ہم قومی ارادے کو مقدم رکھتے ہوئے مستقبل کی منصوبہ بندی کرتے ہیں، صدر ایردوان

0 130

"تسلط سے جمہوریت تک قومی ارادہ” کے عنوان سے ایک سمپوزیم سے خطاب کرتے ہوئے صدر رجب طیب ایردوان نے کہا کہ "اِس سرزمین پر اب کبھی قومی ارادہ اور جمہوریت بغاوت اور تسلط کے شانہ بشانہ نہیں ہوگا۔ ہم پورے عزم کے ساتھ اپنے ملک اور قوم کی حاصل کردہ کامیابیوں کا دفاع کریں گے۔ ہم مستقبل میں اپنے منصوبوں، اقدامات اور اندازوں کو قومی ارادے کے مطابق جاری رکھیں گے۔”

صدر رجب طیب ایردوان نے "تسلط سے جمہوریت تک قومی ارادہ” کے موضوع پر ایک سمپوزیم سے خطاب کیا۔

"ہم پورے عزم کے ساتھ اپنی کامیابیوں کا دفاع کریں گے”

"پارلیمان، صدارت، عدلیہ، وزارتوں، اداروں اور خاص طور پر فوج اور سفارت کاری کے ساتھ ترکی نے تیزی سے اپنے اہداف کی جانب پیش رفت شروع کی ہے۔ اب ہم اپنے فیصلے خود کر رہے ہیں اور پورے عزم کے ساتھ ان پر عملدرآمد بھی کر رہے ہیں۔ اب ترکی اس مقام پر ہے کہ وہ ضرورت پڑنے پر کسی بھی مہم جوئی کا حصہ بن سکتا ہے۔”

صدر ایردوان نے مزید کہا کہ "اِس سرزمین پر اب کبھی قومی ارادہ اور جمہوریت بغاوت اور تسلط کے شانہ بشانہ نہیں ہوگا۔ ہم پورے عزم کے ساتھ اپنے ملک اور قوم کی حاصل کردہ کامیابیوں کا دفاع کریں گے۔ ہم مستقبل میں اپنے منصوبوں، اقدامات اور اندازوں کو قومی ارادے کے مطابق جاری رکھیں گے۔”

"آپ انسانیت پر ہمیں درس نہیں دے سکتے”

فرانسیسی صدر ایمانوئیل ماکروں کی جانب سے ترکی اور ترک صدر کو ہدف بنانے پر صدر ایردوان نے کہا کہ "میں انہیں بتا چکا ہوں کہ ‘آپ کو تاریخ کا کچھ علم نہیں’۔ آپ فرانس کی تاریخ بھی نہیں جانتے۔ سب سے پہلے تو ترک عوام اور ترکی سے الجھنے سے مت الجھیں۔ افریقہ کی تاریخ فرانس کی تاریخ ہے، اس پر بات کریں۔ یہ آپ ہیں کہ جنہوں نے الجزائر میں 10 لاکھ افراد کا قتلِ عام کیا۔ یہ آپ ہیں کہ جنہوں نے روانڈا میں 8 لاکھ افراد کو مارا۔ آپ ہمیں انسانیت پر درس نہیں دے سکتے۔”

تبصرے
Loading...