افغان امن مذاکرات کو نتیجہ خیز بنائیں گے، خصوصی مندوب بھی تعینات کریں گے، ترک وزیر خارجہ

0 1,368

امریکہ کی جانب سے امن معاہدے کو حتمی شکل دینے کے لئے آئندہ ہفتوں میں افغان حکومت کے نمائندوں اور طالبان کے مابین سینئر سطح کے اجلاس کی میزبانی کے لئے ترک حکومت کو حالیہ پیش کش کے بارے میں ترک وزیر خارجہ میولوت چاوش اولو نے کہا ہے کہ ترکی شروع ہی سے اس عمل میں شامل تھا۔

انہوں نے واضع کیا، "ہم دستخط کرنے والی اس تقریب میں مدعو چند ممالک میں سے ایک ہیں، اور ہم افغانستان امن عمل کے ایک اہم کردار ہیں۔”

گذشتہ ہفتے امریکی وزیر خارجہ انٹونی بلنکن نے افغان صدر اشرف غنی کو لکھے گئے خط میں کہا تھا کہ واشنگٹن اقوام متحدہ کے ذریعے روس، چین، پاکستان، ایران، ہندوستان اور امریکہ کے سفیروں کو ایک میز پر لانے کا ارادہ رکھتا ہے تاکہ افگانستان میں امن کے فروغ کے لیے تبادلہ خیال کیا جاسکے۔

چاوش اولو نے کہا کہ ترکی کو مذاکرات میں شامل دونوں فریقوں کا اعتماد حاصل ہے۔ انہوں نے واضع کیا، "طالبان اور مذاکرات کے دوسرے مندوبین، یعنی حکومتی فریق، نے اس سے قبل بھی ہم سے اس طرح کے اجلاس کی میزبانی کرنے کو کہا تھا۔”

انہوں نے مزید کہا کہ ترکی بھی اس عمل میں حصہ لینے کے لئے افغانستان کے لئے ایک خصوصی مندوب کی تقرری کرے گا۔

انہوں نے مزید کہا کہ یہ ملاقات قطر میں ہونے والے عمل کا متبادل نہیں ہو گی، بلکہ معاون ہوگی۔

انہوں نے کہا، "ہم برادر ملک قطر کے ساتھ ہم آہنگی کے ساتھ اس (ملاقات) کا انتظام کریں گے،” انہوں نے مزید کہا کہ اس کا مقصد یہ ہے کہ مذاکرات کو نتیجہ خیز انداز میں جاری رکھنے کے قابل بنایا جائے۔

چاوش اولو نے کہا کہ انھیں یقین ہے کہ ترکی اس اجلاس میں نمایاں کردار ادا کرے گا، جس کا آغاز اپریل میں استنبول میں ہونے والا ہے۔

انقرہ نے حال ہی میں افغانستان اور خطے میں قیام امن کے لئے ثالثی کی کوششوں میں حصہ لینے کے لئے اپنی تیاری کا اظہار کیا ہے۔

یہ بات افغانستان کے طلوع نیوز کے ذریعہ ایک سفارتی خط کے اجرا کے بعد سامنے آئی ہے جس میں تجویز پیش کی گئی تھی کہ امریکہ، ترکی سے امن مذاکرات کی میزبانی کی درخواست کرے گا۔

قطر کے دارالحکومت دوحہ میں افغان حکومت اور طالبان کے مابین امن مذاکرات بڑے پیمانے پر تعطل کا شکار ہو گئے جب امریکی صدر جو بائیڈن کی انتظامیہ نے فوجی دستوں کی واپسی سمیت امن عمل سے نمٹنے کے طریقوں کا جائزہ لیا۔

امریکی صدر مئی میں افغانستان سے علیحدگی اختیار کرنے والے ہیں، لیکن لڑائی میں اضافے کے خدشات پیدا ہوئے کہ امریکہ کے افغانستان سے تیزی سے نکل جانے سے مزید انتشار پھیل سکتا ہے کیونکہ کابل حکومت اور طالبان کے مابین امن مذاکرات نتیجہ خیز نہیں ہو پائے تھے۔

افغان امن مذاکرات فروری 2020ء میں طالبان اور امریکہ کے مابین ہونے والے معاہدے کے بعد شروع ہوئے تھے جس میں سیکیورٹی گارنٹیوں کے بدلے افغانستان سے غیر ملکی افواج کے انخلا کی ایک ٹائم لائن طے کی گئی تھی۔

انقرہ نے حال ہی میں یہ پیغام دیا ہے کہ ترکی افغان سیکیورٹی کی حمایت جاری رکھے گا۔ چاوش اولو نے گذشتہ ہفتے دونوں ممالک کے مابین سفارتی تعلقات کی 100 ویں سالگرہ کے موقع پر کہا تھا کہ جب تک افغانستان کے بھائیوں نے ہم پر اعتماد رکھا، ترکی اس وقت تک افغانستان کی سلامتی میں اپنا کردار ادا کرتا رہا ہے اور وہ اس وقت تک وہاں اپنی موجودگی برقرار رکھے گا۔

سن 2020ء کے آخر میں ترک پارلیمنٹ نے جنگ زدہ ملک میں نیٹو کے معاون مشن کے حصے کے طور پر افغانستان میں ترک فوجیوں کی تعیناتی میں 18 ماہ کے لئے توسیع کو منظور کیا تھا۔ ابتدائی قانون سازی، جسے 6 جنوری، 2019 کو نافذ کیا گیا، ترک حکومت کو نیٹو کے زیر قیادت مشن ریزولوٹ سپورٹ کی حمایت کے لئے افغانستان میں فوج بھیجنے کی اجازت دی۔ 2018 میں افغانستان میں 17 سالہ جنگی مشن کے خاتمے کے بعد، مشن جدید افغان سیکیورٹی فورسز کے لئے تربیت اور مشاورتی پروگرام میں تبدیل ہوا تھا۔

نیٹو کے 28 حلیفوں اور 14 دیگر شراکت دار ممالک کے تقریبا 12،000 غیر ملکی فوجیوں نے افغانستان میں نیٹو مشن کی حمایت پر اتفاق کیا۔ 2015 میں پہلی بار جو قانون سازی ہوئی تھی اس کے تحت حکومت کو یہ اختیار بھی حاصل ہے کہ وہ غیر ملکی فوج کے اہلکاروں کو ترکی کے راستے افغانستان جانے اور آنے کی اجازت دیتا ہے۔

تبصرے
Loading...