امریکا نے انجیرلک ایئربیس سے 424 ملازمین نکال دیے

0 308

امریکا کی ایک کمپنی نے جنوبی ترکی کے صوبہ ادانہ میں واقع انجیرلک ایئربیس پر کام کرنے والے اپنے 890 میں سے تقریباً آدھے ملازمین کو نکال دیا ہے۔

ترک لیبر یونین حرب-ایش کے بیان کے مطابق کمپنی ‘ویکٹرس’ نے انہیں بتایا ہے کہ ان کے 424 ملازمین کا ٹھیکہ 20 جنوری 2020ء کو منسوخ کر دیا گیا تھا، جسے یونین نے "ناانصافی” قرار دیا ہے۔

یونین کے سربراہ برائے ادانہ اردال اقالین نے کہا کہ "ان میں سے بتیس خواتین کارکن ہیں، جبکہ 392 مرد ہیں۔ ہم نے، ترک حرب-ایش یونین کی حیثیت سے، کہ یہ اخراج اخلاقی حیثیت نہیں رکھتا اور ہم جن معاشی حالات سے گزر رہے ہیں، ان میں عوام اس سے منفی طور پر متاثر ہوں گے۔”

انہوں نے مزید کہا کہ یہ "صورتِ حال مکمل طور پر ناقابلِ قبول ہے اور کارکنوں کی اجتماعی حق تلفی کو ظاہر کرتی ہے۔”

کمپنی کے حکام سے اس معاملے پر حساسیت اختیار کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے اقالین نے کہا کہ اگر کمپنی اپنے اقدامات واپس لینے سے میں ناکام ہوتی ہے تو یونین کی جانب سے "سخت ترین اقدامات” اٹھائے جائیں گے۔ ہم ایک مرتبہ پھر کہیں گے کہ ہمیں ترکی کی دیگر یونینز کی مدد بھی حاصل ہے۔”

اقالین نے کہا کہ امریکی کمپنی کا یہ "غیر ذمہ دارانہ” رویہ معاہدے کو متاثر کرے گا اور اب ہونے والے مذاکرات "سخت” ماحول میں ہوں گے۔ انہوں نے یہ بھی دعویٰ کیا کہ یہ قدم امریکا کی جانب سے عراق، شام اور ترکی سے فوج نکالنے کے منصوبے کا حصہ ہے۔

ترکی کے صوبہ ادانہ میں شامی سرحد سے صرف 110 کلومیٹر کے فاصلے پر واقع انجیرلک ایئربیس 1954ء میں اپنے قیام سے اب تک تزویراتی اہمیت رکھتی ہے۔ اس فوجی اڈے نے سرد جنگ، جنگ خلیج ‏1990-1991ء‎ اور شام و عراق میں داعش کے عناصر کے خلاف امریکی آپریشن میں اہم کردار ادا کیا۔

تبصرے
Loading...