یوکرین اِس سال ترک بحری جہازوں اور ڈرونز کا منتظر

0 831

یوکرین کی بحریہ کے کمانڈر اولیکسی نیزپاپا نے کہا ہے کہ یوکرین اس سال اپنی بحریہ کے لیے ترک ڈرونز اور بحری جہازوں کا منتظر ہے۔

ملک ترکی کے بیراکتار TB2 ڈرونز خریدنے کا منصوبہ رکھتا ہے۔

نزپاپا نے کہا کہ یوکرین اپنے بحری اور زمینی دونوں آپریشنز میں ڈرونز کا استعمال کرے گا، اور ساتھ ہی کہا کہ یوکرین ترکی کے ساتھ ایڈا-کلاس بحری جہازوں کی مشترکہ تیاری کے ذریعے نیٹو معیارات کی پیداواری گنجائش حاصل کر لے گا۔

یہ تبصرہ دونوں ملکوں کے دفاعی عہدیداروں کی جانب سے دسمبر میں ایک معاہدے پر دستخط کے بعد آیا ہے کہ جس کے مطابق یوکرین ترک ڈرونز کا ایک اور جتھا اور ساتھ ساتھ ترکی کے MILGEM بحری پلیٹ فارمز منصوبے کے تحت تیار کردہ جنگی بحری جہاز بھی خرید رہا ہے۔

یہ بحری جنگی جہاز یوکرین کے شہر مائیکولاف کے اوکیان شپ یارڈ میں ترک ٹیکنالوجیز استعمال کر کے بنائے جائیں گے۔

اس معاہدے کے ذریعے یوکرین بحیرۂ اسود اور بحیرۂ ازوف میں اپنے بحری دفاع کو مضبوط بنانے کا خواہشمند ہے۔

ایڈا-کلاس بحری جنگی جہاز فضاء، سطح اور زیرِ آب اہداف کا تعین کرنے، جگہ دریافت کرنے، زمرہ بندی، شناخت اور تباہ کرنے کا کام کر سکتے ہیں۔

MILGEM منصوبہ 2000ء میں کثیر المقاصد جنگی بحری جہاز مقامی طور پر تیار کرنے کے لیے شروع کیا گیا تھا کہ جو پرانے بحری جہازوں کی جگہ لیں گے۔

ترکی ان 10 ممالک میں سے ایک ہے جو اپنے جنگی بحری جہاز خود بناتے، تیار کرتے اور ان کی دیکھ بھال کرتے ہیں۔

حالیہ چند سالوں میں خاص طور پر دفاع کے شعبے میں دونوں ممالک کے درمیان تعلقات بہتر ہوئے ہیں اور اس کا ثبوت دونوں ملکوں کے سربراہان کے مستقل دوروں سے ملتا ہے۔

یوکرین نے 2019ء میں ترکی سے 6 بیراکتار TB2 ڈرونز اور تین گراؤنڈ کنٹرول اسٹیشن سسٹمز خریدے تھے۔

دونوں ممالک مبینہ طور پر ہوائی جہاز کا انجن بنانے کے لیے بھی مذاکرات کر رہے ہیں۔ یوکرین کے ہوائی جہاز بنانے والے ادارے انتونوف کے مطابق کمپنی AN-178 ہوائی جہاز کی پیداوار کے لیے ہوا بازی کی ترک صنعت کے ساتھ تعاون چاہتی ہے۔

تبصرے
Loading...