ہم خلیج کے امن اور بہبود کو اہمیت دیتے ہیں، صدر ایردوان

0 540

قطری-ترک کمبائنڈ جوائنٹ ٹاسک فورس کمانڈ سے خطاب کرتے ہوئے صدر ایردوان نے کہا کہ "ہم قطر اور پورے خلیجی خطے کے امن اور بہبود کو اہمیت دیتے ہیں۔ ہم کبھی اس سرزمین پر تناؤ، کشیدگی یا عداوت نہیں چاہتے۔”

صدر رجب طیب ایردوان نے اپنے دورۂ قطر میں قطری-ترک کمبائنڈ جوائنٹ ٹاسک فورس کمانڈ سے خطاب کیا۔

"ہم کبھی اس سرزمین پر تناؤ، کشیدگی یا عداوت نہیں چاہتے”

صدر رجب طیب ایردوان نے کہا کہ "ہم قطر اور پورے خلیجی خطے کے امن اور بہبود کو اہمیت دیتے ہیں۔ ہم کبھی اس سرزمین پر تناؤ، کشیدگی یا عداوت نہیں چاہتے۔ ہم اس خوبصورت خطے کو، جو زیر زمین وسائل اور تجارت کے لحاظ سے زبردست صلاحیتیں رکھتا ہے، بھائی چارے اور یکجہتی سے منسلک اور ہر شعبے میں ترقی کرتا اور مستحکم ہوتا دیکھنا چاہتے ہیں۔ اپنے مسالک، قومیتیں اور نسلوں سے قطع نظر خطہ خلیج کے عوام ہمارے حقیقی بھائی اور بہنیں ہیں۔ اس تناظر میں ہم باہمی مفادات اور احترام کی بنیاد پر خلیجی ممالک کے ساتھ اپنے تعاون کو مزید بڑھانے کے لیے کام کر رہے ہیں۔”

اس امر پر زور دیتے ہوئے کہ قطر کے ساتھ ترکی تاریخی، ثقافتی اور انسانی بنیادوں پر طویل المیعاد تعلقات رکھتا ہے، جو ترک عوام کے دلوں میں خاص مقام کا حامل ہے، صدر ایردوان نے کہا کہ "ہم 15 جولائی کی خونریز بغاوت کی کوشش کے بعد ہمارے ساتھ کیے گئے قطری بھائیوں اور بہنوں کے اظہارِ یکجہتی کو کبھی نہیں بھول سکتے۔ اس سے بڑھ کر قطر ہمیشہ ترک معیشت، کو ہدف بنانے والی کوششوں کے سامنے کھڑا ہوا ہے، جو اس کے ہمارے ملک پر اعتماد کو ظاہر کرتا ہے۔ ترکی کی پہلی زنک فیکٹری، جس کا افتتاح ہفتہ کو سعرد میں کیا گیا تھا، دونوں ملکوں کے تعاون کی علامات میں سے ایک ہے۔ ایک مرتبہ سیسہ، چاندی اور سلفیورک ایسڈ کے کارخانے بھی مکمل ہو جائیں، جن کا سنگ بنیاد ہم پہلے ہی رکھ چکے ہیں، تو ہمارے 7.5 ہزار بھائیوں اور بہنوں کو روزگار کے مواقع ملیں گے۔ اس مشترکہ منصوبے کے علاوہ قطر ہمارے ملک میں کئی شعبوں خاص طور پر دفاعی صنعت میں سرمایہ کاری رکھتا ہے۔ ہم اپنے قطری بھائیوں اور بہنوں کو ضروری مدد فراہم کرتے ہیں، جو ترکی میں سرمایہ کاری، روزگار کے مواقع، پیداوار اور برآمدی نمو کو بہتر بنانے کے لیے کام کرتے ہیں۔”

"ہم قطر کے تحفظ اور استحکام کو اپنی سلامتی سمجھتے ہیں”

اس امر پر زور دیتے ہوئے کہ ترکی قطر کو درپیش نا انصافیوں کے خلاف کھڑا ہونے سے ہر گز نہیں گھبرائے گا، اور قطر کا تحفظ اور استحکام دراصل ترکی کا تحفظ اور استحکام ہے، صدر ایردوان نے کہا کہ دونوں ممالک کے مابین تعلقات 2014ء میں بننے والی سپریم اسٹریٹجک کمیٹی کے ذریعے تزویراتی شراکت داری کی سطح پر بڑھے۔ "آج ہم نے اس کا ساتواں اجلاس کامیابی سے کیا، جس کی میزبانی میرے عزیز بھائی امیر شیخ تمیم نے کی۔ ہم نے ایک مرتبہ پھر دفاع سے لے کر سلامتی، تجارت سے لے کر سرمایہ کاری اور صحت سے لے کر تعلیم تک وسیع تر شعبوں میں اہم نوعیت کے فیصلے لیے ہیں۔ ہم نے کل 15 معاہدے کیے جو دونوں ممالک کے مابین تعاون کو مزید بڑھائیں گے۔ اپنے عزیز بھائی شیخ تمیم کی مدد سے ہم مستقبل میں ہر شعبے میں تعاون کو بڑھائیں گے۔”

تبصرے
Loading...
%d bloggers like this: