ہم افریقہ کے ساتھ تعلقات کو یکساں اور برابری کی سطح پر بڑھانا چاہتے ہیں، صدر ایردوان

0 77

لوانڈا کے لیے روانہ ہونے سے پہلے پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے صدر رجب طیب ایردوان نے کہا کہ "اس امر پر یقین رکھتے ہوئے کہ 21 ویں صدی میں افریقہ کا فیصلہ کن کردار ہوگا، ہم اس بر اعظم کے ساتھ اپنے تعلقات کو یکساں اور برابری کی سطح پر بڑھانا چاہتے ہیں۔ جیسا کہ میں ہمیشہ کہتا ہوں کہ ہم افریقی ممالک کے ساتھ اپنے تعاون کو کبھی مختصر مدتی یا اپنے مفادات کے تناظر میں نہیں دیکھتے۔”

صدر رجب طیب ایردوان نے دورۂ افریقہ کے لیے روانگی سے قبل ایک پریس کانفرنس سے خطاب کیا، جس میں انگولا، ٹوگو اور نائیجیریا کا دورہ شامل ہوگا۔

اس امر کی جانب اشارہ کرتے ہوئے کہ دورۂ افریقہ کے دوران کاروباری دنیا کے نمائندوں کے علاوہ وزرا اور ان کے نائبین بھی ان کے ہمراہ ہوں گے، صدر ایردوان نے کہا کہ "وزیر اعظم کی حیثیت سے اپنے عہد سمیت میں اب تک 28 افریقی ممالک کے 38 دورے کر چکا ہوں۔ اس کے علاوہ ہم افریقی ممالک کے سربراہان مملکت کی میزبانی بھی کر چکے ہیں جن میں سے کئی کا یہ پہلا دورہ تھا۔ ہمارا یہ دورہ خاص طور پر اہم ہے کیونکہ انگولا اور ٹوگو کے لیے یہ کسی بھی ترک صدر کا پہلا دورہ ہوگا۔”

"ترکی افریقی ممالک کا نمایاں شراکت دار ہے”

اس امر پر زور دیتے ہوئے کہ ترکی افریقہ کے ساتھ اپنے تعلقات کو ہر شعبے میں بڑھائے گا، صدر ایردوان نے کہا کہ "ہر گزرتے دن کے ساتھ افریقہ کے ساتھ اپنے بڑھتے ہوئے سفارتی تعلقات اور 2020ء کے اختتام پر 25 ارب ڈالرز سے زیادہ کے تجارتی حجم کے ساتھ ترکی افریقی ممالک کا نمایاں شراکت دار ہے۔ معارف فاؤنڈیشن کے اسکول، یونس امرہ کلچرل سینٹرز، ترک ہلالِ احمر، بیرون ملک مقیم ترکوں کی وزارت اور ترک ادارہ برائے تعاون ہم اور ہمارے افریقی بھائیوں اور بہنوں کے درمیان محبت میں اضافے کے لیے کام کر رہی ہیں۔”

"ہم اپنے افریقی بھائیوں اور بہنوں کے ساتھ آگے بڑھنا چاہتے ہیں”

صدر ایردوان نے کہا کہ "اس امر پر یقین رکھتے ہوئے کہ 21 ویں صدی میں افریقہ کا فیصلہ کن کردار ہوگا، ہم اس بر اعظم کے ساتھ اپنے تعلقات کو یکساں اور برابری کی سطح پر بڑھانا چاہتے ہیں۔ جیسا کہ میں ہمیشہ کہتا ہوں کہ ہم افریقی ممالک کے ساتھ اپنے تعاون کو کبھی مختصر مدتی یا اپنے مفادات کے تناظر میں نہیں دیکھتے۔ ہم ان میں سے نہیں ہیں جو نئے طریقوں اور ہتھکنڈوں سے پرانے نو آبادیاتی نظام کو برقرار رکھنا چاہتے ہیں۔ ہم اپنے افریقی بھائیوں اور بہنوں کے ساتھ آگے بڑھنا چاہتے ہیں۔”

تبصرے
Loading...