ترکی کو دوست اور برادر ممالک کے طلبہ کے لیے تعلیمی مرکز بنا دیا ہے، صدر ایردوان

0 385

صدر ایردوان نے امریکا میں ترکن فاؤنڈیشن کی جانب سے دیے گئے عشائیے سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ "ہم نے ترکی کو دوست اور برادر ممالک کے طلبہ کے لیے ایک تعلیمی مرکز بنا دیا ہے۔ ہم ترکیہ اسکالرشپس پر، یا اپنے بل بوتے پر، آنے والے ایک لاکھ 68 ہزار طلبہ کا ترکی میں خیر مقدم کر چکے ہیں۔ ہمارا ہدف ترکی آنے والے مہمان طالب علموں کی تعداد کو ساڑھے 3 لاکھ تک پہنچانا ہے اور یوں غیر ملکی طالب علم رکھنے والے دنیا کے پانچ سرفہرست ممالک میں شامل ہو جائیں گے۔”

اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے 74 ویں سیشن میں شرکت کے لیے نیو یارک میں موجود صدر رجب طیب ایردوان ترکن فاؤنڈیشن کی جانب سے دیے گئے استقبالیے میں شرکت کی۔

"ہمارا ہدف ترکی آنے والے غیر ملکی طلبہ کی تعداد ساڑھے 3 لاکھ تک لے جانا ہے”

"ہم نے ترکی کو دوست اور برادر ممالک کے طلبہ کے لیے ایک تعلیمی مرکز بنا دیا ہے،” صدر ایردوان نے کہا۔ "ہم ترکیہ اسکالرشپس پر، یا اپنے بل بوتے پر، آنے والے ایک لاکھ 68 ہزار طلبہ کا ترکی میں خیر مقدم کر چکے ہیں۔ ہمارا ہدف ترکی آنے والے مہمان طالب علموں کی تعداد کو ساڑھے 3 لاکھ تک پہنچانا ہے اور یوں غیر ملکی طالب علم رکھنے والے دنیا کے پانچ سرفہرست ممالک میں شامل ہو جائیں گے۔”

"FETO اراکین ترکی-امریکا تعلقات کو خراب کرنے کی بھرپور کوششیں کر رہے ہیں”

پچھلے کئی سالوں سے ترکی کے خلاف کام کرنے والی کئی لابیوں کی موجودگی کی طرف توجہ دلاتے ہوئے صدر ایردوان نے کہا کہ فتح اللہ دہشت گرد تنظیم (FETO) کے اراکین ترکی-امریکا تعلقات کو خراب کرنے اور مسلمانوں کے درمیان شورش برپا کرنے کی بھرپور کوششیں کر رہے ہیں۔ 15 جولائی 2016ء کی ناکام بغاوت کے دوران 251 ترک شہریوں کو شہید اور 2193 کو زخمی کرنے والی FETO کا اصل چہرہ دکھانے کا عزم ظاہر کرتے ہوئے صدر ایردوان نے کہا کہ وزارت انصاف اور وزارت امورِ خارجہ امریکا کی جانب سے FETO کے دہشت گرد رہنما کی ترکی حوالگی کے لیے سفارتی کوششیں کر رہی ہیں۔

تبصرے
Loading...