ہم البانیہ میں انفرا اسٹرکچر اور سیاحت میں سرمایہ کاری بڑھانے کا منصوبہ رکھتے ہیں، صدر ایردوان

0 154

البانیہ کے وزیر اعظم ایدی راما کے ساتھ ایک مشترکہ پریس کانفرنس میں صدر ایردان نے کہا کہ "ہم مستقبل میں البانیہ میں اپنی سرمایہ کاری بڑھانے کا منصوبہ رکھتے ہیں، خاص طور پر انفرا اسٹرکچر اور سیاحت کے شعبے میں۔ ہم نئے تناظر میں اپنے معاشی تعاون کو بڑھانے کا تصور رکھتے ہیں۔”

صدر رجب طیب ایردوان نے وزیر اعظم البانیہ ایدی راما کے ساتھ ایوانِ صدر میں ایک پریس کانفرنس کی۔

"آپ کو البانیہ میں ہماری مشترکہ تاریخ و ثقافت کی کئی علامات مل سکتی ہیں”

یہ کہتے ہوئے کہ البانیہ ایک دوست اور برادر اتحادی ہے، صدر ایردوان نے کہا کہ "صدیوں سے ترکی اور البانیہ دو برادر ممالک ہیں جو ساتھ رہے، ساتھ لڑے اور ساتھ ہی تاریخ پر پائیدار نقوش چھوڑے۔”

صدر ایردوان نے کہا کہ "آپ کو البانیہ میں البصان سے کورچہ اور شکودر سے ولور تک مشترکہ تاریخ اور ثقافت میں اس کی کئی علامات مل سکتی ہیں۔ ہم قدیم تاریخ کی بنیاد پر ان تعلقات کو مزید بہتر بنانے کو اپنی ذمہ داری سمجھتے ہیں۔”

"اعلیٰ سطحی تعاون کونسل کے قیام کے لیے مشترکہ سیاسی اعلامیہ پر دستخط کر کے ہم اپنے تعلقات کو تزویراتی شراکت داری کی نئی سطح پر لے گئے ہیں۔ یہ قدم ہمارے لیے تمام شعبہ جات میں باہمی تعاون کو بہتر کرنا ممکن بنائے گا۔”

"ترکی البانیہ کے عوام کی مدد کے لیے پیش پیش رہا”

2019ء میں البانیہ میں آنے والے دو شدید زلزلوں کی بات کرتے ہوئے صدر ایردوان نے کہا کہ "ترکی البانیہ کے عوام کی مدد کے لیے پیش پیش رہا۔ ہم نے تلاش سے لے کر امداد تک تمام ذرائع اور صلاحیتوں کا استعمال کیا۔”

صدر ایردوان نے کہا کہ "ترکی نے البانیہ کے عوام کے لیے 552 گھر بنانے کا فیصلہ کیا۔ ہاؤسنگ ڈیولپمنٹ ایڈمنسٹریشن آف ترکی (TOKI) کی جانب سے ان گھروں کی تعمیر کی تقریب سنگ بنیاد 23 دسمبر کو ہوئی تھی۔ یہ مکانات اگست 2021ء تک مکمل ہو جائیں گے اور ضرورت مندوں میں تقسیم کیے جائیں گے۔”

صدر ایردوان نے مزید کہا کہ "مجھے یقین ہے کہ یہ گھر ترکی اور البانیہ کے باہمی تعلقات کی نئی علامت ہوں گے۔ میں ان زلزلوں میں جاں بحق ہونے والے افراد کے لیے اللہ سے دعاگو ہوں اور ان کے لواحقین سے تعزیت کرتا ہوں۔”

"ہم تاریخی عمارات کو بہت اہمیت دیتے ہیں، جو ہمارے مشترکہ کلچر کی عکاسی کرتی ہیں”

مذاکرات کے دوران ترک-البانیہ معاشی تعلقات کے حوالے سے صدر ایردوان نے زور دیا کہ ترکی البانیہ کا چوتھا سب سے بڑا تجارتی شراکت دار ہے۔

"اگر کانٹریکٹنگ سروسز کو بھی شامل کیا جائے تو 3 سے 5 ارب ڈالرز کی سرمایہ کاری کے ساتھ ترکی البانیہ میں سرمایہ کاری کرنے والا سب سے بڑا ملک ہے۔ ہماری 600 سے زیادہ کمپنیاں البانیہ مین کام کر رہی ہیں جو تقریباً 15 ہزار البانوی لوگوں کو روزگار دے رہی ہیں۔ ہم مستقبل میں البانیہ میں اپنی سرمایہ کاری بڑھانے کا منصوبہ رکھتے ہیں، خاص طور پر انفرا اسٹرکچر اور سیاحت کے شعبے میں۔ ہم نئے تناظر میں اپنے معاشی تعاون کو بڑھانے کا تصور رکھتے ہیں۔ ہم اپنے معاشی تعلقات کو نئی جہت دینا چاہتے ہیں۔ ہم تاریخی عمارات کو بہت اہمیت دیتے ہیں کہ جو عثمانی دور کے ہمارے مشترکہ کلچر کو ظاہر کریں۔ ترکش کوآپریشن اینڈ کوآرڈی نیشن ایجنسی (TIKA) کے ذریعے ہم نے البانیہ میں 500 سے زیادہ بحالی منصوبے انجام دیے، کہ جن کی مالیت تقریباً 20 ملین یوروز ہے۔”

"ہم FETO کو دونوں ممالک کے درمیان تعلقات میں زہر گھولنے کی اجازت نہیں دیں گے”

صدر ایردوان نے کہا کہ "ہمارے ایجنڈے پر موجود اہم ترین موضوعات میں سے ایک دہشت گردی کے خلاف جنگ اور دفاع اور عسکری شعبوں میں تعاون تھا۔”

صدر ایردوان نے زور دیا کہ "ہم نے اتفاق کیا کہ FETO دونوں ملکوں کے لیے خطرہ ہے۔ ہم FETO کو دونوں ممالک کے تعلقات میں زہر گھولنے کی اجازت نہیں دیں گے۔ ترکی اپنے اپنے متعلقہ اداروں بالخصوص معارف فاؤنڈیشن کے ذریعے البانیہ کے شانہ بشانہ کھڑا ہے۔”

صدر ایردوان نے یہ بھی اعلان کیا کہ وہ البانیہ میں نیا ہسپتال تعمیر کرنا چاہتے ہیں۔ "ہم البانیہ میں بننے والے ہسپتال کو بہت اہمیت دیتے ہیں۔”

اس سے قبل صدر ایردوان اور وزیر اعظم راما نے اعلیٰ سطحی تعاون کونسل کے قیام کے لیے مشترکہ سیاسی اعلامیے پر دستخط کیے۔

تبصرے
Loading...