ترکی کی برآمدات 180 ارب ڈالرز کے ساتھ تاریخ کی بلند ترین سطح پر

0 176

ترکی کی برآمدات تاریخ کی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی ہیں کہ جنہوں نے 2019ء میں 180.46 ارب ڈالرز کا ہندسہ عبور کیا، جو پچھلے سال کے مقابلے میں 2.04 فیصد زیادہ ہے، وزیر تجارت رخسار پیک جان نے بتایا۔

وزیر نے کہا کہ 2019ء میں تمام تر رکاوٹوں کے باوجود رکی نے ایک مرتبہ پھر تاریخی بلندیوں کو چھوتے ہوئے برآمدات کے ریکارڈز قائم کیے۔

"گزشتہ سال درآمدات میں 8.99 فیصد کی کمی آئی اور یہ 210.4 ارب ڈالرز تک پہنچیں، انہوں نے بتایا کہ غیر ملکی تجارتی خسارے میں 44.9 فیصد کی کمی آئی جو 54.3 ارب ڈالرز سے 29.9 ارب ڈالرز تک پہنچا۔

غیر ملکی تجارت نے 4.7 فیصد کا ریکارڈ اضافہ دیکھا، جو 18 سالوں میں ترکی کا سب سے بڑا اضافہ ہے۔

2019ء میں برآمد/درآمد کوریج کا تناسب 85.8 فیصد تھا، جو 2018ء کے مقابلے میں 76.5 فیصد زیادہ تھا، انہوں نے مزید کہا۔

یورو اور امریکی ڈالرز کی شرحِ تبادلہ نے ترک برآمدات پر 4.5 ارب ڈالرز مالیت کے منفی اثرات ڈالے، "تمام تر منفی پیش رفتوں کے باوجود برآمدات میں اضافہ ہمارے ماہرین اور تجارتی پالیسی بنانے والوں کی صلاحیتوں کو ثابت کرتا ہے،” انہوں نے کہا۔

2019ء میں دنیا کے سرفہرست 50 برآمدی ممالک کا کل حجم 2.7 فیصد کم ہوا۔ البتہ ترکی اس فہرست میں ساتویں نمبر پر رہا اور برآمدات میں سب سے زیادہ اضافہ دیکھا، پیک جان نے کہا۔

انہوں نے کہا کہ حکومت نے پچھلے سال برآمد کنندگان 3.2 ارب ترک لیرا کی مدد فراہم کی۔ "یہ برآمدات کو سہارا دینے کے لیے ملک کی تاریخ کی سب سے بڑی رقم ہے۔ 2020ء میں اسے 3.8 ارب ترک لیرا تک بڑھایا جائے گا۔”

عالمی مسائل کی جانب اشارہ کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ عالمی تجارتی جنگوں، بریگزٹ اور علاقائی تنازعات کی وجہ سے پیدا ہونے والی صورت حال نے عالمی تجارت کے حجم اور نمو کو کم کیا ہے۔ "ترکی 2019ء میں عالمی تجارتی منظرنامے پر بہترین کارکردگی دکھانے والے ممالک میں سے ایک تھا،” پیک جان نے کہا۔

ترکی کے مجموعی برآمدات میں ہائی ٹیک مصنوعات کا حصہ بڑھانے کے ہدف کا ذکر کرتے ہوئے پیک جان نے زور دیا کہ وزارت ایسی مصنوعات کا خصوصی فری زونز میں حصہ 14 فیصد تک لانا چاہتا ہے – جو اقتصادی تعاون و ترقی (OECD) ممالک کی تنظیم کے لیے اوسط ہے۔

وزارت تجارت کے پریس ریلیز کے مطابق 2019ء میں خام مال – درمیانی اشیاء – کی برآمدات 85 ارب ڈالرز رہیں، صارفی مصنوعات 72.2 ارب ڈالرز اور دیگر مصنوعات بنانے میں کام آنے والی چیزیں 21.5 ارب ڈالرز کی رہیں۔

گاڑیاں ترکی کی سب سے بڑی برآمدات رہیں کہ جو 26.88 ارب ڈالرز کی تھیں۔

ترک مصنوعات کے لیے اہم ترین مقام جرمنی رہا کہ جہاں 16.6 ارب ڈالرز کی برآمدات گئیں، جو سال بہ سال کی بنیاد پر 4.15 فیصد کی کمی ہے۔ اس کے بعد برطانیہ (11.28 ارب ڈالرز) اور عراق (10.2 ارب ڈالرز) کے ساتھ تھے۔ مشرقِ قریب اور مشرق وسطیٰ کے ممالک کے لیے اشیاء کی فروخت میں 7.1 فیصد اضافہ ہوا اور یہ کُل 35 ارب ڈالرز کی رہیں۔

پچھلے سال ترکی کو سب سے زیادہ درآمدات کرنے والے ممالک روس (23.1 ارب ڈالرز)، جرمنی (19.3 ارب ڈالرز)،چین (19.1 ارب ڈالرز)، امریکا (11.9 ارب ڈالرز) اور اٹلی (9.3 ارب ڈالرز) رہے۔

تبصرے
Loading...