی ہے۔ ملک میں رہنے والے شامی مہاجرین کی تعداد ستمبر کے مطابق 36.6 لاکھ ہے۔

سالہا سال کی اقتصادی بد انتظامی کے بعد بحالی کے عمل سے گزرتے ہوئے ترقی یافتہ ممالک میں شامل ہونے کی جدوجہد کرنے والا ترکی انسانی امداد کی علامت رہا ہے۔ انصاف و ترقی پارٹی (AK پارٹی) کی حکومت کے ماتحت انسانی امدادی کوششوں کو زیادہ تحریک ملی ار حکومت کے امدادی ادارے قدرتی آفات میں امداد اور مہاجرین کا سہارا بننے کے لیے نمایاں ہوئے۔ ملک کی کوششوں نے اسے اقوام متحدہ کی جانب سے منعقدہ انسان دوست کوششوں سے ہم آہنگ ہونے کے لیے اپنی نوعیت کے پہلے اجلاس ورلڈ ہیومینی ٹیرین سمٹ کا میزبان بنایا۔

سرکاری ادارہ ترکش کوآپریشن اینڈ کوآرڈی نیشن ایجنسی (TIKA) انسانی امداد میں ترکی کی عالمی برتری میں پیش پیش ہے۔ TIKA مشرق وسطیٰ سے لے کر لاطینی امریکا تک میں مختلف منصوبوں کی نگرانی کرتا ہے جن میں ہسپتالوں کی تعمیر سے لے کر محروم طبقات کے لیے پیشہ ورانہ تربیت سمیت ترقیاتی امداد کے مختلف طریقے شامل ہیں۔

ترک ہلالِ احمر نے بھی انسانی امدادی کوششوں میں اپنی موجودگی کے ذریعے بین الاقوامی برادری میں اپنی ساکھ قائم کی ہے۔ یہ امدادی ادارہ دنیا بھر میں تنازعات سے متاثرہ اور آفات کی زد میں آنے والے علاقوں میں خوراک کی فراہمی سے وابستہ ہے۔ ہلالِ احمر نے 2018ء میں دنیا بھر میں 23 ملین افراد کو امداد پہنچائی۔

دنیا بھر میں 1.8 ارب افراد غربت کی زندگی گزار رہی ہے اور پچھلے سال 697 ملین انتہائی غربت کے شکار افراد تھے جو رپورٹ کے مطابق 2017ء کے مقابلے میں بالترتیب 2 ارب اور 753 ملین سے کم ہوئے ہیں۔ "غریب افراد وہ ہیں جو روزانہ 3.20 ڈالرز سے کم کماتے ہیں؛ جبکہ انتہائی غریب وہ شمار ہوتے ہیں جن کی روزانہ آمدنی 1.90 ڈالرز ہے۔”

ترکی اب تک مہاجرین کی بہبود پر تقریباً 40 ارب ڈالرز خرچ کر چکا ہے جبکہ اسے بین الاقوامی برادری کی جانب سے صرف 6.6 ارب ڈالرز ملے ہیں۔ ترکی یورپی ممالک اور بین الاقوامی برادری کو مہاجرین کے معاملے پر سخت تنقید کا نشانہ بناتا آیا ہے۔

تبصرے
Loading...