بیت المقدس کو اسرائیلی دارالحکومت بنانے کا فیصلہ خطرناک ہے، ترک صدارتی ترجمان

0 537

ترک صدارتی ترجمان نے خبردار کرتے ہوئے کہا ہے کہ امریکا کی طرف سے بیت المقدس کو اسرائیلی دارالحکومت بنانے کا فیصلہ خطرناک ہو گا۔ یہ فیصلہ عالمی معاہدوں اور اقوام متحدہ کی قراردادوں کے خلاف ہے۔

اپنے ٹویٹر اکاؤنٹ سے کئی ٹویٹس میں انہوں نے کہا کہ بیت المقدس کی تاریخی اور مذہبی تشخص کے خلاف فیصلہ کیا جا رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ یہ فیصلہ مشرق وسطیٰ کے مخدوش امن و امان کو زیادہ خراب کر دے گا اور انتشار اور نئے جھگڑے شروع کر دے گا۔

انہوں نے کہا: "ہم امید کرتے ہیں کہ امریکی انتظامیہ یہ پُر آفت فیصلہ نہیں کرے گی”۔ انہوں نے کہا کہ بیت المقدس اور حرم شریف (حرم قدسی) کی حفاظت ایک حساس معاملہ ہے۔

انتخابی مہم کے دوران امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے وعدہ کیا تھا کہ وہ امریکی سفارت خانے کو تل ابیب سے بیت المقدس منتقل کریں گے۔ حال ہی میں جاری ان کوششوں کی کئی عالمی طاقتوں نے مخالفت کی ہے جن میں ترکی اور عرب لیگ بھی شامل ہے۔

جبکہ اسرائیل اپنا اصل دارالحکومت بیت المقدس کو گردانتا آیا ہے۔ دنیا اس کی مخالف کرتی آئی ہے اور معاملات کو فلسطینیوں کے ساتھ امن مذاکرات کے ذریعے حل کرنے پر زور دیا جاتا رہا ہے۔

تبصرے
Loading...