چین میں کورونا وائرس، ترک ملبوسات سازوں کو 2 ارب ڈالرز کے آرڈرز ملنے کا امکان

0 195

چین میں کورونا وائرس سے متاثر ہ علاقوں میں ملبوسات تیار کرنے والے ادارے اپنی پیداوار ترکی منتقلی کرنے کے لیے ترک اداروں سے رابطے میں ہیں۔ اس شعبے سے تعلق رکھنے والے ایک عہدیدار کے مطابق ترکی کو 2 ارب ڈالرز مالیت تک کے آرڈرز ملنا متوقع ہیں۔

چین میں کورونا وائرس کی وباء اب تک 637 افراد کی جان لے چکی ہے۔ اس کو پھیلنے سے روکنے کے لیے کئی کارخانے بند کیے جا چکے ہیں اور خدشہ ہے کہ یہ کئی ہفتے بند رہیں گے۔

یہی وجہ ہے کہ پولینڈ کی فیشن کمپنی LPP ترکی، بنگلہ دیش اور ویت نام میں مختلف کارخانوں سے رابطے میں ہے کہ اگر چین میں پیداوار بدستور تاخیر کا شکار رہتی ہے تو وہ بیک اپ کے طور پر ان کو استعمال کر سکیں۔

ترک مینوفیکچررز نے حالیہ چند سالوں میں اپنی ملبوسات کی پیداوار کو اعلیٰ ملبوسات کی جانب منتقل کیا ہے کیونکہ عالمی سطح پر چین کا غلبہ بڑھتا جا رہا ہے۔ لیکن کورونا وائرس کی وباء نے یورپی کمپنیوں کو ایک مرتبہ پھر ترکی کا رخ کرنے پر مجبور کر دیا ہے۔

ترکش کلاتھنگ مینوفیکچررز ایسوسی ایشن (TGSD) کے سربراہ ہادی قاراسو نے کہا کہ "کورونا وائرس اور اس کی وجہ سے سفر پر لگنے والی پابندیوں کی وجہ سے پرچیزنگ مینیجرز اور ڈیزائنرز چین نہیں جا سکتے۔ اس لیے چند معروف برانڈز نے نئے موسم کے ملبوسات کی تیاری کے لیے ترکی سے بات چیت شروع کی ہے۔”

قاراسو نے کہا کہ چین میں مینوفیکچرنگ لاگت میں اضافے اور 2018ء کے کرنسی بحران کی وجہ سے پچھلے دو سال میں ترک لیرا کی قدر میں آنے والی 36 فیصد کمی کی وجہ سے ترکی پہلے ہی ایک اچھا انتخاب بن چکا ہے۔ "چین اور ترکی کے درمیان مینوفیکچرنگ لاگت یکساں ہونے کی وجہ سے متعدد یورپی ادارے پہلے اپنے آرڈرز چین سے ترکی منتقل کرنے پر غور کر رہے ہیں۔ چین نے تقریباً 170 ارب ڈالرز کے تیار ملبوسات برآمد کیے ہیں۔ ہمارے اندازوں کے مطابق ابتداء میں تقریباً 1 فیصد آرڈرز ترکی منتقل ہوں گے جو لگ بھگ 2 ارب ڈالرز کے ہو سکتے ہیں۔”

ترکی نے پچھلے سال 17.7 ارب ڈالرز کے تیار ملبوسات برآمد کیے تھے۔ اس میں اضافہ موجودہ اقتصادی خسارے کو کم کرنے اور درآمدات پر انحصار کرنے والی ترک معیشت پر موجود دباؤ کم کرے گا۔ ساتھ ہی حکومت کو بھی 5 فیصد اقتصادی نمو کا مشکل ہدف حاصل کرنے میں مدد ملے گی۔

استانبول ایپرل ایکسپورٹرز ایسوسی ایشن (IHKIB) کے سربراہ مصطفیٰ گل تپہ نے کہا کہ ہم اضافی آرڈرز کی گنجائش رکھتے ہیں اور نئے اور پرانے صارفین کی بڑی تعداد ترک کارخانوں سے رابطے کر رہی ہے۔ "میرے خیال میں کورونا وائرس کے اثرات پانچ سے چھ مہینے تک رہیں گے اور مئی کے بعد چین سے بڑے پیمانے پر آرڈرز کی منتقلی نظر آئے گی۔”

تبصرے
Loading...