‏100 بڑے عالمی دفاعی ادارے، ترک کمپنیاں بھی پیش پیش

0 389

اپنی مصنوعات اور ذمہ داریوں کے سلسلے میں ترقی کی منازل طے کرنے والے ترک دفاعی اداروں نے نمایاں اقتصادی کامیابیاں سمیٹی ہیں اور ایک کامیابی بین الاقوامی تقابل کی فہرست میں نمایاں ہو رہی ہے۔ ترک ادارے اس سال کے ڈیفنس نیوز ٹاپ 100 میں جگہ پانےمیں کامیاب ہوگئے ہیں۔ 1986ء میں پہلی بار امریکا سے شائع ہونے والا ڈیفنس نیوز عالمی دفاعی اداروں کا جائزہ لیتا ہے اور دنیا کے سب سے بڑے 100 دفاعی اداروں کی سالانہ فہرست جاری کرتا ہے۔ 2019ء ٹاپ 100، جو پچھلی سال میں دفاعی آمدنی حاصل کرنے والے اداروں کی بنیاد پر ترتیب دی گئی فہرست ہے، میں پچھلے سال کی طرح چار ترک ادارے شامل ہیں۔

لیکن اس سال کی فہرست میں چند بڑی تبدیلیاں آئی ہیں، خاص طور پر بالائی نمبر پر کہ جہاں ٹاپ 25 مقامات میں سے آٹھ چینی اداروں کے پاس ہیں بلکہ ٹاپ 15 میں سے چھ ادارے چینی ہے، جو دنیا بھر کی دفاعی کمپنیوں کے لیے ایک بڑی تبدیلی ہے۔

اس کے باوجود چار میں سے تین ترک ادارے، ASELSAN، ڈیفنس ٹیکنالوجیز انجینئرنگ اینڈ ٹریڈ کارپوریشن (STM) اور ROKETSAN فہرست میں اپنی درجہ بندی مضبوط کرنے میں کامیاب ہوئے جبکہ ترکش ایروسپیس انڈسٹریز (TUSAS/TAI) کچھ درجہ نیچے گئی ہے۔

2018ء میں ترک کے بڑے اداروں نے تقریباً 4 ارب ڈالرز کی سالانہ دفاعی آمدنی حاصل کی۔ 2006ء میں پہلی بار 93 ویں نمبر کے ساتھ فہرست میں جگہ پانے کے بعد گزشتہ سال 55 ویں نمبر تک آنے والا ASELSAN اپنی کارکردگی کو مزید بہتر بناتا ہوا اِس سال 52 ویں نمبر پر آ گیا ہے۔ انقرہ میں قائم اس ادارے نے 2018ء میں اپنی آمدنی میں 26 فیصد اضافہ کیا اور تقریباً 1.8 ارب ڈالرز کمائے۔

راکٹ اور میزائل سسٹمز میں رہنما بننے اور ترک مسلح افواج کی ضرب لگانے کی صلاحیت کو بڑھانے کے ہدف کے ساتھ ROKETSAN نے بھی آگے کی جانب پیش قدمی کی۔ پہلی بار 98 ویں نمبر کے ساتھ اس فہرست میں آنے والی یہ کمپنی 96 ویں درجے تک پہنچی اور بالآخر اس سال کی فہرست میں یہ دنیا کی 100 بہترین ڈیفنس کمپنیوں میں 89 ویں نمبر پر آ گئی ہے۔ ROKETSAN نے اس سال اپنی آمدنی 39 فیصد اضافے کے ساتھ 522 ملین ڈالرز کرلی ہے، جو 2017ء میں 376 ملین ڈالرز تھی۔

TAM، جو اپنے بڑے منصوبوں کی وجہ سے معروف ہے، اس کے منصوبوں میں ANKA UAV، T129 ATAK ہیلی کاپٹر اور حرکش ٹریننگ ایئرکرافٹ شامل ہیں جبکہ یہ بوئنگ، ایئربس، لاک ہیڈ مارٹن، نارتھروپ گرومن، بومبارڈیئر اور لیونارڈو جیسے اداروں کے ساتھ بھی کام کرتا ہے، 2011ء میں پہلی بار 83 ویں نمبر کے ساتھ اس فہرست میں آیا تھا۔ 2017ء میں ادارے نے 1.09 ارب ڈالرز کی آمدنی حاصل کی جو گزشتہ سال 4 فیصد کمی کے ساتھ 1.05 ارب ڈالرز تک پہنچی۔ گزشتہ سال 64 ویں نمبر پر رہنے والا TAM اس سال پانچ درجے نیچے گر کر 69 ویں نمبر پر آ گیا ہے۔

جغرافیائی طور پر دیکھیں تو 100 میں سے 41 ادارے امریکا میں ہیں، جو کل دفاعی آمدنی کا 52 فیصد حاصل کرتے ہیں۔ 32 ادارے یورپ میں قائم ہیں جن میں برطانیہ اور ترکی تو شامل ہیں لیکن روس نہیں۔ یہ ادارے کل عالمی دفاعی آمدنی کا 20 فیصد پاتے ہیں۔ ایشیا بحر الکاہل خطے کے چین کے سوا دیگر ممالک کے 11 ادارے ہیں؛ اسرائیل کے تین، روس کے دو اور کینیڈا، برازیل اور جنوبی افریقہ کا ایک، ایک ادارہ اس فہرست میں شامل ہے۔

مجموعی طور پر آٹھ چینی ادارے نے 97 ارب ڈالرز کی دفاعی آمدنی پائی، جو امریکا اور یورپ کے بعد سب سے زیادہ ہے۔

تبصرے
Loading...